692

محبت کے بعد.قسط2

نا   گھٹنا ۔۔۔ عین   اس  کی گانڈ  کے  بیچ   میں  دے   مارا ۔۔اور پھر  اس   سے  کہنے  لگا۔۔۔۔۔۔ بھونک  نہ  کتے۔۔۔
    اتنی  دیر  میں امجد  اس  گلی  کا  ایک چکر  لگا  کر  واپس  آ گیا  تھا۔۔اور  میں  نے  اسے  آتے  ہوئے  دیکھا   تو   وہ  خاصہ خوش نظر آ  رہا  تھا   اس   کی   خوشی    کا   ایک    ہی   مطلب   تھا    اور    وہ    یہ   کہ  اسے  دیدارِ  یار  ہو گیا  تھا ۔۔۔۔۔۔ جیسے  ہی  امجد   میرے  قریب   آیا۔۔۔ میں  نے  اس  سے کہا ۔۔  ۔۔  کہاں  تک  گئے  تھے  تم؟؟؟؟۔۔تو  وہ   شیدے  کی طرف  دیکھتے  ہوئے   بولا ۔۔۔۔۔۔ شاہ   جی  پوری  گلی  کا  ایک  چکر  لگا  کر آ  رہا   ہوں ۔۔۔ اس  پر  میں   نے  اس  سے  کہا۔۔۔ اب   میری  طرف  سے  ایک    چکر  اور      لگا  کر آ۔۔۔۔ میری  بات سن کر   امجد  چہکتے   ہوئے  بولا۔۔۔۔ جو حکم میرے آقا ۔۔۔۔اور پھر  سے   شیدے  کی  گلی  میں  چلا  گیا۔۔جیسے  ہی  امجد   گلی  کا   چکر  لگانے کے لیئے مُڑا ۔۔۔    شیدے  نے  ایک  دفعہ  پھر  سے  اپنے آپ کو   چھڑانے  کی  بھر پور ۔۔کوشش  کی۔۔۔ لیکن بے سود۔۔۔  یہ دیکھ کر  میں  نے  اس  کے  بازو  کو   تھوڑا  اور مروڑا   دیا ۔۔۔جس  کی  وجہ   سے  وہ  میرے  ساتھ بلکل   چپک  سا  گیا  اور  اس    کے  اس   طرح  چپکنے  کی  وجہ  سے  اس  کی  گانڈ   میرے    ساتھ  جُڑ  گئی  اور ۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔اس  کی   گانڈ  میرے  ساتھ لگنے  کی دیر  تھی   کہ   ۔۔۔۔۔۔ نہ   جانے  کیسے ۔۔۔ میرا  لن     ہلکا  سا  کھڑا   ہو گیا ۔۔اور  میں  نے   اس  کی  گانڈ   پر  اپنے   نیم    کھڑے  لن  کو   رگڑتے   ہوئے  کہا ۔ ہل  مت  میری  جان۔۔۔۔۔زیادہ   ہل  جُل  کی  نا۔۔۔۔ تو  یہ نیم  جان   لن ۔۔۔۔  فُل کھڑا   ہو جائے  گا۔۔۔۔اور   اگر  یہ کھڑا   ہو  گیا ۔۔۔۔۔تو   پھر  میں  اسے  کپڑوں کے اوپر  سے  ہی  تیری  گانڈ  میں  گھسیڑ دوں  گا۔۔میری  بات  سن کر  وہ   غضب  ناک آواز  میں  بولا ۔۔۔ اس  بات   کے  لیئے    تُو    بہت   پچھتائے  گا    شاہ۔۔۔!!!!!!!۔۔۔  میں  نے جان  بوجھ کر  اس  کی  بات  کو  سنی  ان  سنی کرتے  ہوئے   کہا ۔۔ جو ہو گا۔۔۔دیکھا  جائے  گا۔۔ابھی تُو۔۔۔اپنی  گانڈ  پر میرے  لن  کو  انجوائے  کر۔۔۔  اتنے  میں  سامنے  سے امجد آتا  ہوا   دکھائی  دیا   تو   دوستوں  نے   مجھے  چلنے  کا  اشارہ  کیا ۔۔۔ چنانچہ  جیسے  ہی  امجد   ہمارے  پاس  آیا    تو  میں  نے  شیدے   کے  ہاتھ  پر  اپنی  گرفت  ڈھیلی کر دی ۔۔۔ اور   اسے  مخاطب کر تے   ہوئے   بولا ۔۔ تعاون   کے  لیئے  بہت شکریہ  رشید  بھائی۔۔۔ میری   بات  کو    سنتے   ہی    وہ  خونخوار  لہجے  میں کہنے  لگا ۔۔۔یاد  رکھنا  شاہ  ۔۔۔۔ میں اپنی   اس   بے  عزتی  کو کبھی  نہیں  بھولوں   گا   ۔۔اس  کی   بات  سن کر  میں  نے اس کو  چڑانے  کے   لیئے   خواہ  مخواہ  خود  پر  غصہ  طاری کیا   اور   دانت   پیستے   ہوئے  اس  سے  بولا ۔۔ میں بھی   یہی  چاہتا  ہوں کہ تم اس بے عزتی  کو مت  بھولو۔۔۔اور  جاتے  جاتے  اس  کو  ایک  اور  چرکہ  لگاتے  ہوئے  بولا۔۔۔ اور  ہاں   شیدا   جی ۔۔ آئیندہ  کسی   سے   بھی   پنگا  لیتے  ہوئے   یہ ضرور   سوچ   لینا ۔۔ کہ۔۔۔۔  ہر  بِل  میں  چوہا  نہیں  ہوتا  کسی  کسی  میں سانپ  بھی  ہو  سکتا  ہے۔۔۔۔۔ اور  پھر  اس  کو  ٹا ٹا  کرتے  ہوئے  ہم  لوگ  واپس  اپنے محلے  میں آ گئے۔۔۔
               اگلے  دن  میرا  ایک  جگہ  انٹرویو  تھا  جو  کہ  خاصہ   بُرا    ہوا۔۔۔۔۔سو  انٹرویو  دے کر میں  سیدھا   میونسپل  لائیبرئیری  پہنچا   تو  وہاں  کوئی  بھی  دوست  موجود    نہ  تھا  اس   لیئے  نے  جلدی  جلدی  اس  دن  کی اخباروں میں  " آسامیاں  خالی   ہیں "   کے  اشتہارات    دیکھے لیکن   اتفاق  سے اس  دن   میرے  مطلب  کی کسی   اسامی   کا  اشتہار  نہ آیا   تھا  اس  لیئے  میں  نے  اخباروں  کی  جان  چھوڑی  اور  باہر نکل کر  لیاقت  باغ  میں    اپنی مخصوص  جگہ   پر  پہنچ  گیا۔۔۔اور  دیکھا  تو  سبھی  دوست   وہاں   براجمان  تھے  میرا  اترا  ہوا  چہرہ   دیکھ  کر   اصغر بولا۔۔۔ لگتا  ہے حسبِ معمول  انٹرویو  اچھا   نہیں   ہوا ؟؟   تو   میں   تقریباً   روہانسا   ہو  کر   بولا    ۔۔۔انٹرویو  کیا  لن    ہونا  ہے  یار  ان   لوگوں   نے  پہلے  سے  ہی  اپنے   بندے  سلیکٹ  کیئے   ہوئے    ہوتے   ہیں   انٹرویو  تو  بس  ایک  ڈھکوسلا   ہوتا  ہے۔۔۔ میری  بات  سن  کر  اکرم  کہنے  لگا    مہاراج!!!۔۔۔  جب آپ کو  اس   بات  کا   پہلے سے  ہی  علم  تھا  تو  آپ   وہاں کیا   "امب" لینے  گئے   تھے ؟     اس  پر  اصغر  نے  گرہ   لگاتے   ہوئے  نیم  مذاحیہ  لہجے  میں  کہا ۔۔یا   یوں   کہہ لو کہ  اس  انٹرویو   لینے   والے  کا   لن   لینے   گئے   تھے ؟ ۔۔۔تو  میں  نے  ان  سے  کہا   ۔۔کیا  کروں  یار ۔۔۔۔ جانا  تو  پڑتا  ہے۔۔۔۔ پھر  میری نظر امجد  پر  پڑی۔۔۔ جو   مزے   لے   لے کر  ہماری  گفتگو   سُن   رہا  تھا ۔۔۔  تو  میں نے  اس  سے  پوچھا  ۔۔ ہاں   بھائی  شام  کتنے   بجے   چلنا  ہے ؟  میری   بات  سن  کر  وہ  کہنے  لگا ۔۔۔ نہیں  یار  اب   اس  گلی  میں نہیں  جانا   تو  میں  نے  اس   کی  طرف  دیکھ  کر  کہا  اس  کی   کوئی   خاص   وجہ؟  تو  وہ  کہنے  لگا  یار نبیلہ  نے   بڑی  سختی   کے  ساتھ منع  کر  دیا  ہے۔۔۔اس  پر  اصغر  بولا۔۔۔ جیسے تیری مرضی  باس ۔۔۔ ہم تو  ہر  وقت    تمہاری  سروس  کے  لیئے  حاضر      ہیں ۔۔۔۔ پھر  کچھ   دیر گپ  شپ کے  بعد  ہماری  یہ مجلس برخواست  ہو گئی  اور سب  دوست  اپنے  اپنے  گھروں کو  روانہ  ہو  گئے ۔۔۔۔جبکہ  میں اور  امجد   پڑوسی  ہونے  کی وجہ  سے  اکھٹے  ہی  اپنے  گھر کی طرف    چل  پڑے  ۔۔
       گھر  کی  طرف  جاتے  ہوئے     باتوں   باتوں  میں  امجد  مجھ  سے  کہنے  لگا ۔۔۔ بھائی  کل آپ  نے  شیدے  پر  کچھ  زیادہ   ہی  بھاری  ہاتھ رکھ  دیا  تھا ۔۔۔ تو   میں  نے  اس  سے  کہا  یہ تم  سے کس  نے کہہ  دیا  ؟؟   تو   وہ  کہنے  لگا   آج   محفل  میں  اسی  موضوع   پر  بات  ہو  رہی تھی۔۔۔پھر  وہ  تشویش   بھرے  لہجے   میں  بولا۔۔ بھائی  ہوشیار  رہنا ۔۔۔ شیدا   بڑا   ہی  خبیث  آدمی  ہے  وہ   کسی  بھی  وقت  آپ  کو   کل  والی    بات   کا   جواب   دینے  کے  لیئے   آپ   پر حملہ  آور   ہو   سکتا  تھا  تو  میں  نے  اس  سے کہا کہ  میرا  نہیں  خیال کہ  وہ   ایسا  کرے  گا۔۔۔ میری  بات  سن کر  امجد    اچانک   ہی    چلتے   ہوئے     رک گیا  اور پھر   میری  طرف  دیکھتے    ہوئے    بولا۔۔۔۔ آپ  یہ  بات  کیسے  کہہ  سکتے  ہو؟  تو  میں نے اس کو  جواب   دیتے   ہوئے   کہا ۔۔۔ بات  یہ  ہے  دوست  کہ  شیدا   مجھے   اور  میں  شیدے  کو  بڑی  اچھی  طرح  سے  جانتا  ہوں۔۔۔ ۔۔۔۔وہ  ایک  دم  سے ایسی  کوئی  حرکت  نہیں  کرے  گا  بلکہ  آج  کے  بعد   وہ میری  تاک  میں  رہے  گا۔۔۔ اور  جیسے  ہی   اسے   میری  طرف   سے   کوئی  لُوز  پوائینٹ  ملا۔۔۔۔تو  اس  نے ایک  دم     وار کرنے  سے  دریغ  نہیں کرنا ۔۔۔۔اور جتنی   کل  ہم  نے  اس  کی  گلی  میں  اس  کے  گھر  کے  سامنے  اس  کی  بے عزتی  کی  ہے  وہ  اس  سے   ڈبل   یا   اس    سے بھی   زیادہ ۔۔۔۔۔ مجھے  بے  عزت  کرنے  کی  کوشش کرے گا۔۔۔  اور  کل  کے  بعد  وہ   ہر  وقت   موقع  کی  تاڑ   میں   رہے  گا۔۔۔۔ بات کرتے  کرتے   اچانک   ہی   میرے   دل   میں  ایک خیال آیا ۔۔۔۔اور  میں  نے  امجد  کی طرف  دیکھتے  ہوئے  کہا ۔۔ اچھا   یار  یہ تو   بتاؤ   کہ   ۔۔  نبیلہ  نے  تم  کو  اپنی  گلی  میں آنے  سے کیوں منع  کیا  ہے؟ تو   اس  پر   وہ  کہنے  لگا ۔۔۔ اس  کی  ایک   خاص  وجہ  ہے  اور  وہ   یہ کہ   وہ  نہیں  چاہتی  کہ  ہمارے  عشق  کی  بھنک بھی  اس  کے  بھائیوں    کے  کانوں  تک  پہنچے ۔۔۔۔۔ پھر  وہ  کہنے  لگا  کہ اسی  لیئے   بھائی    ہم  نے  فیصلہ  کیا  ہے کہ  آج کے  بعد  ہم  شام  کو     مُکھا  سنگھ اسٹیٹ  والے  پارک  میں  ملا   کریں    گے۔۔۔ پھر  اس   نے   کچھ  ہچکچاتے    ہوئے   میری  طرف  دیکھا  اور  کہنے  لگا۔۔۔۔ بھائی  اس  کے  لیئے  مجھے  آپ کی  مدد  درکار  ہو گی۔۔۔۔تو  میں  نے  اس  کی  طرف  سوالیہ  نظروں  سے  دیکھتے  ہوئے  کہا  کہ کس  قسم  کی  مدد؟ ؟؟
     تو وہ  کہنے  لگا ۔۔۔ کہ   آپ کو بھی   میرے  ساتھ  پارک  میں  چلنا  پڑے  گا۔۔۔۔ اس پر  میں  نے  اس  سے  کہا ۔۔۔رہنے  دو  یار۔۔۔ میں   تمہارے   ساتھ  کباب  میں  ہڈی  بن  کر کیا   کروں  گا ؟  تو  وہ  جلدی  سے  بولا ۔۔۔ نہیں نہیں ۔۔۔۔ آپ   ہمارے  ساتھ  نہیں  ہوں  گے    بلکہ آپ   کی   ڈیوٹی   یہ  ہو  گی  کہ  آپ    دور   سے  ہمیں واچ  کریں  گے اور  اگر کوئی  ایسی   ویسی   بات  ہوئی  تو  آپ  نہ صرف  یہ کہ  ہمیں مطلع  کریں  گے  بلکہ۔۔۔ اسے   سنبھال بھی  لیں  گے۔۔۔ امجد  کی  بات سن کر  میں نے اس سے کہا ۔۔۔ کہ سالے  صاف  کیوں نہیں  کہتا کہ   مجھے   بطور  باڈی  گارڈ  تمہارے  ساتھ  چلنا   ہے؟  میری  بات  سن  کر  امجد  کھسیانی  سی  ہنسی  ہنس کر بولا۔۔۔ ایسے  ہی سمجھ  لو  بھائی۔۔۔۔ 
                 شام  رات  میں  ڈھل رہی تھی  کہ  جب  میں  اور  امجد  مکھا  سنگھ  اسٹیٹ  کے  چھوٹے  سے  پارک  میں پہنچے۔۔۔پارک  میں  لائیٹ   نہ  ہونے  کی  وجہ  سے  ہلکہ  ہلکہ  اندھیرا  چھا   رہا  تھا ۔لیکن  یہ  اندھیرا   ابھی  اتنا  گہرا  نہیں  ہوا  تھا  کہ   کسی  کی شکل  ہی  دکھائی   نہ  دے ۔۔۔   میرے  ساتھ  چلتے  ہوئے  امجد  نے  اچانک   ہی     پارک  کے   اس  طرف   اشارہ  کیا۔۔۔ کہ  جہاں  پر  ٹیوب  ویل  لگا   ہوا  تھا  اور کہنے   لگا ۔۔۔۔ بھائی ۔۔۔ وہ  کھڑی  ہے۔۔۔ اور  پھر  اس  نے  اسی  طرف         تیز  تیز  قدموں   سے  چلنا  شروع  کر دیا ۔کہ  جدھر اس  کی  معشوقہ  کھڑی  تھی  ۔۔۔۔۔۔۔۔ مجبوراً      میں بھی  اسی رفتار  سے اس  کے  پیچھے  پیچھے  چلتا  گیا۔۔تھوڑی  دور  آگے    ٹیوب  ویل  کے   پاس  ایک  نیم    تاریک  سے  ٹریک پر   دو  لڑکیاں  ٹہل  رہیں تھیں ۔  ۔۔۔۔ ان  لڑکیوں  نے  بھی    ہمیں  اپنی  طرف  بڑھتے   ہوئے   دیکھ  لیا   تھا   اور  اب  وہ    دونوں   چلتے   ہوئے   رُک  کر  ہمیں  دیکھنے  لگ گئیں تھیں ۔۔۔ کچھ  ہی  دیر   میں  ہم  لوگ  ان  کے  نزدیک  پہنچ   گئے   تھے۔پاس  پہنچتے   ہی   امجد  نے  بڑی  بے تابی  سے  ایک  لڑکی  کو  ہیلو  کہا ۔۔۔اور  جواباً  اسی  بے تابی   سے اس  لڑکی  نے  بھی   اس  کی  ہیلو  کا  جواب  دیا۔۔ پھر  امجد  نے  میری  طرف   اشارہ  کرتے  ہوئے اس کہا ۔۔۔ نبیلہ ۔۔ یہ   میرا  بیسٹ  فرینڈ   شاہ  ہے۔۔جس  نے  کل تمھارے   بھائی  کو    اچھا   خاصہ  زیر کر لیا  تھا۔۔۔ پھر اس  نے  اپنا  منہ  میری  طرف  کیا  اور  بولا ۔۔۔ شاہ۔۔۔ یہ  نبیلہ  ہے  اور   پھر  ساتھ  کھڑی  لڑکی  کا تعارف  کراتے  ہوئے  کہنے  لگا۔۔۔۔  جس  طرح  تم   میرے  بیسٹ  فرینڈ   ہو   اسی   طرح   یہ نبیلہ کی  بیسٹ  فرینڈ  عذرا  ہے۔۔  امجد  کی  بات ختم   ہوتے   ہی   میں  نے  اس لڑکی ۔۔کہ  جس  کا   نام   عذرا  تھا  کی  طرف  دیکھا  اور بڑے  تپاک  سے  اسے  ہیلو  کہا۔۔۔۔۔ لیکن  اس  لڑکی  نے     جواب   میں کوئی  گرم  جوشی  نہیں  دکھائی   بلکہ   اس    نے   بڑے  ہی  رسمی    انداز  سے  میری  ہیلو  کا  جواب  دیا۔۔۔۔  اس  سے  پہلے کہ   میں  اس   لڑکی   سے مزید  کوئی  بات  کرتا    امجد اور  نبیلہ  نے ا یک  دوسرے  کی  طرف دیکھ کر    آنکھوں  ہی  آنکھوں  میں  کوئی   اشارہ   کیا  اور وہ  دونوں  ہمیں  یہ  کہتے  ہوئے  چھوڑ  کر  آگے   ٹیوب  ویل  کی طرف   جاتے   ہوئے  سنسان  سے ٹریک کی   طرف  چل  پڑے کہ آپ  دونوں  باتیں  کرو ۔۔۔ ہم  ابھی  آئے  ۔۔ ۔۔۔۔
ان  کے  جاتے  ہی  میں  نے  اس  لڑکی   کی  طرف  غور  سے دیکھا ۔۔۔۔۔۔  تو  وہ  ایک  چھوٹے  سے   قد  کی بھرے بھرے جسم  والی  گوری چٹی   اور    بہت  ہی   پیاری  سی  لڑکی تھی ۔۔۔ کہنے  کو    تو  اس  کا  قد  چھوٹا   تھا ۔۔۔ لیکن سامان اس  کے  ساتھ  کافی    بڑا۔۔ بڑا   لگا   ہوا   تھا ۔۔۔ میرے  ٹھرکی   بھائی سمجھ   گئے   ہوں کہ    سامان    سے   میری  مُراد  اس  کی  چھاتیوں ۔۔اور گانڈ  سے  ہے ۔۔۔  جو   بہت   بڑی   تھیں  لیکن  اس  لڑکی  نے  اپنی  ان  بھاری  چھاتیوں اور موٹی   گانڈ    کو کمال  سلیقے  کے  ساتھ  ایک  بڑی  سی  چادر   کے  ساتھ      ڈھانپ  رکھا  تھا ۔۔۔ لیکن    آپ   تو   جانتے  ہی    ہیں کہ  تاڑنے   والے  بھی   قیامت   کی نظر   رکھتے   ہیں ۔۔۔۔۔ ۔ سو  اس  کی  بڑی  سی  چادر  جتنا  مرضی  ہے  اس کی  موٹی  گانڈ اور مموں  کو  کور  کر لے۔۔۔۔۔  ہماری  ایکسرے   نگاہوں   سے   ہر گز  نہیں   بچ   سکتی  تھی  ۔ اس  کی آنکھیں     بہت   بڑی  اور   رنگ  ان  کا  کالا  تھیں ۔۔  جبکہ  اس    کے   گال    گلابی    اور   ہونٹ   شرابی    تھے   چنانچہ    امجد   لوگوں   کے   جانے  کے   فوراً   بعد   جب  میں   نے  اس  کو   مخاطب   کر  کے  کوئی   بات  کی  ۔۔۔۔۔۔ اس  نے  میری   بات   کا  جواب   تو   کچھ   نہ  دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ البتہ ۔۔۔۔  جب   اس  نے  اپنی  پلکوں   کی چلمن    اُٹھا  کر   اپنی  بڑی   بڑی  آنکھوں  کے  ساتھ   میری  اورھ     دیکھا  تو ۔۔۔۔۔  بے ساختہ        مجھے   پنجابی  کا  ایک  شعر  یاد  آ  گیا –
اُوہنے   تکیئے   اے   بس   ، ساڈا   چلیا    نئیں   وَس
  اودا    گیا  ککھ   نئیں   ۔۔۔ ساڈا    رہیا  ککھ نئیں ۔۔ 
 ۔۔۔اسکے ساتھ ساتھ  اسکی  بڑی  بڑی   آنکھوں   میں   ہرنی   کی   آنکھوں  جیسی        حیرانی    اور جھیل  سی    گہرائی     نظر  آئی تھی۔۔ ۔۔  اور یہ  جھیل  سی  گہرائی  اور  ہرنی  جیسی     حیرانی   نے    اس  کی   آنکھوں   میں    بے   پناہ   کشش   اور  ایک    نشہ سا  بھر  دیا  تھا  جس  کو   دیکھ  کر  مجھ  جیسا  ٹھرکی     بندہ  بن  پیئے    لہرا   گیا  تھا۔۔  ۔۔۔  ۔۔ شاعر نے  اس  کے بارے   میں   ٹھیک   ہی   کہا   تھا ۔۔۔ کہ گلاب آنکھیں ، شراب آنکھیں۔۔۔۔۔۔۔یہی   تو   ہیں   لاجواب  آنکھیں ۔۔۔۔
، آنکھوں  کے  بعد اس کے دلکش   چہرے  پر جو  چیز  سب  سے نمایاں تھیں  وہ  اس  کے  ہونٹ   تھے ۔۔  گلابی  رنگت  والے  اس  کے ہونٹ  اور ان  ہونٹوں  کے آس  پاس  قدرتی  طور پر لائینگ لگی  ہوئی تھی اور اسکے  ہونٹوں کے آس پاس لگی  یہ لائینگ اس کے  ہونٹوں  کو مزید دل کش  بنا رہی تھی ۔۔۔۔ اس  کے  ہونٹ   اتنے   رسیلے   تھے  کہ۔ایسے  لگ   رہا  تھا  کہ  جیسے  اس  کے  ہونٹوں  سے  رس  ٹپک  رہا   ہو  ۔۔اتنی   پیاری  لڑکی  دیکھ  کر   میری  تو  مَت    ہی   وج   گئی تھی   ( عقل گم ہو گئی )   چنانچہ  امجد  لوگوں کے  جاتے  ہی   میں  نے  آگے   بڑھ  کر  اس   سے  کوئی   بات  کرنا  چاہی  لیکن  اس  نے  بُری  طرح   سے  مجھے   نظر انداز  کر تھوڑا  آگے  ٹہلنا  شروع کر دیا۔۔۔۔   اس  کی  اس  ادا  سے میں  زرا  بھی  پریشان   نہ   ہوا ۔ اور  ڈھیٹوں  کی  طرح   رالیں   ٹپکاتا      ہوا     اس  کے  پیچھے   پیچھے   چلتے  ہوئے  بولا ۔۔۔ بات  سنیئے ۔۔  نبیلہ اور آپ کب  سے فرینڈ   ہیں؟  تو  اس   نے  میری  طرف  دیکھے  بغیر   بڑے  ہی   روکھے   لہجے  میں بس  اتنا    ہی    کہا ۔۔ بچپن  سے۔۔۔۔۔ اور  پھر  آگے  بڑھ  گئی ۔۔۔۔اس  پر  میں   مزید آگے  بڑھا  اوراس سے بولا۔۔۔۔ ۔۔۔۔ آپ  دونوں  ایک   ہی  کلاس  میں  پڑھتی  ہیں ؟؟ ۔۔۔ میری  بات  سن کر  وہ   رک گئی  اور بڑے   ہی  روکھے  لہجے  میں  کہنے لگی ۔۔۔۔  جی۔۔۔ اور  پھر  آگے  بڑھ  گئی۔۔۔۔ اس  طرح  اس  شام  میں  نے  اس حسینہ   سے    راہ  و  رسم  بڑھانے  کی    ہر ممکن کوشش  لیکن ۔۔۔ انُ   لبوں  نے   نہ  کی   مسیحائی  ۔۔۔۔۔۔۔( حالانکہ  ) ہم نے سو  سو طرح سے مر  دیکھا  تھا  ۔۔۔۔  ۔۔۔۔۔اس  کے   باوجود   میں   نے   ہمت   نہیں  ہاری ۔۔۔۔اور  اپنے  سارے  حیلے  کر  لیئے۔۔۔ لیکن   وہ   حسینہ   ٹس  سے مس  نہ   ہوئی ۔۔ ہر طرح  کی  ٹرائیاں   مارنے   کے  بعد  میں   نے  خود  سے  انگور   کھٹے  ہیں  کہا ۔۔۔۔۔اور  ایک طرف  ہو کر  سامنے پڑے بینچ پر بیٹھ گیا۔۔۔ جبکہ وہ   میرے  سامنے   بڑی  بے  نیازی   کے  ساتھ   ٹہلتی  رہی ۔۔۔ ۔۔۔ اسی دوران    جب   امجد  اور  نبیلہ کی  میٹنگ ختم  ہوئی  تو  واپسی   پر  میرا   اترا  ہوا   چہرہ  دیکھ کر  امجد  کہنے  لگا ۔۔۔خیریت  تو  ہے   بھائی۔۔۔ آپ اتنے  زیادہ   چُپ  کیوں  ہیں؟  تو   میں نے  جل کر اس کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔ اور  کہنے لگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

…………………………                              جاری ہے…………………………………………