3338

گوری میم صاحب ( پانچویں قسط)

ہوتیں۔۔۔۔ تو   وہ   میرے   ساتھ     بہت میٹھی میٹھی  باتیں کرتیں تھیں ۔ آج  کے  دن    چونکہ    مامی   جی    چھٹی   پر   تھیں   اس   لیئے   وہ   تھوڑا   کھل  کھلا   کے۔۔۔۔  مجھے   اپنا    سیکسی   بدن    دکھا   رہیں تھیں ۔۔ جسے  دیکھ  دیکھ   کر میں   گرم    ہوتا  جا  رہا  تھا ۔۔۔    لیکن     بوجہ    مجبوری    میں    ان  کو    کوئی   رسپانس    نہیں    دے  سکتا    تھا۔۔   اسی  دن   سہہ پہر    کا    واقع     ہے    میں  حسبِ معمول  کیش    کاؤنٹر       پر کھڑا    تھا   جبکہ مسز   نارائن      واش روم  گئیں  تھیں ۔۔۔ وہاں  سے  واپسی     پر   وہ   انہوں     نے    اپنی  دونوں     کہنیاں      کاؤنٹر   پر رکھیں ۔۔
 اور   میرے   ساتھ     گپ شپ   کرنے  لگیں۔۔۔ ۔۔اس   ظالم   نے   اس  قدر  کھلے گلے   والی        شرٹ   پہنی     ہوئی تھی   کہ    میرے    ساتھ          جھک  کر   بات   کرنے  کی  وجہ        سے   مجھے ان  کی   بھاری  بھر  کم     چھاتیاں  ۔۔۔۔  صاف   دکھائی   دے   رہیں تھیں۔۔  ۔۔۔انہیں      دیکھ  دیکھ    میں  نے    بڑی مشکل    خود  پر  قابو    پایا   ہوا  تھا۔۔ لیکن  پھر بھی ۔۔۔ نا چاہتے    ہوئے  بھی     میری   بھوکی   نظریں ۔۔ بار بار  ۔۔۔ ان  کی   آدھ ننگی   چھاتیوں  کی   طرف   اُٹھ    رہیں تھیں۔۔۔  ۔۔۔۔ اور انہیں   دیکھ   دیکھ    کر    میں   پہلے  ہی  بہت  گرم   ہو   رہا  تھا     کہ اتنے    میں   سٹور  کا  دروازہ  کھلا  اور  ایک    گوری میم    اندر    داخل    ہوئی۔  دروازہ   کھلنے   کی   آواز   سن   کر   پلوی جی   نے   پیچھے   مُڑ   کر   دیکھا اور  پھر     جلدی     سے  گھوم  کر   میری   طرف  آ  گئیں ۔۔۔۔۔۔۔۔   دوسری طرف۔۔اس   عورت   کا   لباس  دیکھ    کر  میری   تو    آنکھیں      پھٹی کی پھٹی رہ    گئیں ۔۔  وہ   گوری     میم کہ  جس  کی عمر    اس وقت  40/38    کے قریب     ہو گی   نے   ایک     بہت    ہی    مختصر   سی  پینٹی   نما      نیکر   پہنی  ہوئی تھی   اور   یہ مختصر     سی    نیکر    بمشکل   اس   کی  پھدی  کے  آس پاس   کے   ایریا    کو   کور (ڈھک)  کر  رہی  تھی۔۔۔ جبکہ    اس   کی   گول مٹول       ۔۔۔۔   اور ننگی رانیں دیکھ     کر  میں   تو   حیران     رہ گیا۔۔۔ بلا شبہ  امریکہ  میں آنے  کے   بعد  کسی   بھی    خاتون   کو  ۔۔۔۔۔  اس  قدر  عریاں  لباس    پہنے   ۔۔۔۔۔میں   نے    پہلی   بار  دیکھا    تھا۔   جبکہ اس سے  قبل۔۔۔ ۔۔۔۔ ۔ میرا   خیال  تھا   کہ   مامی    اور    پلوی جی   ہی   بولڈ      لباس  پہنتی    ہیں۔۔۔۔ لیکن  اس  گوری    کا     لباس      دیکھ  کر     مجھے    یہ   دونوں    خواتین    بڑی   پاکیزہ   لگیں۔۔۔ ۔۔دوسری  طرف     گوری   نے  ۔۔ اس  چھوٹی   سی  نیکر  کے  اوپر  ایک   نہایت    باریک ۔۔۔۔ لیکن     تنگ سی  بینان نما   شرٹ  پہنی     ہوئی تھی اور اس  بنیان  نما  شرٹ کے  نیچے   اس  نے   برا     نہیں   پہنی   تھی  جس کی  وجہ  سے   اس  کے  موٹے  موٹے  نپلز   صاف  نظر آ  رہے  تھے  وہ     چلتی  ہوئی    کاؤنٹر  کی طرف    آئی۔۔۔ ۔۔۔اسے  اپنی  طرف  آتے  دیکھ   کر  میں   نے   بڑی   مشکل   کے  ساتھ  اپنی  نظروں  کو  ادھر  ادھر کیا۔۔ کاؤنٹر  پر  آ  کر    وہ   پلوی جی   سے          ہاتھ     ملا    کر    بولی  ہائے   مسز نارائن    ۔۔۔آج   تمہاری   فرینڈ   نظر  نہیں  آ  رہی۔۔  ( واضع    رہے   کہ     وہ   گوری     پلوی جی   کے  ساتھ  انگریزی   میں  باتیں   کر رہی   تھی   ۔۔۔  چونکہ  یہ     سٹوری    اردو   فانٹ    میں  لکھی      جا   رہی     ہے    اس   لیئے   یہاں   پر   میں  صرف   اردو فانٹ    میں   ہی      لکھوں  گا )  ہاں  تو   میں کہہ  رہا  تھا
   مامی   کے   بارے    میں  سوال    سن  کر   ۔۔۔ مسز    نارائن    کہنے  لگیں۔۔۔    اس کی  طبیعت   کچھ   ٹھیک نہیں تھی  اس   لیئے   وہ     چھٹی   پر  ہے  ۔۔ میڈم        کی   بات  سن کر   اس  گوری      نے  افسوس  سے سر ہلایا  اور  پھر     کہنے لگی   جب تم   گھر   جاؤ  گی    تو   اسے   میری   طرف   سے   بھی    پوچھنا ۔۔۔۔ تو    آگے سے میڈم    سر  ہلا  کر بولی  ۔۔۔ شیور ۔۔۔۔ ادھر   سے    فارغ   ہونے  کے   بعد       اس  قاتلہ     نے  میری  طرف  دیکھا اور     بڑی   بے تکلفی  سے  بولی    یہ    ہینڈ سم     کون  ہے؟   تو  پلوی جی  نے  اس  کو  میرے   بارے   بتلایا   کہ   یہ    اس  کا  بھانجا   ہے   پلوی جی   کی   بات   سن    وہ   اسی   بے تکلفی     کے   ساتھ    کہنے لگی
۔۔۔  بہت  ہاٹ   ہے  یہ۔۔۔ یہ       سنتے       ہی   گوری  نے   میری   طرف   ہاتھ         بڑھا    دیا ۔۔ کچھ ہچکچاہٹ   کے   بعد    میں   نے   بھی   اس  کے     ساتھ     ہاتھ   ملایا   ۔۔۔اور  پھر     اس  کے  ساتھ   رسمی سی   بات  چیت  کی   لیکن  بوجہ۔۔۔۔ اس  کی طرف  ڈائیریکٹ    دیکھنے  سے  پرہیز  کیا۔۔۔ اور  اس کی وجہ  یہ تھی کہ  اس کی  شرٹ  اتنی  باریک  ۔۔۔اور    گلے  کی   گہرائی  اتنی   زیادہ تھی  کہ    جس  کی   وجہ   سے   صرف    اس    کے   نپلز  ہی   ڈھکے   ہوئے   تھے  وہ  بھی      صاف     نظر      آ   رہے   تھے۔۔۔۔۔    اس کی  تقریباً   ننگی      چھاتیاں    میرے      جیسے   ٹھرکی   بندے    کی    مت     مار   رہی  تھیں۔۔۔۔ ۔۔۔ اور   اس    کے ساتھ ساتھ   میں   پہلے    ہی   اس   کی   رانوں   کی   گولائی   کو   دیکھ   کر   پریشان    ہو  رہا       تھا  اس   وجہ  میں  اس     کے  رسمی   سوالوں    کا   سر جھکا ئے     جواب    دے  رہا  تھا ۔۔۔  اور    میرے   یوں   نگاہ   نیچ      کیئے   ۔۔۔۔جواب   دینے   کو   وہ     بہت    انجوائے  کر  رہی  ۔۔ گوری   کے  سامنے   یہ صورتِ حال تھی   جبکہ    دوسری   طرف ۔۔۔۔  جبکہ   میرے منع   کرنے  کے  باوجود  بھی   لن صاحب   اپنے   فل  جوبن   میں کھڑے   تھے ۔۔۔ جس کی  وجہ  سے  میری لانگ    نیکر   میں  ایک  ٹینٹ   سا    بن گیا  تھا۔۔۔  ۔۔ اس   دوران   اس   گوری    نے   میری   آنکھوں   میں  آنکھیں  ڈال کر    بات  کرنے  کی  بڑی     کوشش   کی  لیکن   میں   بے چارہ  قسمت   کا    مارا۔۔۔۔۔   پلوی  جی    کے ڈر  سے۔۔۔۔   نگاہ  نیچ     کیئے  ۔۔۔گردن جھکائے    کھڑا     رہا  ۔۔۔۔۔یہ    ماجرا    دیکھ کر   وہ   پلوی جی   کی   طرف   متوجہ   ہوئی ۔۔۔۔اور    ہنستے       ہوئے      کہنے  لگی۔۔۔ یہ  تو  بہت  شائی ( شرمیلا ) ہے  

 تو   پلوی جی    جواب   دیتے   ہوئے   بولیں  ۔۔ ابھی   نیا   نیا    آیا   ہے  نا۔۔۔۔۔   کچھ  دنوں  تک  ٹھیک  ہو  جائے گا۔۔۔  پلوی کی  بات  سن کر وہ  گوری   جو   ان   کے  ساتھ خاصی   بے تکلف لگتی   تھی   مسکراتے     ہوئے   بولی۔۔۔۔ ٹھیک  ہو جائے   گا   یا  تم   اس  کو  ٹھیک   کر  دو  گی؟  تو   آگے  سے    میڈم     بھی  مسکراتے   ہوئے   کہنے   لگی ۔   جسٹ   شٹ اپ ۔۔۔ پلوی میم  کی  بات سن کر   وہ گوری    ہنسنے  لگی۔۔اور       پھر   اس  نے   اپنے    پرس   سے   پیسے نکالے اور  کاؤنٹر   پر رکھتے     ہوئے    بولی  ۔۔۔بئیر  کے پیسے  کاٹ   لو   ۔۔۔تو   پلوی جی   نے   وہ  پیسے  اُٹھا کر   کیش میں ڈالے  اور  باقی  کے پیسے     اسے واپس    کر   دیئے۔۔۔۔۔ پیسے    لے   کر    وہ   گوری  میم    انہی   قدموں    سے   اباؤٹ    ٹرن   ہو    گئی۔جیسے  ہی   وہ     پیچھے   کی  طرف   مڑی ۔۔۔۔ تو   اس    وقت   اچانک   میں   نے   اس    کی  طرف   دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور  پھررررر ۔۔۔دیکھتا  چلا گیا۔۔۔۔۔۔ کیونکہ   اس   میم   سالی    نے  پیچھے     سے    اپنی     نیکر  اس    قدر     نیچے  کر  کے  پہنی   تھی  کہ  جس  کی    وجہ     اس  کی آدھ  ننگی    گانڈ     صاف    نظر    آ   رہی   تھی۔۔۔ بلکہ ٹائیٹ    نیکر   میں   اس  کے   ساتھ   اس  کی    گانڈ     کی   دراڑ      بڑی   واضع     دکھائی    دے   تھی۔ چنانچہ    اس  سیکسی  میم   کی  ۔۔۔۔  دودھ   کی  طرح   سفید۔۔مکھن  کی  طرح  نرم  ، اور      فومی  گانڈ   کو  دیکھ   کر    دوستو!۔۔۔   میں     لُٹا    گیا۔۔۔  ایسی    چٹی   چمڑی     والی   بنڈیں      تو   ہم   نے  آج   تک   صرف    بلیو مویز  میں          ہی    دیکھیں     تھیں  اور ۔۔انہیں      فلموں      میں    دیکھ   دیکھ   کر  بلا مبالغہ    میں  نے   سینکڑوں    دفعہ      مُٹھ    ماری   ہو  گی۔۔   کجا      وہ  فلمیں ۔۔۔۔اور   کجا   یہ     غضب   کی     آدھ ننگی  ۔۔۔  گوری  میم    کی   چٹی    دودھ ۔۔۔اور   ۔۔۔ موٹی    گانڈ   کو   میں   اپنی  آنکھوں  سے    لائیو    دیکھ  رہا  تھا ۔۔۔ چنانچہ   یہ حسین     منظر    دیکھ   کر     میں  بھول گیا  کہ  میرے  ساتھ     پلوی جی   بھی    کھڑی  ہیں ۔۔۔    اس   کی      شاندار    اور     آدھ   ننگی      گانڈ   کو    دیکھ   کر    بے اختیار  میرے  منہ  سے (تحیر    آمیز ) سیٹی  کی  آواز  نکل   گئی   جسے  میرے   خیال   میں     پلوی جی  نے  بھی    سن   لیا  تھا  ۔۔۔  چنانچہ    میرے   منہ   سے  تحیر   آمیز    سیٹی     کی   آواز      سن    کر      انہوں   نے     ایک  دم     چونک   کر  میری  طرف   دیکھا ۔۔۔۔  انہیں  اپنی  طرف   یوں    دیکھتے   دیکھ   کر   مجھے        اپنی   غلطی      کا   شدید     احساس      ہوا۔۔۔۔اور   میں   نے   گھبراہٹ   کے  عالم   میں   ادھر ادھر  دیکھنا   شروع  کر دیا۔۔۔  اور    پھر    چند  سیکنڈ  کے  بعد  ۔۔۔   کن  اکھیوں   سے   ان   کی  طرف  دیکھا      تو    وہ     ابھی    تک      میری  طرف     ہی    دیکھ     رہیں  تھیں۔۔ انہیں    اپنی  طرف  دیکھتا   ۔۔۔دیکھ  کر    میں  نے ۔۔ ۔۔۔ شرمندگی   کے   عالم   میں  اپنا سر جھکا  لیا۔۔۔ ادھر    جیسے  ہی  میں  نے  اپنا  سر   جھکایا۔۔۔۔  تو   بے اختیار    میری نظر یں  اپنے   لن   کی  طرف چلی   گئیں   ۔۔۔  دیکھا   تو   اس   وقت     میری      لانگ نیکر    تنبو    بنی      ہوئی  تھی  ۔۔۔۔۔ اور  پھر     یہ سوچ  کر کہ  کہیں   پلوی جی  کی    نظر     میرے  ۔۔۔ لن   کی         اکڑاہٹ     پر   نہ    پڑ    جائے  میں  نے  جلدی  سے ایک قدم     پیچھے   ہٹا۔۔۔۔اور      اکڑے   ہوئے   لن   کو  اپنی   دونوں     ٹانگوں   کے  بیچ    کیا ۔۔۔اور   ۔ پھر   ٹانگ     کے    آگے    ٹانگ    رکھ   کر    کھڑا     ہو گیا۔۔ ۔۔۔۔۔لیکن    ابھی   عشق     کے  امتحاں   اور    بھی  تھے۔۔۔۔کیونکہ     وہ     گوری  فریج  سے بئیر   کا   ٹن   لے  کر   ایک  بار  پھر     کاؤنٹر    کی طرف  آ گئی۔۔۔ اور   کاؤنٹر   کے  قریب     رکھے     سٹینڈ    سے  چپس  کا  پیکٹ   اُٹھایا۔۔۔      ۔۔۔اور   پھر     دوبارہ     پیسے  نکال کر   پلوی جی  کی  طرف   بڑھا  دیئے۔۔۔پلوی جی  نے   چپس    کے  پیسے   کیش  میں   رکھے     اور     ایک    بار  پھر    وہ   دونوں       باتیں  کرنا     شروع     ہو  گئیں ۔۔۔۔ان  کی   یہ   بات چیت      کوئی  پانچ    چھ  منٹ   تک   چلتی   رہی۔۔۔۔۔۔۔ پھر       اس   گوری میم      نے   پلوی میڈم   کو   بائے  کہتے   ہوئے     ہاتھ  ملایا ۔۔۔اور   ان  سے  ہاتھ  ملانے  کے   بعد  اس   ظالم   نے ۔۔۔ اپنے     ہاتھ   کو   ایک  بار  پھر۔۔۔  میری طرف   ہاتھ   بڑھا   دیا ۔۔۔ جبکہ     اس  وقت   میری   پوزیشن      یہ تھی    کہ     لن  صاحب   ابھی تک   اکڑے       کھڑے   تھے ۔۔۔اور  اس پر ستم  بلائے     ستم  یہ تھا     کہ ۔۔۔۔ میں پلوی    میڈم    کے   خوف سے    کاؤنٹر   سے   ایک  قدم   پیچھے  ۔۔۔۔
 لن  کو   اپنی     دونوں    ٹانگوں   کے   بیچ       پھنسائے (چھپائے)    کھڑا   تھا  ۔۔۔  اور    گوری میم     کے   ساتھ   ہاتھ  ملانے   کے  لیئے  مجھے    ایک  قدم  آگے   بڑھنا   پڑنا   تھا ۔۔۔۔اور    اگر      میں    آگے   بڑھتا     تو   میری   دونوں   ٹانگوں  کے  بیچ     پھنسے     لن  صاحب    نے       آزاد   ہو کر   ۔۔۔۔۔۔۔ باہر نکل  آنا  تھا۔۔۔۔ اصل     ڈر  یہ تھا   کہ اگر     پلومی   جی       مجھے    اس حال     میں  دیکھ  لیا۔۔ تو  جانے  وہ   کیا   سوچیں۔۔۔اور اگر وہ    مائینڈ   کر گئیں  تو؟۔۔ اسی  خوف     کی    وجہ   سے  میں  گوری  سے ہاتھ  نہیں   ملا   رہا   تھا ۔۔۔   چنانچہ  جب    اس میم    نے     میری   طرف    ہاتھ    بڑھایا    تو    میں   بجائے     ہاتھ   بڑھانے کے    وہیں    کھڑے  کھڑے   جاپانی   اسٹائل      میں   اپنا     سر  جھکا  دیا۔۔۔ ۔۔۔  چاہیئے    تو      یہ  تھا  کہ   میرے سر جھکا    کر   جواب  دینے     وہ   قاتل  جاں۔۔۔۔ چلی  جاتی ۔۔۔۔ لیکن   وہ   مجھے    تنگ کرنے   کے موڈ  میں نظر آ  رہی تھی ۔۔ اسی    لیئے  اس  نے    اپنے  ہاتھ  کو پیچھے   نہیں کیا ۔۔۔ بلکہ   میری  طرف دیکھ   کر بولی۔۔  کامان  لٹل بوائے۔۔۔۔۔۔۔۔ دوسری  طرف    مجھے    یوں کھڑے  دیکھ  کر     پلوی جی      سخت     لہجے    میں     بولیں ۔۔۔  کیتھی  میم   سے   ہاتھ  ملاؤ ۔۔۔ پلوی جی  کی  ڈانٹ  سن  کر    چار  و   ناچار  میں آگے  بڑھا ۔۔ میرے  آگے  بڑھنے   کی  دیر تھی   کہ  ۔۔۔ وہی   ہوا  کہ  جس  کا   مجھے     اندیشہ تھا۔۔۔۔ میری    دونوں   ٹانگوں   میں پھنسا۔۔۔۔۔ہوا      لن آذاد    ہو   کر  ۔۔۔باہر   نکل     گیا۔۔۔۔۔  اور   کسی   شیش   ناگ    کی  طرح    پھن   پھیلائے    جھومنے   لگا    ۔۔۔ جس  کی  وجہ   سے   ایک   بار  پھر ۔۔۔۔ میری   لانگ نیکر   کے  آگے    تنبو سا  بن گیا تھا۔۔۔ ۔۔۔چونکہ    میں  روزانہ  نیکر  کے نیچے  انڈر وئیر    پہن کر آتا  تھا اس   لیئے  میں  دل  ہی  دل  میں  خود    کو    کوسنے   لگا   کہ   آج     نیکر     کے    نیچے   انڈروئیر  کیوں  نہیں   پہنا ؟ ۔۔۔  لیکن    چونکہ    مامی کے ساتھ   میرا    بھی    چھٹی  کرنے       کا   فُل     موڈ   تھا   اس  لیئے    صبع   میں     اندڑ وئیر   نہ   پہن  سکا۔۔اور  پھر   مامی  کی   جھاڑ  سن کر ۔۔۔ میں     انڈروئیر پہننے    بغیر    ہی   سٹور پر آ گیا   تھا۔۔اور  یہ   انڈروئیر    نہ   پہننے   کا  شاخسانہ  تھا  کہ۔۔۔۔۔ اس  وقت  میری  نیکر  کے  آگے  ایک    بڑا     سا      ٹینٹ    بنا    ہوا     تھا  ۔۔ادھر  جیسے  ہی   میں  پلوی جی  کے  کہنے  پر ۔۔۔۔   کیتھی میم کے ساتھ    ہاتھ   ملانے کے   لیئے   آگے  بڑھا۔۔۔ ۔۔ ۔۔ تو اس  وقت     پلوی   جی  میری   طرف   ہی    دیکھ    رہیں تھیں۔۔۔۔۔۔۔۔اور     ان  کے  ایکسپریشن       سے   میں نے      اندازہ   لگا   لیا  تھا  کہ     پلوی جی   نے   میرے    لن   کی  
 اکڑاہٹ   کو   دیکھ   لیا   ہے۔    ۔۔۔

گوری  میم   کے ساتھ   ہاتھ  ملانے  کے  فوراً   بعد  میں   واپس    پلٹا ۔۔۔۔اور   پہلے  کی  طرح    لن   کو  اپنی  دونوں  ٹانگوں  کے  بیچ   چھپا   کر ۔۔۔۔اسی   پوزیشن   میں کھڑا   ہوگیا ۔ مجھ  سے   ہاتھ   ملانے  کے بعد وہ   گوری   گانڈ  مٹکاتی  ہوئی   وہاں  سے  چلی  گئی۔۔ ۔اسے  گانڈ   مٹکاتے     دیکھ    دیکھ کر میرا  لن  مزید  اکڑ  گیا۔۔۔۔ ابھی  میں  سوچ  ہی  رہا  تھا  کہ    واش روم    جا   کر  ایک   زبردست  سی  مُٹھ  لگاؤں کہ  ۔۔۔۔  عین  اسی  وقت    پلوی میم   نے  میری   طرف   دیکھا  اور شرارت   سے بولیں ۔۔۔    کیتھی   کیسی     لگی ؟؟     تو    میں  نے  ان  کو   کوئی   جواب  نہیں   دیا    اور سر جھکائے کھڑا   رہا۔۔۔ تب  وہ  زرا   سخت  لہجے   میں  کہنے لگیں ۔۔۔  اے مسٹر  !   میری  بات   کا    جواب دو ۔۔۔تو  میں   جھجھک    کر بولا۔۔۔۔ جی  وہ  اچھی  ہیں ۔۔
میری  بات  سن کر   میڈم   شرارت       سے     بولیں ۔۔ صرف  اچھی  ہیں ؟  تو  میں   نے  ہاں میں سر ہلا  دیا۔۔ تب  وہ   میری    طرف   دیکھتے       ہوئے   کہنے  لگیں ۔۔ سارے    ٹین  ایجر    لڑکوں  کی  طرح   کیا   تمہیں بھی  میچور  لیڈیز  بہت   پسند  ہیں ؟  ان  کے  اس   سوال   پر ۔۔۔  میرے  پاس    جواب دینے   کے     لیئے    بہت   کچھ   تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لیکن    ہائے  ہائے  یہ  مجبوری۔۔۔اس    لیئے     میں  نے   خاموش   رہنے    میں   ہی   اپنی    عافیت    جانی  ۔۔۔ لیکن    جب     انہوں     نے      آنکھیں      نکالتے   ہوئے۔۔۔    دوبارہ   یہی   سوال    کیا    تو    ان    کی   بات    سن   کر    پہلے     تو     میں    ایسے      ہی     ادھر   ادھر   کی     "چولیں "   مارتے     ہوئے     آئیں   بائیں    شائیں   کرتا     رہا  ۔۔۔۔ لیکن    جب   انہوں    نے   سخت     لہجے   میں  یہ کہا   کہ      میں   جو  بات   پوچھوں   اس  کا   سچ سچ   جواب  دو   ورنہ۔۔۔چنانچہ   ان   کی    یہ   دھمکی     کام  کر گئی۔۔۔۔اور   ۔۔۔  میں  نے    اپنا   سر   ہلاتے   ہوئے    ہاں    میں   جواب    دے    دیا۔۔۔ ۔۔ تو     اس     پر      وہ  کہنے  لگیں۔۔۔ ۔ اتنے   بڑ ے سر   کو   ہلاتے   ہو۔۔۔ دو    تولے   کی   زبان    ہلاتے    ہوئے تمہیں   ڈر  لگتا  ہے؟  ۔۔۔اور  پھر    بولیں ۔۔۔۔ اچھا  یہ  بتاؤ    کہ     کیا   کیتھی تمہیں      بہت سیکسی     لگی     تھی ؟  تب  میں  نے   سر   اُٹھا  کر   ان   کی   طرف   دیکھا   اور   بولا   ۔۔۔   ایسی    کوئی    بات  نہیں    ۔۔تو    وہ   قدرے   تیز   لہجے   میں   کہنے  لگیں۔۔۔ ۔۔۔اگر  ایسی   بات  نہیں ۔۔تو   پھر   مسٹر   عدیل   ۔۔۔۔۔ کیتھی   کی   بیک سائیڈ  دیکھتے     ہی    تمہارے   منہ   سے    سیٹی    کی   آواز        کیوں نکلی تھی؟  ۔۔  میڈم   کی   بات  سن  کر میں  گھبرا  گیا ۔۔اور  ان   سے  کہنے  لگا۔۔ وہ  تو   جی۔۔۔ ۔۔پھر  ان  کے    موڈ    کو    دیکھتے  ہوئے بولا۔۔۔ وہ   جی  بس ۔۔۔ بے اختیار   ہی    منہ     سے    نکل   گئی۔۔۔سوری۔۔۔میری    بات   سن  کر   وہ    ہنس    پڑیں     اور  پھر  وہی   سوال   دھراتے      ہوئے بولیں۔۔۔  ۔۔۔ تو    پھر   مجھے   بتاؤ    نا کہ       ۔۔۔ کیا  وہ  تمہیں  بہت  سیکسی     لگی   تھی؟

    تو    میں   نے   جواب   دیتے    ہوئے کہا۔۔۔  اس     بات     کا   تو   مجھے    پتہ  نہیں ۔۔۔۔ لیکن     جی   مجھے   میچور   لیڈیز     بہت   پسند   ہیں   تو   وہ    مجھے   گھورتے  ہوئے   بولی ۔۔اس  کی  کوئی  خاص  وجہ؟   اس   پر   میں   نے    ان  کی  طرف   دیکھا   تو  اس   دفعہ   ان کے  چہرے  پر غصہ   کے   کوئی   آثار     نہ   تھے۔۔۔۔ بلکہ وہ مسکرا  رہیں تھیں ۔۔۔ یہ   دیکھ  کر  مجھے   کچھ  حوصلہ   ہوا ۔۔۔اور  ان  سے  بولا  ۔۔ وجہ  تو  مجھے     معلوم   نہیں۔۔۔۔۔ ۔۔۔ میری  بات  سن  کر  انہوں  نے   بڑی   گہری  نظروں  سے   میری   طرف   دیکھا   اور  پھر۔۔۔سرسراتے     ہوئے  لہجے  میں   بولیں۔۔ ۔۔ میچور  لیڈیز   میں  تو   میں  بھی   آتی  ہوں۔۔۔۔ تو  کیا  تم  مجھے  بھی   پسند  کرتے  ہو ؟  پلوی   جی   کی  یہ  بات  سن   کر  میں  گھبرا   گیا۔۔۔۔ اور  بولا ۔۔۔ہکلاتے      ہوئے بولا۔۔۔۔ وہ جی ۔۔۔وہ جی   ۔۔آپ   بہت  اچھی    ہیں۔۔۔ میری  سن کر وہ  اسی  پراسر ار    لہجے   میں  بولیں۔۔۔۔ کیا۔۔۔ میں  ویسے   ہی     اچھی  ہوں   یا  تم  کو  بھی  اچھی  لگتی ہوں؟   میڈم    کی   اس    بات  پر  میں   نے  چونک  کر  ان  کی طرف  دیکھا ۔۔۔۔۔۔اور  کہنے لگا۔۔۔۔آپ  ۔۔۔۔بہت  اچھی  ہیں ۔۔۔ میری  بات سن کر   انہوں  نے  نشیلی   آنکھوں  سے   میری طرف  دیکھا  اور  کہنے  لگیں ۔۔اچھا    یہ  بتاؤ   کہ  میں  زیادہ   اچھی  لگی  ہوں ۔۔۔ یا۔۔۔۔ کیتھی؟   ان  کی  بات سن   کر   میں  چپ  رہا   ۔(لیکن   دل   ہی  دل میں   کہنے   لگا  کہ   جو    دے     دے     وہی     اچھی     لگے     گی ۔۔۔ لیکن   ڈر  کے  مارے  چُپ   رہا) ۔۔ اسی اثنا    میں    وہ    کاؤنٹر   سے   باہر نکلیں    اور    میرے    سامنے   کھڑے   ہو   کر   بڑے   اسٹائل      سے     بولیں۔۔۔  غور   سے  دیکھ  کر   بتاؤ  کہ   ۔۔۔  تمہیں۔۔۔میں  زیادہ  سیکسی  لگتی    ہوں  یا۔۔کیتھی؟   اس   وقت  میں  نے   پلوی  میم  کی  طرف   دیکھا   تو   ان   کی  آنکھوں   میں ۔۔۔۔  شہوت  کے  سرخ   ڈورے  تیر  رہے   تھے۔۔یہ   سب   دیکھنے    اور ۔۔۔۔  جاننے       کے    باوجود    بھی   میں  نوکری    جانے   کے  خوف   سے    چوتیا    بنا  رہا۔۔۔۔۔ ویسے  بھی   میں اس کشمش  میں  تھا  ۔۔۔۔۔۔۔۔

کہ   اگر    اس  خاتون   کو    یہ  جواب   دیا   کہ  آپ   بہت سیکسی   ہیں ۔۔تو  کیا   پتہ ۔۔  وہ   میری   اس   بات   کا    مطلب  کیا  سمجھے؟  ۔۔ برا سمجھے۔۔۔۔بھلا سمجھے۔۔۔۔۔۔تو   اگر   وہ     بھلا  سمجھے۔  تو   واہ   بھلا۔۔۔۔۔۔لیکن   اگر برا سمجھی   تو   ۔۔۔ استاد   تیری   تو     نوکری  گئی۔۔۔۔۔۔چنانچہ     یہ  سوچ    کر   میں  چپ  ہی    رہا۔۔۔  ۔۔۔میری    یہ  حالت  دیکھ   کر  وہ   ایک  سٹیپ  مزید      آگے   بڑھیں ۔۔۔اور ۔۔۔اور  اپنی  چھاتیوں  کی  طرف   اشارہ  کرتے    ہوئے   بولیں۔۔۔ اچھا   یہ   بتاؤ    ۔۔   کہ  میرے   بریسٹ   زیادہ    بڑے   ہیں   یا  کیتھی  کے؟ ۔۔ اس  پر بھی   میں   کچھ  نہ   بولا  اور ۔۔۔۔ ویسے     ہی   سر جھکائے  کھڑا  رہا۔۔۔ یہ دیکھ  کر  وہ   مزید  آگے  بڑھیں ۔۔۔ اور  میرا  ہاتھ   پکڑ کر  بولیں ۔۔۔  اچھا   ایسا کرو  ۔۔۔۔ کہ  تم     میرے   بریسٹ   کا   ناپ   لے  کر  دیکھو   اور پھر   بتاؤ    کہ    میرے  زیادہ     بڑے   ہیں   یا کیتھی  کے؟   ۔۔۔اس  کے  ساتھ  ہی   انہوں  نے  میرا   ہاتھ   پکڑ   کر   اپنی   چھاتیوں   پر   رکھ   دیا۔


         ان کی  بھاری  چھاتیوں  پر   ہاتھ  پڑتے  ہی   میری   تو   جان   ہی  نکل گئی۔۔۔ اور   میں  ڈر  ۔۔۔یا شاید   جوشِ جزبات  سے  ہولے  ہولے   کانپنا   شروع   ہو  گیا۔۔۔ لیکن  میری  اس   حالت   سے   بے خبر  وہ    میرے  ہاتھ  کو اپنی  چھاتیوں  پر   رگڑتے        ہوئے   بولیں۔۔۔ناپ    کر  بتاؤ  ۔۔۔ میرے  بریسٹ   بڑے   ہیں  نا؟ ۔۔۔ اور  پھر      وہ    میرے    جواب    کا     انتظا ر  کیئے     بغیر    ہی۔۔۔ میرے  ہاتھ  کو    اپنی   شرٹ  کے  اندر  لے  گئیں۔۔۔ ۔۔۔اور    اپنی   ننگی  چھاتیوں   پر   رکھتے   ہوئے   بولیں   اب   بول۔۔ہم  دونوں  میں   سے   کس  کی  چھایتاں   زیادہ   بڑی   ہیں ۔۔۔ یہ  کہتے    ہی  انہوں   نے  مستی   میں آ کر  اپنی چھاتیوں   پر   رکھے  میرے  ہاتھ    کو   اپنی    چھاتی  پر  دبا   دیا۔۔۔اُف۔ف۔ف۔ ان     کی   چھاتی  کہ  جس  پر   میرا   ہاتھ   دھرا تھا ۔۔ اس  قدر  بڑی    اور    شاندار تھی   ۔۔۔کہ    اس    وقت       میرا   جی   چاہ     رہا   تھا   کہ  میں  اسی  وقت   میڈم   کی   شرٹ   کو       پھاڑ   کر۔۔۔۔     ان   کی    مست   چھاتیوں  کو چوسنا   شروع    کر   دوں۔۔لیکن   شدید    خواہش     کے   باوجود   بھی    میں   ایسا   نہ کر سکا ۔۔۔۔۔ چنانچہ    اس کا  رزلٹ    یہ  نکلا۔۔۔ کہ    ۔۔   ڈر  ۔ خوف ۔۔۔ اور   جوش ۔۔  کی  وجہ   سے   میں  باقاعدہ    کانپنا   شروع   ہو   گیا۔۔  ۔۔۔۔ اور    اس   وقت    جانے    کیسے    میرے    منہ    سے      یہ      نکل گیا کہ ۔۔۔  ۔۔۔  پلیززز۔۔۔نن  نا  کریں  آنٹی۔۔۔۔کہ   اگر    اس   بات     کا     مامی   کو   پتہ   چل   گیا   تو   مجھے  بہت  مار  پڑے  گی۔۔۔۔ مامی   کا   ذکر  سن  کر ۔۔۔۔۔ وہ   ناک    چڑھا تے    ہوئے  ناگواری    سے  بولیں۔۔ ۔۔۔ وہ  رنڈی   تو  اس  وقت    بیڈ  پر   پڑی  کھانس     رہی    ہو  گی۔۔۔ اس  لیئے  اس    بات    کی     تم   فکر   نہ کرو ۔۔۔تو اس  پر  میں   مزید    کانپتے   ہوئے   بولا۔۔۔۔۔۔پھر بھی ۔۔۔اگر  ان   کو   پتہ   چل  گیا   تو   وہ   مجھے  یہاں  سے  نکلوا  دیں گی ۔۔۔ میری   بات  سن کر   وہ جل ترنگ    سی  ہنسیں    اور  ۔۔۔اس     کے   بعد۔۔ انہوں نے   دھیرے  سے  میرے       جھکے   ہوئے   سر     کو   اوپر  اُٹھایا۔۔۔

اور  پھر   میری  آنکھوں   میں  آنکھیں  ڈال  کر  بولیں  ۔۔ پہلی   بات  تو   یہ   ہے   کہ   یہ   سٹور   میرا      ۔۔۔اور  میں   اس   کی   مالکن   ہوں۔۔۔ اور دوسری     بات    یہ   ہے  کہ ۔۔۔۔ ۔۔۔۔ یہاں   پر     تم   اور    تمہاری   ممانی     دونوں    میرے  ملازم      ہو۔۔۔ اس    کے  بعد   وہ   کہنے   لگیں    بولو    میں  غلط کہہ   رہی   ہوں  یا  درست۔۔ ؟ تو  میں   نے آگے  سے  ہاں   میں سر ہلا   دیا۔۔۔۔۔۔ تو   وہ   اسی   ٹون   میں    کہنے  لگیں   ایسی    صورت   میں  اگر  سٹور  سے  کسی   کو      نکالنا    ہو    تو    مجھے     بتاؤ ۔۔۔۔ کہ       اس     کا    فیصلہ    مالک    کرے گا   یا   نوکر ؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟۔۔    تو   اس   پر  میں   نے    ۔۔۔ باقاعدہ     کانپتے     ہوئے       جواب   دیا   جی  مالک  نکالے  گا۔۔۔۔۔میری    بات   سن کر انہوں  نے   ایک  گہری   سانس   لی ۔۔۔ اور   پھر  کہنے  لگیں ۔۔ اس لیئے    اب    تم  بے فکر  ہو  جاؤ ۔۔ میں تمہیں   اس  رنڈی   کے   تو      کیا  ۔۔۔ کسی   کے   بھی     کہنے   پر     نہیں  نکالوں  گی ۔۔۔ پھر  میری   طرف   دیکھتے   ہوئے   دھمکی   آمیز    لہجے    میں   بولیں ۔۔۔  ہاں   اگر  تم   نے   میری   بات   نہ   مانی   تو  ۔۔۔۔  میں  تمہیں   نوکری    سے     نکال  سکتی   ہوں   اس    لیئے   جیسا   میں  کہتی  ہوں   چپ چاپ   کر تے   رہو  ورنہ!!!! !!!۔۔

     میڈم     کے   اس  دھمکی    آمیز      ورنہ !! ۔۔۔  نے  حسب ِ معمول        میری   گانڈ   بند  کر  دی تھی  اور   میں     ان   کے   لہجے    سے   ہی    سمجھ گیا  تھا  کہ  اگر  میں  نے   میڈم  کی   بات    نہ   مانی    تو۔۔۔(میرا    کیا  بنے  گا کالیا؟)۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس    سے آگے    میں    کچھ   نہ   سوچ    سکا۔۔۔۔اس  لیئے   میں  نے    دل   ہی  دل    میں    فیصلہ  کر لیا   کہ   جیسے   یہ کہیں  گی   چپ چاپ  کرتا   جاؤں  گا  (اور   ویسے   بھی   تو    وہ   سالی   صرف   میری  عزت    ہی   تو   لوٹنے   کے   چکر  میں تھی۔۔۔جو  کہ   میں  اس جیسی   سیکسی   آنٹیوں    پر      جنم جنم  سے  لُٹانے کو  تیار  بیٹھا   تھا)۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔ دوسری   طرف    شہوت   کے    نشے    میں   چُور  میڈم ۔۔۔  میری  طرف   بڑھتے   بڑھتے   اچانک  رک  گئیں ۔۔۔ ۔۔اور  پھر     بنا   کچھ   کہے     واپس  مُڑیں۔۔۔۔اور   تیز  تیز  قدم  اُٹھاتے  ہوئے  سٹور  کے  مین  گیٹ  کے    پاس  پہنچ    گئیں۔۔۔وہاں   پہنچ    کر  انہوں   نے   سٹور  کو  لاک  کیا  اور   اس   کے  شیشے    پر  لگے    بورڈ    ۔۔" سٹور  کھلا  ہے"  کو    اُلٹا     کر     دیا   جس  پر   " سٹور  بند  ہے"   لکھا  تھا  ۔۔ اس    کے  بعد  انہوں   نے   پردے     کو  شیشے    کے   آگے   کر  دیا ۔۔ جس  کی   وجہ  سے  اب   باہر   سے    اندر      کا   منظر     نہیں   دیکھا    جا  سکتا   تھا ۔۔۔۔   یہ    سب      کرنے     کے  بعد   پلوی جی   واپس   مڑیں۔۔۔ اور   میرے   قریب  پہنچ     کر   ۔۔۔  اسی   شہوت   بھرے  لہجے  میں  بولیں۔۔۔  لو  میں   نے    ڈور  (دروازے)    کو   لاک  کر  دیا   ہے۔۔۔۔ اب  ہم  آرام  سے  پیار کر سکیں  گے۔۔۔ اس    کے   بعد    وہ     مزید   آگے   بڑھیں۔۔۔اور    اپنے   منہ   کو    میرے   کان    کے قریب  لا ئیں ۔۔۔ (اتنے  قریب   کہ   مجھے   اپنے   کانوں   کے آس     پاس    ان  کی  گرم سانسیں  محسوس   ہونے  لگیں)۔۔۔  ۔۔۔

 اور   پھر    سرگوشی  کرتے   ہوئے   بولیں ۔۔۔  میرے   ساتھ    پیار   کرو    گے   نا؟  تو   میں نے   کانپتے   ہوئے   ہاں   کر   دی۔۔  میری   طرف   سے   ہاں   سنتے   ہی    انہوں    نے    اپنی    لمبی  سی   زبان  کو   باہر  نکالا  اور    اسے       میرے  سرخ   ہوتے   ہوئے       گالوں    پر  پھیرتے    ہوئے       بولیں۔۔۔ میرے   ساتھ   سیکس  کرو   گے   نا؟  ۔ ۔تو     اس      پر   بھی       میں   نے  ہاں   میں  سر ہلا  دیا۔۔۔۔ وہ   میرے       ہاں  کا  اشارہ  پا  کر  ۔۔ ۔۔۔۔ ایک  بار   پھر   سے۔۔۔۔ ہونٹوں  ک و  میرے    کان کے قریب   لائیں۔۔۔۔۔اور پھر   بڑے   ہی   سیکسی   لہجے  سرگوشی    کرتے    ہوئے    بولیں۔۔۔۔  تمہیں   پتہ ہے۔۔۔۔میں    کب  سے  ایسا     کرنا    چاہ    رہی تھی ۔۔تو   میں  نے  حیران   ہو کر   ان   سے  پوچھا   کہ    میرے   ساتھ  ؟   تو   آگے   سے   وہ   سرسراتے     ہوئے       لہجے   میں  بولیں     ہاں  تیرے  ساتھ۔۔۔۔۔ اس   کے  بعد   وہ   میرے    سامنے    کھڑی    ہو   گئیں    اور  اپنی   بانہیں   کھول کر    بولی    آ  گلے    لگ   جا۔۔۔ ان  کی   بات   سن  کر    میں   آگے   بڑھا   اور   ان کے   ساتھ   گلے  مل   گیا۔۔۔ میرے   اس    طرح    آگے   ہونے    سے   میرا    لن    آزاد     ہو  کر   جوش  سے   جھومنے     لگا ۔۔لیکن   میں   نے   اس  کی   کوئی     پرواہ   نہیں   کی  ۔۔۔۔۔ چنانچہ      میڈم   سے     گلے   ملتے    ہوئے ۔۔۔۔  لن  صاحب  ۔۔۔۔ ایڈجسٹ     نہ  ہونے   کی     وجہ    سے   ان   کی   نرم     رانوں       پر    دستک     دینے    لگے۔۔۔ ۔۔۔ اپنی  نرم  ران   پر  میرے    سخت   لن کو  محسوس   کرتے   ہی۔۔۔ میڈم     نے    دھیرے   سے   ۔۔۔۔اپنا     ہاتھ    بڑھایا   اور  اسے     پکڑ  کر  ۔۔۔  اپنی    دونوں   ٹانگیں   کھولیں۔۔۔اور  اسے     اپنی    گرم    پھدی ( جو کہ اس وقت خاصی  گیلی  بھی تھی )   کی لکیر   کے  درمیان  فٹ     کر  دیا۔۔۔۔ اوہ۔۔اوہ۔۔۔۔۔اووووووووووووووو۔۔۔۔ ان   کی گیلی    پھدی  کا   لمس        اس    قدر    مست  تھا  ۔۔۔ کہ   میں  بے خود   ہو کر   لن  کو     آگے    پیچھے   کرنے    لگا۔۔۔ یہ   دیکھ   کر   انہوں  نے   اپنی  ٹانگوں   کو   کچھ  مزید کھول  دیا۔۔۔ اور   میرے   دھکوں   کو   خوب   انجوائے   کرنے  لگی۔۔۔ ۔۔۔۔ پھر     اچانک   اپنی  رانوں   کو    بند   کرتے   ہوئے   بولیں۔۔۔۔۔کیا۔۔۔تمہیں   معلوم   ہے کہ     تم  غضب    کے     سیکسی   ہو    ۔۔  اور   پھر    میرے   منہ  کے  ساتھ  اپنے   منہ   کو   جوڑ   دیا۔۔۔۔اور     اپنے  ہونٹوں   کے ساتھ   میرے   ہونٹوں   کو  چومنا   شروع    ہو گئیں۔۔۔۔ان  کے   نرم ہونٹ  جیسے  ہی  میرے  ہونٹوں  کے  ساتھ  ٹکرائے۔۔۔۔۔۔ تو   مجھے  ایک  عجیب   سا  کرنٹ  لگا۔لیکن   اس   کے   ساتھ   ساتھ  مزہ  بھی  بہت آیا۔۔۔۔۔  دوسری   طرف   میرے   ہونٹوں   کو  چومنے  کے بعد  انہوں نے   اپنی  زبان  کو باہر نکالا۔۔۔۔۔۔


 اور  اسے ۔۔۔ میرے   ہونٹوں  پر  پھیرنے لگیں۔۔ ان  کی  زبان   کا  لمس  اس  قدر  ۔۔۔۔۔ ذائقہ   آور   تھا  کہ ۔۔۔ صواد   آ   گیا   بادشاہو۔۔۔۔اور    میں     جو      پہلے        ہی   ڈر۔۔۔۔ یا      شاید ۔۔جوش   کی  وجہ سے    ہلکے ہلکے    کانپ  رہا  تھا۔۔۔۔۔۔ لیکن  پھر    ان   کی    زبان  کا  لمس  پا  کر  ۔۔۔   میں    باقاعدہ   کانپنا    شروع  ہو  گیا۔۔۔۔  مجھے اس  قدر   کانپتا   دیکھ کر   وہ   ایک   لمحے  کے  رکیں  اور ۔۔۔ پھر  میری   طرف   دیکھتے   ہوئے   بولیں ۔۔۔ کیا   ہوا؟   تو  میں    شہوتِ جزبات  سے    کانپتے   ہوئے   بولا۔۔۔ بڑا   مزہ  آ  رہا   ہے۔۔۔ میری   بات   سن کر   وہ  کہنے  لگیں۔۔  یہ تو      ابھی  شروعات   ہے۔۔ میری     جان ۔۔ آگے آگے دیکھ   میں  ۔۔۔۔ تجھے  کتنا     مزہ   دیتی  ہوں ۔۔۔ پھر مجھ  سے کہنے لگیں۔۔۔  اپنی    زبان کو   زرا    باہر  نکالو ۔۔تو  میں  نے  جھٹ    اپنی   ساری   زبان کو   منہ    سے  باہر  نکال  دیا ۔۔۔۔ یہ  منظر دیکھ کر  انہوں  نے  ایک  نظر   میری  طرف   دیکھا   اور   کہنے  لگیں ۔۔۔ شاباش۔۔ اس کے  ساتھ  ہی  انہوں  میری  زبان کو  اپنے  منہ میں  لے   لیا ۔۔اور      مستی   کے عالم  میں اسے  چوسنے   شروع    ہو گئیں۔۔۔ چونکہ   کسی   بھی    خاتون   کے      ساتھ   یہ   میری       پہلی    کسنگ تھی  اس  لیئے    جیسے  ہی  انہوں    نے  اپنی  زبان   کو   میرے   منہ   میں    لے   جا    کر  گھمانا    شروع    کیا۔۔۔۔۔۔۔ تو   ان کے اس  عمل  سے   میں ۔۔   مزے   کے   ساتیوں   آسمان  پر  پہنچ  گیا۔۔۔ اور  اپنی   آنکھیں   بند  کر   کے  زبانوں  کے  ٹکراؤ     کا   مزہ   لینا   لگا۔۔کسنگ  کے   دوران ہی   انہوں   نے   اپنی   پھدی    کی   لکیر   پر  رکھے۔۔۔  لن کو    وہاں   سے   ہٹا    دیا   تھا   اور   کسنگ کے  دوران   ہی  اسے   اپنے    ہاتھ   میں  پکڑ  کر سہلانے لگیں    ۔۔۔۔۔۔  ۔۔۔۔۔۔۔۔ اس   طرح    وہ  کافی  دیر  تک   میرے  ساتھ  ٹنگ    کسنگ کرتی   رہیں ۔۔۔ پھر  کچھ  دیر  بعد  انہوں   نے  میرے  منہ  سے  اپنی   زبان کو    باہر نکالا۔۔۔۔۔  اور   میری طرف     دیکھ   کر   بولیں۔۔ کسنگ   کیسی لگی  ؟  تو   میں  نے    جواب دیا ۔۔۔ مجھے   بہت   مزہ   آیا  ۔۔۔ تب   وہ   میری آنکھوں  میں آنکھیں  ڈال  کر   بولیں۔۔۔۔ اور مزہ  بھی     دوں ۔۔۔ان    کی    بات   سن   کر    میں  نے   اپنی       زبان  کو     منہ  سے  باہر   نکالا ۔۔۔اور    کہنے   لگا۔۔۔۔۔ 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاری ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔