1807

اُستانی جی قسط 17

ہاں تو  دوستو  یہ تھی  مرینہ کی  وہ  سٹوری جو اس نے مختلف ٹکڑوں میں مجھے سنائی تھی اور میں نے ایک ہی نشست میں آپ کے گوش گزار کر  دی  دوستو  ویری  سوری کہ  مرینہ کی کہانی  کچھ  زیادہ  ہی لمبی  ہو گئی تھی ۔۔۔ جس کے لیئے  میں آپ لوگوں  سے معذرت  خواہ    ہوں ۔۔۔۔ مرینہ نے  اپنی سٹوری  کا آخری  ٹکڑا  مجھے  لیاقت  باغ  کی ایک بینچ  پر بیٹھ کر سنایا  تھا ۔۔۔ اور خان  جی کی موت  کا سُن کر مجھے بھی کافی دکھ محسوس  ہوا  تھا ۔۔۔ اور میں نے دیکھا کہ  اتنا عرصہ گزر جانے کے باوجود بھی مرینہ کی انکھوں میں  خان جی کی موت کازکرکرتے  ہوئے ایک نمی سی اتُر ائی تھی ۔۔۔۔ دل ہی تو ہے نہ سنگ و خشت درد سے بھر نہ آئے کیوں روئیں گے ہم ہزار بار کوئی ہمیں ستائے کیوں

۔۔۔تو سوتو اب ہم اپنی اصل سٹوری کی طرف واپس آتے ہیں ۔۔۔ مرینہ کو  ہسپتال لانا لے جانا

۔۔۔۔۔اور اس کے ساتھ  گھومنا پھرنا اور اس کے آگے پیچھے پھرنا  ،اس  کے ساتھ  ہی نتھی  رہنا    میرے خیال میں ارمینہ کو یہ سب  اچھا  نہ لگ رہا تھا   بلکہ مرینہ سے میری بے تکلفی   ارمینہ کو کافی ناگوار گزر رہی تھی ۔۔۔  اسی لیئے تو   میں  کچھ دنوں سے دیکھ رہا  تھا کہ ارمینہ مجھ سے کچھ کچھی کچھی سی رہنے لگی تھی ۔میری  کسی بھی  بات کا وہ    سیدھے منہ جواب بھی نہ دے رہی تھی اور نہ   ہی  وہ  مجھے کوئی  لفٹ  وغیرہ  بھی دے   رہی تھی۔۔ لیکن میں کیا کرتا کہ  میں اس سلسہ  میں مجبور تھا  کیونکہ  جیسا کہ آپ جانتے ہیں  کہ مرینہ ایک بولڈ  خاتون تھی اور مجھے بڑے  دھڑلے سے  سب کے سامنے اپنے ساتھ لے جاتی ۔۔ اور میں انکار  نہ کر سکتا  تھا   کیونکہ  اس کے ساتھ جانے میں ایک فائدہ یہ بھی تھا کہ ۔۔وہ   اکثر  بائیک  کے پیچھے بیٹھی  موقعہ ملنے پر میرا لن کو   اپنے ہاتھ میں پکڑ لیتی تھی  اور خاص کر اپنے ممے میرے ساتھ جوڑ کر بیٹھتی تھی ۔۔جس کا مجھے بہت مزہ آتا تھا ۔۔۔۔۔ لیکن  اس کی  تمام  تر بےباکی اور کھلے پن  کے باوجود بھی میں ابھی تک  مرینہ کو  چودنے  میں ناکام  رہا  تھا ۔۔اور  اس کی وجہ صرف اور صرف جگہ کا نہ ہونا تھا ۔۔۔۔۔۔ ایک دفعہ میں نے مریڈ کے قریب اس کو لن چسوانے کی کوشش کی تھی لیکن عین وقت پر  اس علاقے کا چوکیدار آ گیا تھا جس کی وجہ سے ہم لوگوں  کو  نہ صرف وہاں سے بھاگنا پڑا تھا ۔۔۔۔۔۔بلکہ اس کے بعد مرینہ نے توبہ کر لی تھی  کہ وہ کسی بھی سنسان جگہ پر نہ تو میرے ساتھ جائے گی اور نہ ہی کوئی  ایسی ویسی کوئی حرکت کرے گی ۔۔۔ ہاں موٹر سائیکل پر بیٹھے بیٹھے میرے لن کو اپنے ہاتھ میں پکڑنا اور ۔۔۔۔ پیچھے سے اپنے خوبصورت ممو ں کو میری کمر کے ساتھ جوڑ کر بیٹھنا اس کے بقول اور بات تھی ۔۔۔

اس کے ساتھ ساتھ میں اکثر  استانی  جی   اور میڈم ندا  کے گھر  کا بھی چکر لگاتا رہتا تھا ۔۔۔۔ اور  اسی دوران مجھے یہ افسوسناک خبر بھی ملی تھی کہ استانی جی کی والدہ کا انتقال ہو گیا تھا جس کی وجہ سے وہ کچھ دن  مزید وہا ں پر  رُک گئیں تھیں ۔۔ایک دن کی  بات  ہے کہ میں  ارمینہ کے گھر  گیا  تو دیکھا کہ ماسی اور مرینہ برآمدے میں بیٹھی گپ شپ لگا رہی تھیں جبکہ ارمینہ حسبِ معمول  کچن میں گھسی کام کر رہی تھی ۔۔۔۔ میں نے ماسی اور مرینہ باجی کو سلام کیا اور پھر ارصلا کے بارے میں پوچھنے  لگا  تو پتہ  چلا کہ وہ کہیں گیا ہے ۔۔اسی دوران ارمینہ کچن سے باہر نکلی اور ماسی سے بولی ۔۔۔۔  مورے ٹماٹر۔۔۔نشتہ۔۔۔ ) ماں ٹماٹر  ختم ہو گئے ہیں (۔۔۔اس کی بات سن کر ماسی کہنے لگی ۔۔۔ابھی  منگواتی ہو ں اور پھرماسی نے  مجھے  پیسے پکڑاتے ہوئے کہا ۔۔ جاؤ  بیٹا  بازار  سے آدھا  کلو ٹماٹر  لے آؤ ۔۔۔ میں نے  ماسی کے ہاتھ سے  پیسے پکڑے  اور بازار چلا گیا اور واپسی پر ٹماٹر لا کر  باقی  پیسے اور ٹماٹر ماسی کو پکڑائے  تو ان  سے  پہلے  ہی مرینہ  بولی ۔۔۔۔ بھائی  یہ ٹماٹر کچن میں جا کر ارمینہ باجی کو دے آؤ۔۔۔ مرینہ کی بات  سن کر گویا کہ  میرے  دل کی مراد  بر آئی  اور میں ٹماٹروں کا  شاپر  ہاتھ میں پکڑے کچن میں گیا اور  ۔۔آرمینہ کو ٹماٹروں کا شاپر پکڑاتے  ہوئے اس کے مموں پر ہاتھ  لگایا  تو  وہ  پھٹ  پڑی  اور بولی ۔۔۔یہ کیا بد تمیزی ہے ؟    تو میں نے اس سے کہا یہ بدتمیزی نہیں ہے محبت ہے میری جان اور ایک دفعہ پھر اس کے ممے دبا دیئے ۔۔۔ اس  پر وہ خاصہ تلخی سے بولی ۔۔۔۔ اچھی محبت ہے ۔۔۔محبت مجھ سے کرتے  ہو اور بائیک پر   سارا سارا  دن  اس ماں ) مرینہ ( کوگھماتے رہتے ہو۔۔۔ تو میں نے اس سے کہا کہ وہ  میری ماں نہیں آپ کی بڑی بہن اور   مہمان ہے ۔۔۔ اور پھر بڑا سیرس سا منہ بنایا اور اس سے بولا ۔۔۔میری جان اگر تم کو یہ پسندنہیں ہے تو آئیندہ  سے میرا  بائیک چلانا  بند ۔۔۔۔ میں نے اتنا کہا اور کچن سے باہر  نکل آیا۔۔۔۔ 

 

برآمدے میں آ کر دیکھا تو ماسی  اور   مرینہ  ویسے ہی بیٹھی باتیں کر رہی تھیں ۔۔۔   مرینہ کی نظر جیسے ہی مجھ پر پڑی ۔۔۔اس نے مجھےکہا ۔۔۔ایک منٹ  رکو  زرا ۔۔ مرینہ کی بات سُن کر میں وہیں رُک گیا اور  وہ چارپائی اٹُھی اور جلدی جلدی چپل پہن کر میرے پاس  کھڑی ہو گئی اور پھر اشارہ سے چلنے کا کہا ۔۔۔دروازے پر جا کر وہ رک گئی اورپھر مجھے  بڑے  غور سے دیکھتے ہوئے بولی ۔۔۔ کیا بات ہے یہ تمھاری شکل پر  بارہ کیوں بج  رہے ہیں ؟ارمینہ سے لڑائی ہو گئی ہے کیا ؟۔۔۔ تو جواب میں نے ان کو ساری  بات بتا  دی ۔۔۔ سُن کر مسکراتے ہوئے بولی ۔۔ ۔۔ارے یہ کوئی اتنی بڑی بات نہیں ہے  ۔۔۔۔ گھبرانے کی کوئی کوئی ضرورت نہیں ہے  ۔۔۔۔۔ تو میں نے قدرے تلخی سے اس سے کہا کہ گھبرانے کی کیوں ضرورت نہیں ہے جی ؟ تو  وہ کہنے لگی ۔۔ یار ۔۔ بات بس  اتنی سی کہ  تمھاری یار   کا  سیکس پر  شدید دل آیا  ہوا ہے  شرم کے  مارے  وہ  سیدھا کہہ نہیں سکتی  اس لیئے  ایسے  ڈرامے کر  رہی  ہے  ان کی بات سُن کر   میں نے ان سے کہا آپ کو کیسے پتہ؟؟   تو کہنے لگیں  ارمینہ کو میں بہت اچھی طرح سے جانتی ہوں اور دوسری بات  یہ  ہے کہ میں بھی ایک عورت ہوں اور ایک عورت دوسری عورت کے جزبات خوب سمجھتی ہے ۔۔ اور پھر کہنی لگی مت بھولو کہ  میں ارمینہ کی بہن بھی  ہوں اور  اس لحاظ سے  میں اس کے جزبات کےاتار چڑھاؤ سے خوب اچھی طرح واقف ہوں ۔۔۔ ۔۔۔ پھر مرینہ نے میری طرف دیکھا اور بولی ۔۔۔۔۔ ۔۔چلوا یسا کرتی ہوں  کہ  میں تم کو ایک  موقع دیتی ہوں ۔۔۔اور تم اس  موقع  کا  پورا  فائدہ  اٹُھاؤ  اور ارمینہ بے چاری کی طلب مٹا دو۔۔۔ تو میں نے ا  ن سے کہا میں سمجھا نہیں باجی تو  وہ کہنے لگی ۔۔۔یار آج رات  ہم سب گھر والوں نے ایک جگہ  کھانے پر جانا ہے  ۔۔۔ میں ایسے کرتی ہوں کہ کسی بہانے سے ارمینہ کو ڈراپ کر دوں گی ۔۔۔اور تم آ کر اس  کو  سیکس کی ڈرپ لگا دینا  اور اس کی پیاس مٹا  دینا  تو میں نے ان سے  کہا کہ وہ تو مجھ سے بڑی سخت ناراض ہیں ۔۔۔ مان جائیں گی ؟ ۔۔۔تو وہ کہنے لگی ۔۔۔۔میری جان  وہ کوئی  ناراض  شراض  نہیں ہے ۔۔۔۔ بس اپنی سیکس ڈیزائیر کے ہاتھوں تنگ ہے ۔۔۔۔ تم اس کی خواہش پوری کر دو ۔۔۔ تو میں نے ان سے کہا پر کیسے ؟؟ ۔۔۔ تو وہ کہنے لگی ۔۔۔اب یہ بات بھیمجھے ہی بتانی پڑے گی ۔۔۔اور مجھے رُخصت کر کے دروازہ بند کر دیا ۔۔۔۔

مرینہ  کی انفارمیشن پر میں  مقررہ وقت سے کافی پہلے   اپنے گھر کی چھت پر چڑھا اور  اس  بات کاا نتظار کرنے لگا کہ  کب مرینیہ  او ر اس کے گھر والے جائیں اور کب میں ان کے گھر جا کر  ارمینہ  کی لوں  ۔۔۔۔  اور بار بار گھڑی دیکھتا   کہ کب  مرینہ اپنی فیملی کے ساتھ جائے اور میں جا کر ارمینہ کو چودوں ۔۔۔  ارمینہ کی چودائی  کا سُن کر میرا لن بیٹھنے  کا  نام  ہی نہیں لے رہا تھا اس لیئے میں نے واش روم میں جا کر ایک دفعہ ارمینہ کے نام کی   مُٹھ  مار لی جس سے مجھے کچھ سکون ملا اور  میں پھر سے چھت پر کھڑا ہو گیا ۔۔۔ رات کے ساڑھے آٹھ بجے تھے جب مرینہ کے گھر والے ایک ایک کے اپنے  گھر سے نکلنے لگے ۔۔۔  یہ دیکھ کر میرا لن پھر سے کھڑا ہو گیا اور میں اس انتظار میں کھڑا ہو گیا کہ کب یہ لوگ جائیں اور میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن تھوڑی  ہی دیر بعد میں نے  دیکھ تو سب سے آخر میں ارمینہ بھی گھر سے برآمد ہوئی  ۔۔۔ میرے خیال میں وہ تالے وغیرہ لگا رہی ہو گی ۔۔۔ ارمینہ کو اپنے گھر والوں کے ساتھ جاتے دیکھ کر میں نے دل ہی دل میں مرینہ کو بے شمار گالیاں دیں اور ۔۔۔پھر سخت مایوس ہو کر لیٹ گیا لیکن نیند کہاں تھی ۔۔ لیکن میں کرتا بھی کیا ۔۔۔  پھر رات کے کسی پہر  مجھے نیند آ ہی گئی ۔۔۔۔ پھر جب میں صبع اٹُھ کر ارصلا کو لینے ماسی کے گھر گیا  تو میرا موڈ سخت آف تھا اور اس کے ساتھ ساتھ رات لیٹ سونے اور صبع جلد اٹُھنے کی وجہ سے  میری آنکھیں بھی کافی سُرخ ہو رہیں تھیں ۔۔ سو جیسے ہی میں ارصلا کو لینے اس کے گھر کے اندر داخل ہوا  تو سامنے ہی مرینہ کھڑی تھی مجھے دیکھتے ہی کہنے لگی ۔۔۔تیری صبع کہہ رہی ہے تیرے رات کا فسانہ ۔۔۔۔اور ہنس پڑی۔۔۔۔ پھر وہ میرے پاس آئی اور کہنے لگی ۔۔   میں نےتو  بڑی  ٹرائی  کی تھی  یار مگر ابا  نہ  مانے  اس  لیئے ۔۔ ارمینہ  بھی چلی گئی تھی ۔۔پھر کہنے لگی ۔۔ چلو کوئی بات نہیں  پھر سہی ۔۔۔۔ کُڑی سیٹ تو ہے نا تیرے ساتھ تو میں نے جل کر کہا خاک سیٹ ہے۔۔۔  تو مرینہ  مجھ سے کہنے لگی اچھا غصہ تھوک میں کچھ کرتی ہوں اتنے میں ارصلا بھی آگیا اور ہم دونوں سکول چلے گئے ۔

 

سکول سے واپسی پر  میں نے ارصلا کو اس کے گھر چھوڑا اور خود اپنے گھر جانے لگا تو مرینہ نے مجھے آواز دیکر روک لیا ۔۔۔ اور بولی شام کو ریلوے سٹیشن جانا ہے تو میں نے اس سے پوچھا کہ وہ کیوں؟؟؟ تو کہنے لگی یار واپسی کا پروگرام ہے اور ٹرین پر  حیدرآباد کے لیئے بکنگ کرانی ہے ۔۔۔ مرینہ کی واپسی کا پروگرام کا سُن کر پتہ نہیں کیوں میں اداس  سا ہو گیا  ۔۔ایسا لگا کہ جیسا کوئی اپنا بہت اپنا بچھڑ رہا ہو۔۔۔ اس لیئے میں مردہ قدموں سے اپنے گھر چلا گیا ۔۔۔ شام کو میں مرینہ کے ساتھ  صدر گیا ۔۔۔ سٹیشن کے سامنے ہی ان کو بکنگ آفس تھا جہاں سے مرینہ نے اپنے لیئے بکنگ کرائی اور    ہم سٹیشن کے راستے واپس گھر آنے لگے  ۔۔ تو ریلوے سٹیشن پر کافی رش دیکھ کر میں نے مرینہ کہا کہ کافی رش ہے تو وہ بولی کوئ گاڑی آئی ہو گی ابھی میں نے سٹیشن  کا گول چکر کراس کیا ہی تھا  کہ اچانک  پیچھے سے مرینہ چلائی ۔۔۔۔۔رُکو۔۔  رُکو ۔۔   مرینہ کی بات سن کر میں نے  فوراً   ہی  بائیک  کی بریک لگائی  ور اس سے پوچھنے لگا کہ کیا ہوا باجی خیریت تو ہے نا۔۔۔ لیکن مُڑ کر دیکھا تو   پیچھے مرینہ بائیک کی  سیٹ پر  نہ تھی  میرے بریک لگاتے ہی وہ چھلالنگ لگا کر نیچے اتُری اور پھر  میرے دیکھتے ہی دیکھتے اس نے ایک خاتون کو پیچھے سے پکڑ لیا  اور پھر وہ اس لیڈی کے ساتھ لپٹ گئی ۔ جیسے ہی مرینہ اس خاتون  کے ساتھ لپٹی ۔۔۔۔ اس خاتون نے   مرینہ کو دیکھ کر ایک نعرہ مارا ۔۔۔  مرینہ کی   بچی ۔۔۔ یہ تم ہو ۔۔۔ اور پھر وہ دونوں ایک ساتھ چمٹ گئیں ۔۔ اور میں حیران پریشان اس  خاتون کو دیکھنے لگا ۔۔۔ یہ ایک سانولے رنگ کی  دبلی پتلی اور نمکین  سی خاتون تھی جس نے   سفید رنگ کا باریک  سا  لباس  پہنا ہوا   تھا  اور اس پر  برائے نام  سا  دوپٹہ اوڑھا  ہوا  تھا ۔۔۔ جبکہ پیچھے سے اس کی سفید قمیض میں سے کالے رنگ کی برا  کا سٹیپ  بڑی  ہی نمایاں نظر آ رہا  تھا۔  اوپر سے اس  ظالم نے قمیض بھی اتنی تنگ پہنی ہوئی تھی  کہ پیچھےسے  دیکھنے پر  اس کی  بڑی سی گانڈ اس کے بند چاک والی قمیض  میں پھنس  کر رہ گئی تھی ۔ ۔۔۔ اور میں کبھی اس کی گانڈ کے ابھاروں کو دیکھتا اور کبھی اس کے برا کے سٹیپ کو ۔۔۔  ۔۔۔ ادھر وہ دونوں مگن ہو کر آپس میں باتیں کر رہیں تھیں ۔۔۔۔ پھر اچانک    وہ   خاتون  اپنی گھڑی کی طرف دیکھ کر بولی ۔۔۔۔ چل یار گھر چلتے ہیں  ۔۔۔ انُ کے آنے کا ٹائم بھی ہو گیا ہے ۔۔۔ اس کی بات سُن کر مرینہ شرارت سے بولی ۔۔۔ تمھارا مطلب  ہے کہ ۔ فادر کے آنے کا ٹائم ہو گیا ہے ۔۔  مرینہ کی بات سُن کر وہ   دونوں ہنس پڑیں ۔۔۔پھر  وہ خاتون  مرینہ سے بولی ۔۔۔   واؤ۔۔۔۔۔ تم کو ابھی تک یاد ہے ؟ تو  مرینہ بولی ۔۔ یہ بھی کوئی بھولنے والی بات تھی ۔۔۔۔ تو اس خاتون نے مرینہ سے پوچھا اچھا یہ بتا  بکنگ کب کی ہوئی تو مرینہ نے جواب دیا ۔۔۔ پرسوں ۔۔۔۔ اس پر وہ  خاتون بولی تو کل تم نے ہر صورت میرے گھر آنا ہے ۔۔۔ اور جیسے ہی وہ مرینہ کو  اپنے گھر کا پتہ سمجھانے لگی ۔۔۔ وہ بولی  ۔۔ مجھے خاک سمجھ آئے گا تم اس کو اپنا اڈریس سمجا  دو۔۔۔ 

 مرینہ کی بات سُن کر  پہلی دفعہ اس خاتون نے میری طرف گھوم کر دیکھا ۔۔۔۔ اور میری طرف ایک بھر پور نگاہ  ڈال کر  بولی ۔۔۔ یہ  صاحبزادہ  کون ہے ؟ اور پھر مرینہ کی طرف منہ کر کے بولی ۔۔۔جہاں تک مجھے یاد پڑتا ہے تمھارا  بھائی تو ابھی بہت چھوٹا ہے ۔۔اس پرمرینہ نے میری طرف دیکھتے ہوئے اس  کو جواب دیا  ۔۔۔ نہیں یہ ہمارا محلے دار اور  فیملی فرینڈ ہے اور پھر اس نے  میرا تعارف کروایا ۔۔۔۔ جسے سُن کر وہ بولی  اوکے ۔۔۔ پھر مجھ سے کہنےلگی ۔۔۔ یہ بتاؤ مسٹڑ تم نے مکھا سنگ اسٹیٹ دیکھا ہے ؟ تو میں نے یس میں سر ہلا دیا ۔۔۔ پھر بولی ۔۔مکھا سنگھ اسٹیٹ میں ملت سکول ۔۔۔۔۔۔ تو میں نے اس پر بھی سر ہلا دیا ۔۔۔ تو پھر اس نے مجھے ملت سکول سے اپنا  گھر سمجھانا  شروع کر دیا ۔۔۔۔ آسان سا پتہ تھا ۔۔۔ سو  میں نے اس سے کہا کہ باجی ۔۔ آپ کا گھر ۔۔۔ فلاں کریانہ کے  سامنے والی   گلی میں بنتا ہے نا  ؟    میری بات سُن کر وہ مرینہ کی طر ف مُڑی اور بولی لو جی بھائی نے سارا کام ہی آسان کر دیا ۔۔۔ اور پھر ۔۔۔ پھر وہ جاتے جاتے مرینہ سکو پھر تاکید کرتے ہوئے بولی ۔۔۔  کل ضرور آنا ۔۔۔ میں تمھارا  ویٹ کروں گی پھر کہنے لگی ۔۔۔ اگر نا آئی نا تو  پھر دیکھ لینا ۔۔اور مرینے نے اس کو  تسلی دیتے ہوئے کہا ۔۔ فکر نہیں کرو میں  کال صبع ہر صورت تمھارے پاس ہوں گی ۔۔۔ اس کے بعد  وہ دونوں آپس میں گلے ملیں اور پھر ہاتھ ملایا اور پھر وہ خاتون مرینہ کو   اور مجھے ہاتھ ہلاکر ٹاٹا کرتے ہوئے وہاں سے چلی گئی  اس کے جانے کے بعد میں نے مرینہ سے  پوچھا باجی یہ کون تھی ؟ تو مرینہ کہنےلگی ۔۔ یہ میرے کالج کی دوست ۔ جوزفین تھی ۔۔۔ بڑی اچھی لڑکی ہے پھر وہ مجھ سے کہنے لگی ۔۔۔ کل اس کے گھر چلیں گے تو میں نےکہا باجی میں نے تو سکول جانا ہو گا ۔۔۔ تو وہ ہنس کر بولی ۔۔ ارے یار   ایک دن  اسکول نہ جاؤ گے تو کون سی قیامت آ جائے گی ۔۔  ویسے بھی تم نے کون سا کوئی بڑا افسر بننا ہے ۔  پھر مجھ سے کہنے لگی ایسا کرو  کہ  کل تم سکول سے پھٹا مارنا ۔۔ سب سے پہلے ہم  جولی )جوزفین( کے گھر جائیں گے اس کے بعد  مجھے موتی بازار لے جانا ۔۔۔وہاں میں نےتھوڑی سی شاپنگ کرنی ہے  ۔ اس کے بعد  مجھے گھر اتار کے تم فارغ ۔۔  

اگلے دن حسبِ  حکم میں نے سکول سے پھٹا مارا ۔۔۔ اور مرینہ کےگھر پہنچ گیا ۔ دیکھا تو   وہ ناشتہ کر رہی تھی   مجھے دیکھ کر بڑی خوش ہوئی اور  بولی بستہ اندر رکھ دو  ۔۔ میں زرا  چائے پی لوں پھر ہم چلتے ہیں ۔۔۔ کچھ ہی دیر میں مرینہ نے چائے ختم کی اور  مجھے بائیک سٹارٹ کرنے کو کہا ۔۔۔۔ چنانچہ میں نے بائیک سٹارٹ کیا اور وہ جمپ مار کر پیچھے بیٹھتے ہوئے بولی ۔۔۔ جولی کا گھر یاد ہے نہ۔۔۔ سب سے پہلے تم مجھے  وہاں لے چلو ۔۔۔  ڈھوک کھبہ کے پاس ہی تو  مکھا سنگھ اسٹیٹ  ہے ۔۔ چنانچہ  کچھ ہی  دیر میں ہم  وہاں پہنچ گئے۔۔  مرینہ کو دیکھ کر جولی بڑی خوش ہوئی ۔۔ اور مرینہ  کو گلے لگاتے ہوئے بولی۔بڑا انتظار کرایا ہے تم نے ۔۔ ۔ ابھی ابھی وہ تمھارا انتظار کر کر کے  گھر سے نکلے ہیں ۔۔۔  اگر تم  تھوڑی دیر پہلے آ جاتی تو  تمھاری انُ سے ملاقات ہو جانی تھی ۔۔۔  جولی کی بات سُن کر مرینہ کہنے لگی ۔۔۔ بڑا بے شرم ہے فادر اپنی سالی کے لیئے تھوڑا سا بھی انتظار نہیں کر سکتا تھا؟ اور پھر دونوں اندر چلے گئیں جاتے جاتے مرینہ کہنے لگی بائیک کو لاک کر کے اندر آ جاؤ ۔۔چنانچہ میں نے بھی ان کے دروازے کے  ایک طرف  بائیک کھڑا کیا اور اندر داخل ہو گیا ۔۔  یہ ایک کشادہ سا گھر تھا ۔۔اندر داخل ہو کر میں سوچ ہی رہا تھا کہ  کس طرف جاؤں ۔۔۔ کہ اچانک مجھے جولی کی آواز سنائی دی وہ کہہ رہی تھی چھوٹے بھائی ادھر آ جاؤ ۔۔۔ اور میں اس کی آواز کی سمت کی طرفچل پڑا ۔۔۔ یہ ان کا ڈرائینگ روم تھا ۔۔۔ جو کہ  خاصہ سجا   ہوا  تھا ۔۔۔   میں جا کر ان کے سامنے بیٹھ گیا اور وہ دونوں مجھے اگنور کرتے ہوئے باتیں کرنے لگیں ۔۔۔ کچھ دیر بعد اچانک ہی جولی بولی ۔۔۔ سوری یار مجھے چائے کا  تو یاد ہی نہیں رہا ۔۔۔پھر کہنے لگی تم بیٹھو میں تمھارے لیئے چائے کا بندبست کرتی ہوں ۔۔ اس کی بات سُن کر مرینہ نے اسے چائے سے بہت منع کیا لیکن ۔۔۔ وہ نہ مانی ۔۔ تب مرینہ بولی ۔ ۔۔میں یہاں بیٹھ کر کیا کروں گی چلومیں بھی تمھارے ساتھ کچن میں چلتی ہوں اور مجھے بیٹھنے کا کہہ کر وہ دونوں کچن میں چلیں گئیں ۔۔  ابھی ان کو گئے ہوئے پندرہ بیس منٹ ہی ہوئے  تھے کہ   میں نے مرینہ کی آواز سنی  وہ  مجھے بلا رہی تھی ۔۔۔ ان کی آواز سُن کر میں ڈرائینگ روم سے باہر نکلا تو دیکھا کہ  مین گیٹ کے پاس ہی وہ کچن تھا اور  اس وقت وہ کچن  کے دروازے میں کھڑی تھی مجھے سامنے دیکھ کر بولی ۔۔۔ بائیک اندر کھڑی کر دو ۔اور واپس کچن میں چلی گئی ۔۔ ۔ مرینہ کی بات سُن کر میں  چلتا ہوا  مین گیٹ کی طرف گیا اور  جولی لوگوں کا دروازہ کھول کر بائیک اندر لانے لگا ۔۔ جب میں  ان کی گیلری میں پہنچا تو  مجھے کچن سے ان کی باتیں کرنے کی آوازیں سنائی دینے لگیں ۔۔۔ جولی ۔۔مرینہ سے کہہ رہی تھی ۔۔۔ اس چھوٹے سے لڑکے کا ۔۔۔ ریئلی ۔۔۔؟؟ تو مرینہ کہنے لگی ۔۔۔یقین کرو ڈارلنگ شکل سے یہ ۔۔ لڑکا  اور نیچے  سے  پورا مرد ہے بلکہ مرد سے بھی اوپر ہے ۔۔ ان کی یہ باتیں سُن کر میں وہیں رُک گیا اور کان لگا کر ان کی باتیں سننے لگا ۔۔۔ پھر میرے کانوں میں جولی  کی آواز گونجی   وہ مرینہ سے کہہ رہی تھی ۔۔ اوکے۔۔ ڈارلنگ  تم اس لڑکے کا ڈک )لن(  انجوائے کرو  ویسے بھی مجھے موتی بازار میں ایک کام ہے  پھر وہ مرینہ سے کہنے لگی تمھارے پاس پورا ایک گھنٹہ ہے امید ہے اس ایک گھنٹے میں تم اس لڑکے کو نچوڑ لو گی ۔۔۔ اور وہ دونوں ہنسیں لگیں۔۔۔ ان  دونوں کی گفتگو سُن کر  میرے سارے وجود میں ایک جوش سا بھر گیا اور۔۔۔  میری ملائیشئے کی شلوار میں ۔۔۔۔ ہچل چل  سی مچ گئی ۔۔۔  میں نےجلدی سے بائیک ان کے صحن میں  کھڑا کیا اور چپ چاپ ڈرائینگ روم میں داخل ہو گیا ۔۔۔۔ کچھ دیر بعد  صرف مرینہ کمرے میں داخل ہوئی اس کے ہاتھ میں ٹرے تھی جس میں کہ چائے کے ساتھ باقی کے لوازمات پڑے تھے ۔۔۔میرے سامنے تپائی پر ٹرے رکھتے ہوئے وہ کہنے لگی ۔۔ میں ابھی آئی اور ۔۔۔ واپس چلی گئی ۔۔۔۔

کچھ دیر بعد وہ ڈرائینگ روم میں داخل ہوئی ۔۔۔ میری طرح آنے والے  وقت کا تصور کرتے ہوئے  اس کا چہرہ بھی   لال سُرخ ہو رہا تھا۔۔۔ لیکن اس نے ایس کوئی بات نہیں کی اور مجھے چائے کا کپ دیتے ہوئے بولی لو چائے پیو ۔۔۔لیکن میرا سارا دھیان اس کی چوت کی طرف تھا جو میں مارنے ولا تھا ۔۔۔ اس لیئے میں نہ رہ سکا اور اس سے بولا ۔۔۔باجی آپ کی دوست کہاں ہے تو وہ مسکراتے ہوئے بولی زرا چینج کرنے گئی ہے ابھی آتی ہو گی ۔۔اور پھر کچھ دیر بعد جولی بھی ڈرائینگ روم میں داخل ہو گئی اس نے گہرے کالے رنگ کی عینک لگا رکھی تھا اورہاتھ میں ایک بڑا سا پرس  تھا ۔۔۔۔ اور ویسا ہی تنگ اور سیکسی سا لباس پہنا ہوا تھا کہ جس میں اس کا جسم صاف دکھتا بھی نہیں اور سامنے آتا بھی نہیں والا معاملہ بنا ہوا تھا ۔۔ اسے ڈرائنگ  روم میں دا خل ہوتے دیکھ کر مرینہ بھی کھڑی ہو گئی اور اس کی دیکھا دیکھی میں بھی اپنی سیٹ سے اٹُھ گیا ۔۔ اندر آتے ہی اس نے ایک بڑی  ہی گہری نظر مجھ پر ڈالی اور مرینہ سے بولی تم لوگ چائے پیو میں ابھی آئی ۔۔۔مرینہ ساتھ چلنے لگی تو وہ بولی نہیں میں باہر سے گیٹ کو تالا لگا جاؤں گی  اس لیئے تم بے فکر ہو کر انجوائے کرنا ۔۔۔ یہ کہتے ہوئے ایک بار پھر اس نے مجھ پر ایک بھرپور نظر ڈالی اور باہر نکل گئی۔۔۔۔

اس کے جانے کے دو منٹ بعد میں نے مرینہ سے پوچھا باجی آپ کی دوست کہاں گئیں ہیں تو وہ مسکرا تے ہوئے بولی ۔۔۔۔۔۔ وہ جہاں بھی گئیں ہیں ۔۔ تم کو اس سے کیا ۔۔۔اور پھر  وہ میرے  قریب آ گئی اور بڑی ہی خمار آلود لہجے میں  کہنے لگی ۔۔۔ کل میں نے واپس چلے جانا ہے ۔۔۔ ابھی مرینہ نے اتنا ہی کہا تھا کہ میری ہمت جواب دے گئی اور میں نے مرینہ کو اپنے گلے سے لگا لیا  اور پھر  اپنے آپ ہی ہمارے ہونٹ آپس میں جُڑ گئے ۔۔۔ اور میں نے مرینہ کا اوپر والا ہونٹ اپنے ہونٹوں میں لیا اور اسے چوسنے لگا ۔۔۔۔ مرینہ کے منہ کی مست مہک ۔۔۔ میرے سارے منہ میں سما گئی اور میں مزید  جوش میں آ گیا  ۔۔۔ادھر مرینہ بھی اپنے جزبات کے عروج پر لگ رہی تھی  کیونکہ اس کے رسیلے ہونٹ الیفی کی طرح  میرے ہونٹوں سے چپک گئے اور ہم ایسے کسنگ کرنے لگے کہ جیسے دینا میں اس کے سوا اس کو کوئی اور کام نہیں  ہے  میں کچھ دیر تک اس کے باری باری اس کے دونوں ہونٹؤں کو اپنے منہ میں لیکر چوستا رہا ۔۔۔ پھر میں نے ہلکے سے اپنی زبان کو ان کے مسوڑہوں پر پھیرنا شروع کر دیا ۔۔۔ وہ مست ہو گئی اور میری  زبان کی ڈیمانڈ  کو سمجھ کر اس نے  میرے اپنا منہ  لیئے کھول دیا ۔۔۔ افُ۔ف۔ف۔ف۔ اس کے منہ سے مست مہک کے ساتھ ساتھ بڑی گرم ہواڑ  سی بھی آ رہی تھی ۔۔۔ مرینہ کی سانسوں کی اس گرمی نے مجھے بے قابو کر دیا اور میری شلوار میں میرا موٹا اور بڑا سا لن ایک دم تن کر کھڑا ہو گیا اور مرینہ کی رانوں کو  ٹچ کرنے لگا ۔۔۔ میرے لن کو اپنی ٹانگوں میں محسوس کرتے ہی مرینہ نے اپنی دونوں ٹانگوں کو زرا سا کھول دیا اور  میرے لن کو اپنے نرم نرم رانوں کے بیچ کر کے اس پر اپنی رانوں  سے دباؤ  ڈالنے لگی ۔۔۔ ادھر میں  نے مرینہ کی   زبان کو اپنے ہونٹوں میں لیا اور اب اس کی لزت سے بھری زبان کو چوسنے لگا ۔۔۔ مرینہ کی زبان چوسنے سے مجھے اپنے اندر ایک جانی پہچانی سی آگ محسوس ہونے لگی ہوس کی آگ شہوت کی آگ۔۔ ۔۔۔ اور میں اس آگ کو محسوس کر کے  جزبات کی شدت میں ہولے ہولے گھسے مارنے لگا۔۔۔۔ اور اس کی نرم نرم رانوں میں اپنا لن آگے پیچھےکرنے لگا۔۔۔ افُ مزے سے میرا برُا حال ہو رہا تھا ۔۔۔ اسی دوران اپنی زبان چوسواتے ہوئے مرینہ نےمیرا ہاتھ پکڑا اور اپنے ایک ممے پر رکھ دیا ۔ اب میں نے مرینہ کا سینے پر ہاتھ پھیرا تو ۔۔۔ مجھے محسوس ہوا کہ مرینہ کے نپل کافیاکڑے ہوئے  ہیں ۔۔۔ چنانچہ میں نے ان اکڑے ہوئے نپلز کو اس کے قیمض کے اوپر سےہی  اپنی دونوں انگلیوں میں لیا اور مسلنے لگا۔۔۔۔پہلی بار میں نے مرینہ کی مست سی آواز سُنی ۔۔ہائی۔ئ ئ ئ ئ ئ۔۔۔تو میں نے اس کے زبان اپنے منہ سے نکالتے ہوئے اس سے پوچھا کیا ہوا باجی ؟ تو وہ کہنے لگی ۔۔۔۔ مزہ آ رہا ہے اور میں نے اس کی بات سُن کر مزید دباؤ ڈالا اور اس کے نپلز کو مسلنے لگا ۔۔۔۔ اور وہ ۔۔۔ویسے ہی لزت بھری ۔۔۔ آہیں بھرنے لگیں ۔۔۔وئی  ۔ئ ۔ئ ۔۔۔۔پھر اس نے اپنی قمیض کو اوپر کیا اور اپنی برا ہٹاتے ہوئے بولی ۔۔۔۔ اب میرے ممے چوس ۔۔ تو میں نے اس سے کہا ۔۔۔ مجھے تو آپ کی لزت بھری زبان کو چوسنا ہے تو وہ   اسی مست لہجے میں کہنے لگی ۔۔۔ یہاں بھی لزت ہے میری جان  ۔۔۔۔اور  اس لزت کو اپنی زبان سی کشید کر لو ۔۔۔ساری لزت پی لو اور پھر اس نے خود ہی اپنے نپلز کو میرے منہ کے آگے کر دیا اور میں نے اس کے نپلز کو چوسنا شروع کر دیا ۔۔۔  اور مین نے دیکھا کہ  مزے کے مارے مرینہ کی آنکھیں بند تھیں اور  وہ اسی لزت بھرے لہجے میں کہہ رہی تھی  ۔۔۔اور چوس ۔۔۔۔۔میرا سارا دودھ پی جا میری جان ۔۔۔۔ آہ ہ ہ۔۔۔۔

  کافی دیر تک مرینہ مجھ سے اپنے نپلز چوسواتی  رہی ۔۔۔ پھر میں نے اس کو صوفے پر گرایا اور  اس کی شلوار اتارنے لگا ۔۔۔۔۔۔ اس نے خود ہی اپنی شلوار اتار دی اور ننگی ہو کر صوفے پر بیٹھ گئی  اب میں آگے بڑھا اور گھٹنوں کے بل اس کی چوت کے پاس بیٹھ گیا ۔۔۔ اس مرینی کی چوت کا معائینہ کرنے لگا ۔۔۔ مرینہ کی چوت ۔۔۔ ابھری ہوئی  تھی اور اس کے ساتھ ساتھ مرینہ کی چوت کے ہونٹ کافی موٹے اور باہر کو لٹکے ہوئے تھے  ۔۔ درمیان میں اس کی چوت کو شگاف کافی بڑا اور گہرا نظر آ رہا تھا۔۔مجھے اپنی چوت کی طرف گہری نظروں سے دیکھتے ہوئے وہ مجھ سے کہنے لگی ۔۔۔۔ میری چاٹو گے نہیں ؟؟ اور میں نے بنا کوئی جواب دیئے ا س کی چوت پر اپنے ہونٹ رکھ دئے اور آہستہ آہستہ اس کی بڑی سی چوت پر بوسے دینے لگا۔۔۔ اس  کے ساتھ ہی میں نے اپنی ایک انگلی اس کی چوت کے اندر داخل کر دی ۔۔۔ اندر سے مرینہ کی چوت بڑی گرم اور تھوڑی کھلی تھی اس لیئے میری انگلی آرام سے اس کی چوت کی سیر کرنے لگی ۔۔۔ پھر میں نے اپنی انگلی کو اس کی چوت سے باہر نکالا  اور اس کی دونون پھانکوں کو اپنی انگلیوں کی مدد سے کھول کر اس میں اپنی زبان داخل کر دی ۔۔۔۔ افُف۔ف۔ف۔ف۔۔ف۔۔ مرینہ کی نمکین چوت کا سوادیش پانی میری زبان پر لگ گیا اور میں نے مرینہ کی چوت کو اندر سے چاٹنا شروع کر دیا ۔۔۔ اور اپنی زبان کو گول کر کے اس کی چوت میں اندر باہر کرنے لگا ۔۔۔۔ میرے اس عمل سے وہ بے حال ہو گئی اور کچھ ہی دیر بعد اس نے میرے سر کو پکڑا اور بڑی سختی سے اپنی  پھدی کے ساتھ جوڑ لیا ۔۔۔ اور اندر کی طرف دبانے لگی ۔۔۔ یس۔۔۔۔ وہ ۔۔چھوٹ رہی تھی ۔۔اور میرا اندازہ سچ ثابت ہوا ۔۔۔ میرے منہ کو اس کی پھدی کے اندر دبے ہوئے ابھی چند ہی سکینڈ ہوئے تھے کہ ۔۔۔ اچانک مرینہ کا پورا جسم کانپا اور ۔۔۔۔۔ پھر اس کی چوت نے پانی چھوڑ دیا ۔۔۔ اور اس کی چوت سے پانی بہہ بہہ کر میرے چہرے پر لگنے لگا ۔۔۔ جو کچھ تو میں نے پی لیا اور کچھ میرے چہرے پر ہی لگا رہ گیا۔۔۔۔ 

جب اس کی چوت نے پوری طرح سے اپنا پانی خارج کر دیا تو مرینہ کی گرفت بھی   میرے سر پر  ڈھیلی پڑگئی اور پھر اس نے اپنے ہاتھوں میں پکڑے ہوئے میرے سر کو آزاد کر دیا اور جیسے ہی اس نے  میرے سر سے اپنے ہاتھ ہٹائے میں نے جلدی سے اپنا چہرہ اس کی چوت سے الگ کر لیا اور ۔۔۔ گہرے گہرے سانس لینے لگا ۔۔۔۔اس کے ساتھ ہی مرینہ نے مجھے اوُپر اٹُھنے کا اشارہ کیاا ور میں اس کا مطلب سمجھ کر کھڑا ہو گیا ۔۔ میرا لن کسی کھمبے کی طرح کھڑا تھا ۔۔۔ جسے جلدی سے اس نے اپنے ہاتھ میں پکڑ لیا اور پھر تھوڑا سا دبا کر چھوڑ دیا ۔۔۔اور مجھے شلوار اتارنے کو کہا میں نے جلدی سے اپنی شلوار اتاری اورساتھ ہی قمیض کو اوپر کر کے صوفے پر بیٹھ گیا ۔۔۔۔ میرے ساتھ اورل کرنے کی اب مرینہ کی باری تھی۔۔۔مرینہ میرے پاس آئی اور مجھے صوفے پر چِت لیٹنے کو کہا ۔۔۔۔اور اس کے کہنے پر میں چت لیٹ گیا اور پھر مرینہ نے کھڑے کھڑے اپنے ایک پاؤں کے تلوے سے میرے لن  کے خاص کر ٹوپے پر مساج کرنا شروع کر دیا ۔۔۔ واؤ ۔۔۔۔ یہ کام میرے ساتھ  کسی نے پہلی مرتبہ  کیا تھا ۔۔۔ اور اس کے نرم تلوے نے کمال ہی کر دیا ۔۔۔۔وہ اپنے تلوے کو چاروں طرف سے میرے سپارو پر پھیرنے لگی ۔۔۔ اور میں مزے سے بے حال اس کے  سامنے صوفے پر لیٹا رہا اور اس کے اگلے سٹیپ کا انتظار کرنے لگا ۔۔۔۔۔

کچھ دیر تک ایسا کرنے کے بعد وہ نیچے بیٹھ گئی اور میرا لن اپنے ہاتھ میں پکڑ کر بولی ۔۔۔ کیسا لگا تھا ؟ تو میں نے ایسے ہی حیرانگی کا مظاہرہ کرتےہوئے اس سے کہا کیا کیسا لگا تھا

؟؟؟؟؟؟؟؟؟ تو وہ ہنس کر بولی ۔۔۔  اسُ وقت تو بڑی انکھیں بند کیے سی سی ۔۔سی ۔۔۔ کر رہے تھے اور اب ۔۔۔۔ تو میں نے کہا ۔۔سوری میں مزاق کر رہا تھا ۔ رئیلی مجھے آپ کو وہ سٹیپ  بڑا اچھا لگا ۔۔۔تو وہ کہنے لگی ۔۔۔ ابھی تو بہت کچھ اور بھی اچھا لگے گا تم بس دیکھتے جاؤ ۔۔۔۔ پھر وہ میرے لن کو ہولے ہولے آگے پیچھے  ۔۔۔اور۔ اوپر نیچے کرنے لگی  ۔۔ اور کچھ دیر بعد وہ میرے لن پر جھکی اور تھوک لگا کر اسے چکنا کیا اور پھر سے لن کو آگے پیچھے کرنے لگی ۔۔۔چکنا ہونے کی وجہ سے  بڑی آسانی سے اس کا نازک ہاتھ جڑ تک میرے لن  مساج کر رہا تھا ۔۔۔ کچھ دیر تک وہ ایسا کرتی رہی ۔۔۔ پھر وہ میری مُٹھ مارتے ہوئے   میری  طرف دیکھ کر کہنے لگی ۔۔۔  لن چوسوں تمھارا؟؟  تو میں نے کہا ۔۔۔ پلیز۔زز۔ز۔۔زز۔۔ز۔ز۔اور اس کے ساتھ ہی وہ نیچے جھکی اور اپنے منہ سے زبان نکال کر  میرے  لن کی ٹوپی پر پھیرنے لگی۔۔۔۔ اور کچھ دیر تک زبان پھرتی رہی۔۔۔ اور پھر اس نے آہستہ آہستہ اپنے ہونٹ کھولے اور میرے لن کو اپنے منہ کے اندر لے جانے لگی ۔۔۔ افُ ۔ف۔ف۔ اس کے ہونٹوں کی نرمی منہ کی گرمی اور لزت بھری سانسیں میں تو مزے کے مارے اپنا سر دائیں بائیں پٹخنے لگا۔۔۔ اور ساتھ ہی  خود بخود مزے میں ڈوبی ہوئی آوازیں  اور سسکیاں میرے منہ سے برآمد ہونا شروع ہو گئیں ۔۔۔آ ہ ہ ہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔افُ ف فف  ۔۔۔۔۔اوہ ۔ہ ہ ہ ہ۔۔اور اس جیسی لزت آمیز آوازوں نے مرینہ اور ۔۔۔۔ ماحول کو مزید  سیکسی بنا دیا ۔۔۔ اور وہ  جوش میں آ کر پہلے سے بڑھ چڑھ کر  میرے لن کو چوسنے لگی ۔۔۔ کافی دیر تک وہ میرے لن کو چوستی رہی ۔۔۔ پھر وہ اٹُھی اور بولی ۔۔۔ تم مجھے چودو گے یا میں چودں ؟ تو میں نے کہا جیسی آپ کی مرضی باجی ۔۔۔ تو میری بات سُن کر وہ بولی تم کو کونسا سٹائل پسند ہے تو میں نے کہا کہ ڈوگی ۔۔۔۔ تو وہ بولی ۔۔۔ ٹھیک ہے مجھے بھی  یہ ہی سٹائل اچھا لگتا ہے اور پھر اس نے صوفے کے بازو پر اپنے دونوں ہاتھ رکھ اور مجھ سے کہنے لگی  پیچھے سے آ کر میری چوت مارو۔۔ مرینہ کی بات سُن کر میں صوفے سے اٹُھا اور مرینہ کے پیچھے آ کر کھڑا ہو گیا۔۔۔ اس اس کی خوبصورت گانڈ دیکھتے ہوئے اسے تھوڑا مزید جھکنے کو کہا ۔۔۔۔ اور ساتھ ہی  تھوڑی ٹانگوں کو بھی کھلا کرنے کا بولا ۔۔۔میری بات سُن کر اس نے اپنی ٹانگیں کھول دیں اور تھوڑا نیچےکو جھک کر بولی ۔۔۔اب ڈال۔۔۔۔۔اور میں نے اس کی چوت کے لبوں پر اپنا لوڑا سیٹ کیا۔۔۔ اور ابھی دھکا مارنے ہی والا تھا کہ ۔۔۔ مرینہ خود ہی تھوڑا پیچھے کی طرف ہوئی اور میرا لن پھسلتا ہوا ۔۔۔ اس کی  چکنی چوت کے اندر اتر گیا ۔۔۔۔۔ اور یوں میں نے اس کی چوت مارنی شروع کر دی ۔۔۔۔ اس وقت مرینہ اتنی مست ہو رہی تھی کہ میرے ہر گھسے کا و ہ اپنی گانڈ  پیچھے کی طرف کرتے ہوئے جواب دیتی  تھی ۔۔ بلاشبہ مرینہ ایک مست اور گرم عورت تھی  اور وہ سیکس  کو انجوائے کرنا بڑے  اچھی طریقے سے  جانتی تھی ۔۔  شروع شروع میں تو اس نے میرے گھسوں کا جواب دیا لیکن جب میں نے اس کی چوت میں سپیڈی گھسے مارنے شروع کئے  تو اس کی بس ہو گئی اور ۔۔۔وہ چیخنے لگی ۔۔۔۔ اور اپنی اسی سیکسی آواز میں کہتی جاتی ۔۔۔ چودو ۔۔۔۔۔چودو۔۔۔۔مجھے چودو۔۔۔۔۔۔ اس کی بات سُن کر میں مزید شدت سے اس کی چوت میں لن اندر باہر کرتا اور اس کے ساتھ ساتھ میں کوشش کرتا کہ میرا  موٹا  ٹوپا ۔۔۔ اس کی بچہ دانی پر ٹھوکر مارے اور میں اپنے اس مشن میں خاصی حد تک کامیاب رہا تھا ۔۔۔ کیونکہ کچھ ہی دیر بعد ۔۔۔۔ اس کی چوت سے پچ پچ کی آوازیں تیز ہونے لگیں ۔۔۔اور اس کے ساتھ ہی مرینہ  کی سسکیاں اب آہوں میں بدلنے لگیں ۔۔۔ اور وہ بڑی شدت سے ۔۔۔۔۔ آہ و بکار کرنے لگی ۔۔۔آہ ۔۔۔وئی ئ ئ ئ ئ ئ ئ  ئ ئ ۔۔۔۔۔۔ افُ۔ف۔ف۔ف۔ف۔ اور تیز مار ۔۔۔۔ مجھے چودو

۔چودو۔۔۔۔۔چو۔۔۔۔د۔۔۔۔و۔۔۔۔۔۔اور پھر میں نے دیکھا کہ مرینہ کا جسم جھٹکے لے رہا تھا ۔۔۔۔اور  مرینہ کا سانس بھی اکھڑ چکا تھا ۔۔۔اور گو کہ  لن اندر ڈالتے وقت مرینہ کی پھدی   کچھ کھلی تھی لیکن بوقتِ منزل ۔۔ پتہ نہیں کیسے اس کی پھدی ایک دم تنگ ہو گئی اور اس کے ساتھ ہی مرینہ نے  ایک لمبی سے سسکی لی ۔۔۔۔آآ آ۔ہ ہ  ہ ۔۔۔۔وئی مورے ۔۔۔رے رے ۔۔۔اور اس  کسے ساتھ ہی اس کی چوت سے گرم پانی کا اخراج ہونے لگا ۔۔۔اور اپنے لن پر مرینہ کی چوت کا گرم پانی محسوس کرتے ہی میں نے اپنے جھٹکوں میں تیزی لائی ۔۔۔اور۔۔۔۔۔۔اور اس کے ساتھ ہی میں نے بھی محسوس کر لیا کہ اب میرا لن بھی  اپنی منی اگلنے لگا ہے ۔۔۔ اور یہ سوچ آتے ہی میں نے مرینہ کی چوت میں آخری گھسے مارنے شروع کر دیئے اور ۔۔۔پھر ۔۔۔۔پھر ۔۔۔ کچھ ہی سکینڈ کے بعد میرے لن نے اپنی ساری منی مرینہ کی گرم پھدی میں اگلنا شروع کر دی ۔۔۔۔۔۔

اس سے اگلے دن مرینہ ہم لوگوں  سے رُخصت  ہو کر واپس حیدر آباد چلی گئی ۔۔ سٹیشن پر سب کے ساتھ میں بھی خصوصی طور پر مرینہ کو الوداع کرنے گیا تھا ۔۔۔ سب سے ملنے کے بعد جب وہ میرے پاس آئی تو وہ دھیرے سے بولی ۔۔۔۔ تم سے ملنے والے ہر قسم کے مزوں کو  کو میں کبھی نہیں بھلا پاؤں گی ۔۔۔ اور پھر ٹرین پر سوار ہو گئی ۔۔۔

 

اسی طرح چند دن گزر گئے اس دوران میں نے بڑی کوشش کی کہ کسی طرح ارمینہ کو چوت مار سکوں لیکن  کوئی چانس نہ بن پایا ۔۔ایس ستم ظریفی تھی کہ ارمینہ دینے کو  تیار تھی میں لینے کو تیار تھا ۔۔۔ لیکن  پتہ  نہیں کیا بات تھی کہ ۔۔۔موقع ہی نہ لگ رہا تھا ۔۔۔ پھر ایک دن  کی بات ہے میں اور ارصلا چھٹی کر کے گھر آئے تو ماسی بولی ۔۔۔ ارصلا جلدی سے روٹی کھا کر ہوم وورک کر لو کہ  پھر تم کو استانی جی کے گھر ٹیوشن پر بھی جانا  ہے ۔۔۔ استانی جی کا نام سُن کر میرا دل باغ باغ ہو گیا اور میں نے ماسی سے پوچھا کہ ماسی یہ لوگ کب آئے ؟؟؟؟؟؟؟؟ تو وہ کہنے لگی ۔۔۔ بیٹے آئے تو یہ لوگ رات کو ہی تھے ۔۔۔ لیکن زیادہ رات ہونے  کی وجہ سے ہم لوگوں کو صبع  ہی معلوم  پڑا  ہے ۔۔۔ وہ بھی ۔۔ندا  نے بتلا یا  ہے ۔۔۔۔ ماسی کے منہ سے ندا میڈم کا نام سن کر میں نہال ہو گیا اور جلدی سے ان کو سلام کر کے گھر گیا اور بستہ پھینک کر سیدھا ندا میم کے گھر پہنچ  کر ان کا دروازہ کھٹکھٹا دیا ۔۔۔ دستک کی آواز پر وہی باہر نکلیں اور مجھے د یکھ کر بڑی خوش  ہوئیں اور پھر انہوں نے ایک نظر گلی میں دیکھا اور پھر مجھے اندر آنے کا اشارہ کیا ۔۔۔  جیسے ہی میں ان کے گھر کے اندر داخل ہوا ۔۔دروازہ بند کرتے ہی  وہ مجھ سےاور میں ان سے لپٹ گیا۔۔۔ ان کے زبددست ممے میرے سینے میں کھب رہے تھے اور وہ بڑی گرم جوشی سے مجھے دبا رہی تھیں ۔۔ پھر میں نے اپنا منہ ان کے آگے کر دیا اور  انہوں نے ایک بڑی ہی شارٹ لیکن مست کسنگ کی پھر اپنے منہ مجھے سے الگ کرتے ہوئے بولی ۔۔۔اس کام کے لیئے  یہ مناسب وقت  نہیں ہے ۔۔۔ اور  میں نے ان سے اپنے ناول کے بارے میں پوچھا  تو کہنے لگی تم سے وعدہ کیا تھا نہ  ۔۔سو میری جان تمھارا ناول تم کو مل جائے  بس  تھوڑا  ٹائم لگے گا ۔۔۔ اور پھر مجھ سے کہنے لگی۔۔ اب تم جاؤ کہ میں بھی زیبا کی طرف جا رہی ہوں ۔۔تو میں نے اس سے پوچھا ۔۔ میڈم کیا میں ٹیوشن پڑھنے آ جاؤں تو وہ کہنے لگی ۔۔۔ویسے بات تو میں نے کلئیر کر دی  ہے لیکن پھر بھی تم آج نہ آؤ ۔۔۔ کال میں تم کو بتا دوں گی ۔۔۔ اور مجھے چلنے کا اشارہ کیا اور واپس جاتے جاتے بھی میں ندا میم کے خوصورت ممے دبانا نہیں بھولاتھا ۔۔ ۔۔۔ 

  حقیقت یہ ہے کہ میڈم کے آنے کی مجھے بڑی خوشی ہوئی تھی ۔۔۔ اور میں واپس اپنے گھر جا رہا  تھا  ہ جیسے ہی میں اپنے گھر کے دروازے میں داخل ہوا تو ویسے ہی میری نگاہ   ارمینہ کے گھر کی طر ف پڑ گئی۔۔۔۔دیکھا  تو  سفید ٹوپی والا برقعہ پہنے ماسی ارصلا کو لیکر  یقینا اسی میڈم زیبا کے گھر افسوس کرنے جا رہی تھیں ۔۔۔۔ ماسی کو جاتے دیکھ کر ۔۔۔میرے دماغ  کی بتی جلنے لگی ۔۔۔۔ اور پھر اچانک لن صاحب نے کہا بیٹا ۔۔۔ اس وقت ارمینہ گھر میں اکیلی ہو گی ۔۔۔اتنی سوچ آنا تھی کہ میں  بھاگتا  ہوا ۔۔۔ ماسی کے گھر کی طرف روانہ ہو گیا ۔۔۔ اور  جلدی سے پردہ ہٹا کر  اندر دروازے پر ہلکا سا دباؤ ڈال کر دیکھا  تو خوش قسمتی سے  دروازہ کھلا ہو ا تھا ۔۔۔  دروازہ کھلا دیکھ کر میر ا دل دھک دھک کرنے لگا اور میں دھڑکتے دل کے ساتھ ماسی  کے گھر کے  اندر داخل ہو گیا ۔۔۔اور چور نظروں سے ادھر ادھر دیکھنے لگا۔۔۔ مجھے ڈر تھا تو یہ کہ کہیں ارمینہ کا والد گھر پر نہ ہو ۔۔۔اس کے علاوہ مجھے او ر کوئی ڈر نہ تھا۔۔۔ اس وقت میرے دماغ پر منی چڑھی ہوئی تھی ۔۔۔ اور  مجھے ہر طرف ارمینہ کی چوت نظر آ رہی تھی ۔۔ خیر دبے پاؤں ۔۔۔۔چلتے ہوئے میں نے ان کا صحن عبور کیا ۔۔۔ اور ادھر ادھر کی سُن گُن لینے لگا ۔۔۔ گھر میں گہری خاموشی  اور ہر طرف سناٹے کا  راج  تھا ۔۔  پھر میں چلتا ہوا ۔۔۔ کچن میں چلا گیا ۔۔۔ دیکھا تو ارمینہ وہاں بھی نہ تھی۔۔۔ ۔۔ ۔۔۔۔ پھر میں چلتا ہوا ۔۔ ارمینہ  کے کمرے کی طرف گیا ۔۔۔ تو مجھے ارمینہ کی دبی دبی سسکیوں کی آواز سنائی دی ۔۔۔  

 

ارمینہ کی سسکیاں سُن کر میں حیران رہ گیا اور میں سمجھا کہ شاید وہ کسی اور کے ساتھ رنگ رلیاں منا رہی ہے  یہ سوچ کر میں نے اپنے جوتے اتارے اور ننگے پاؤں ارمینہ کے کمرے کی طرف جانے لگا ۔۔۔ دیکھا تو اس کا دروازہ  ادھ کھلا تھا  اب میں اور احتیاط سے آگے بڑھا اور جھانک کر دیکھا تو ۔۔۔اندر کوئی نہ تھا ۔۔۔ جبکہ ارمینہ بستر پر  لیٹی تھی اور ایک سرہانہ اسکی ٹانگوں کے بیچ پڑا  تھا اور وہ یہ سرہانے کو اپنی چوت پر رگڑ رہی تھی ۔۔۔ یہ دیکھ کر مجھے جوش آ گیا اور میں نے ہلکی سی آواز نکالی ۔۔۔آواز سنتے ہی ۔۔۔۔ ارمینہ  نے چونک کر اپنی آنکھیں کھولیں ۔۔۔ اور پھر  میری طرف دیکھ کر اس کے چہرے  پر اطمینان اور سکون چھا گیا اور وہ  مجھے دیکھ کر کہنے لگی ۔۔۔آج  میں تقدیر سے کچھ اور مانگ لیتی تو وہ بھی مل جانا تھا ۔۔۔ اور میں اس کے بستر کے پاس پڑی کرسی کو گھسیٹ کر اس کے پاس لے گیا اور پھر کرسی پر بیٹھ گیا ۔۔۔

    پھر میں ارمینہ کے چہرے پر جھک گیا اور اور اس کے ہونٹوں کو چوسنے لگا ۔۔۔ لیکن اس نے مجھے زیادہ دیر تک کسنگ نہیں کرنے دی اور اپنا منہ مجھ سے الگ کر لیا ۔۔۔ یہ دیکھ کر میں  بھی کرسی پر اطمینان سے بیٹھ گیا اور اپنا ہاتھ بڑھا کر اس کے سینے پر پھیرنے لگا۔۔۔ اور پھر ہاتھ پھیرتے پھیرے اس کے ممے دبانے لگا۔۔۔میرے اس عمل سے اس نے ہلکی سے سسکی بھری اور میرے ہاتھ کو اپنے نیچے لے  گئی  میں اپنے ہاتھ اس کے نیچے لے گیا اور سب سے پہلے سرہانے کو وہاں سے ہٹایا اور اپنا ہاتھ اس کی پھدی پر رکھ دیا ۔۔۔ جیسے ہی میرا ہاتھ اس کی پھدی پر پڑا  اس نے فوراً  اپنی  دونوں ٹانگیں جوڑ  لیں اور اپنی   دونوں رانوں کو میرے ہاتھ  کے گرد بانے لگی ۔جس کی وجہ سے میرا لن ایک دم اکڑ گیا اور ۔۔۔  یہ دیکھ کر میں سمجھ گیا کہ اس وقت ارمینہ سخت گرم ہو رہی ہے چنانچہ میں  کوئی بات کئے اس کے بستر پر چلا گیا اور  جا کر اس کے اوپر جا کر اس طرح سے لیٹ گیا  کہ جس سے میرا  کم سے کم وزن ارمنیہ  پر پڑے ۔۔ جیسے  ہی میں اس پر لیٹا ۔۔ اس نے میرا لن پکڑ کر اپنی پھدی کی موری پر رکھ دیا تھا اور ساتھ ہی اپنی  نرم رانوں کو میرے لن کے ارد گرد کس لیا تھا ۔۔۔۔۔ اور اب میرا لن ارمینہ کی دونوں رانوں کے بیچ  اس کی پھدی کو ٹچ کر رہا تھا ۔۔ اور میرے ہونٹ  ارمینہ کے ہونٹوں میں پیوست تھے ۔۔۔ اور اس کے ساتھ ساتھ میں اپنے نیچے والے دھڑ سے ارمنیہ  کی پھدی پر  ہولے ہولے   سے  گھسے بھی مار رہا تھا ۔۔۔ شلوار کے باوجود بھی میرا لن اس کے چوت کے رس سے گیلا ہو رہا تھا ۔۔۔۔ کچھ دیر  تک تو ہم یہ گیلی گیلی کسنگ کرتے رہے ۔۔۔ لیکن چونکہ اس وقت ارمینہ بہت سخت گرم تھی اس لیئے جلد ہی میں نے یہ کسنگ ترک کر دی اور پھر اس نے مجھے اوپر اٹُھے کو کہا اور میں اوپر اٹُھا تو اس نے میری بیک پر ہاتھ لگا کر مجھے پاس آنے کو کہا ۔۔ اور میں سمجھ گیاا ور اس کے پاس چلا گیا اس نے میری قمیض کو ایک طرف  کیا اور پھر شلوار کے اوپر سے ہی میرے لن کو اپنے منہ میں لے لیا اور اس پر ہلکے ہلکے دانت کاٹنے لگی ۔۔۔۔لن والی جگہ سے میری شلوار پہلے ہی اس کی چوت کے رس سے کافی گیلی تھی اب اور گیلی ہو گئی  تھی ۔۔۔ پھر اس نے ہاتھ بڑھا کر میرا نالہ کھولا اور میرے ننگے لن کو اپنے ہاتھوں میں پکڑ کر اپنے منہ کے پاس لے گئی اور پھر  ایک بڑا ہی  گرم چوپا  لگایا ۔۔۔