516

گوری میم صاحب  (  چھوتھی قسط) 

[دوسرے  ہی     لمحے     ان   کی   آنکھوں     شعلے      برسنا    شروع      ہو    گئے۔   اور  وہ میری   طرف  بڑھے [( اسی دوران   خوف    کے     باوجود  بھی      میں  نے  پاس  پڑی   ہوئی     نیکر   جلدی   سے   پہن   لی تھی)   ادھر   جیسے  ہی  میں  نے   نیکر   پہنی   اسی   وقت    ماموں   جان     میرے سر   پر پہنچ  گئے ۔۔انہیں یوں    اپنے    سامنے  کھڑا           دیکھ    کر   میں  نے مارے     شرم     کے       اپنا      سر  جھکا  لیا۔۔   یہ      دیکھ       کر     وہ      آگے    بڑھے۔۔۔اور  مجھے     کان سے   پکڑ  لیا۔۔۔۔  اور  بڑے   غصے      میں  بولے۔۔ ۔۔یہ۔ یہ۔۔۔۔   کیا  حرکت   تھی؟؟؟    ماموں  کی  بات  سن  کر  میں   نے   کوئی  جواب  نہیں  دیا   اور   خاموشی      کے   ساتھ   کھڑا       رہا   ۔ ۔۔ ۔مجھے  یوں    خاموش   کھڑا     دیکھ   کر   وہ  گرجدار  آواز   میں    کہنے    لگے  ۔۔ بول حرامی۔یہ   کیا   حرکت تھی ؟  ۔     میں  نے    ان   کے   سامنے   کیا  بولنا  تھا؟؟    کہ   اس     وقت   میری     حالت  یہ  ہو  رہی   تھی   کہ   کاٹو    تو    لہو  نہیں   ۔۔مجھے    چُپ    دیکھ  کر   وہ گرجے۔۔بولدا   کیوں نئیں؟ ( بولتے کیوں نہیں )۔ ۔ تب  میں  نے  ممناتی   ہوئی  آواز   میں   بس   اتنا   کہا ۔۔ مم  ۔۔مجھ    سے غلطی  ہو  گئی  ۔۔سوری  ۔۔ میرے   منہ  سے  سوری  کا  لفظ      نکلنے  کی  دیر تھی کہ   انہوں        نے    مجھے     ایک  زور  دار   تھپڑ   مارا ۔۔۔اور پھر     اس  کے   ساتھ    ہی    ان  کے  منہ  سے  گالیوں   کا  ایک  نہ   رکنے   والا   طوفان    بھی  شروع    ہو  گیا۔۔۔ وہ   کہہ  رہے تھے  کہ   حرامی  ۔۔۔ دلے۔۔۔کتے  کے  بچے   ایسی   حرکت کرتے  ہوئے  تمہیں  زرا    حیا      نہیں   آئی۔۔۔  اتنی   بات  کر  کے  انہوں  نے   مجھے    ایک  اور تھپڑ   جڑ  دیا ۔  پہلے    کی   نسبت     یہ     تھپڑ  اتنا   ذور دار   تھا  کہ    اسے کھا     کر     میرا  چہرہ   دوسری   طرف   گھوم  گیا   اور  درد  کے  مارے  میری   آنکھوں   سے  آنسو  نکل      آئے  ۔  لیکن    ماموں  کو   زرا    بھی   رحم   نہ  آیا  ۔۔چنانچہ     اگلی    دفعہ   انہوں     نے     تھپڑ   مارنے   کے   لیئے۔۔۔۔۔ ابھی      ہاتھ   اُٹھا یا    ہی   تھا   کہ   عین   اسی   وقت   مامی    رحمت    کا    فرشتہ     بن   کر      کمر ے   میں      داخل   ہو  گئیں ۔ اور     ماموں    کی  پوزیشن      دیکھ   کر    وہ       تیزی       سے       آگے   بڑھیں     اور   ان    کا   اُٹھا   ہوا    ہاتھ   پکڑ   کر    بولیں  ۔۔۔ ۔ بچے    کو       کیوں  مار   رہے  ہو؟    ۔۔۔ تو آگے  سے  ماموں    جواب       دیتے     ہوئے  بولے۔۔۔   مجھے   چھوڑو    ندرت!    میں   زرا   اس   حرامی   کی   طبیعت   کو        صاف   کر  لوں  لیکن  مامی  نے    ایسا    کرنے     سے    انکار  کر  دیا   اور  کہنے   لگی  کچھ     شرم کرو    حماد!  یہ   ہمارا   مہمان  اور  ابھی     بچہ  ہے  تو   آگے  سے   ماموں    دھاڑتے   ہوئے  بولے   اس    کتے         کو   تم      بچہ     رہی    ہو؟ یہ   بچہ  نہیں   بلکہ     پکا   حرامی   ہے   اس   پر   مامی  نے    ان      کے        بازو   پکڑا   اور   کہنے   لگی۔    اب   چھوڑو  بھی   دو۔۔۔  اور  میرے  ساتھ  چلو ۔  اتنا     کہتے   ہوئے   مامی   نے   حماد   ماموں   کا   ہاتھ  پکڑ  لیا   اور      انہیں      پکڑ     کر     زبر دستی   ۔۔۔ کمرے   سے    باہر  لے  گئیں۔۔   با امرِ مجبوری  !!!!  ماموں     ان    کے    ساتھ  تو   چل    پڑے   لیکن  جاتے  جاتے     انہوں   نے      قہر  بھری  نظروں  سے  میری   طرف   دیکھا   اور    پھر   مامی  سے    مخاطب    ہوکر    کہنے  لگے   ۔  ویلا         رہ   رہ   کر      اس      کا    دماغ     خراب    ہو   گیا   ہے   ۔۔۔  کل  سے  اس   حرامی   کو   کسی   کام   پر   لگوا   دو  ۔ماموں  کی   بات ختم    ہوتے  ہی   مامی  جلدی      سے     بولیں  ۔۔۔۔ فکر  نہ  کرو    کل  صبع   پلوی جی   واشنگٹن            سے     واپس    آ   رہی  ہے  اور    میں    نے   ان        سے      بات   بھی     کر  لی    ہے   اس  لیئے   جب  تک    یہ  کام  نہیں  سیکھ  لیتا    یہ  ہمارے  ساتھ  ہی  سٹور   پر  جایا    کرے   گا  ۔۔اتنی  بات  کر تے     ہی      مامی   ان   کا   ہاتھ   پکڑ ا      اور انہیں       کمرے     سے  لے کر       باہر نکل گئیں۔


      ماموں کے  جانے  کے بعد  میں  نے   دل   ہی  دل  میں    مامی      کا      شکریہ   ادا   کیا   اور    خود  کو   لعن طن  کرنے   لگا  کہ   مجھے     کمرے  میں کھڑے    ہو   کر  مُٹھ   نہیں   مارنی  چایئے تھی  یا  کم  از   کم    دروازے    کو لاک    کر   لینا  چاہیئے    تھا    لیکن  اب  کیا   ہو  ت ۔۔ جب   چڑیاں    چُگ گئیں  کھیت۔۔۔اس لیئے       جو   ہو گیا   سو  ہو گیا۔۔۔ اس    لیئے   آئیندہ     کے لیئے    مجھے    محتاط  رہنا      پڑے    گا۔   یہ  فیصلہ    کرنے    کے       بعد  اچانک   مجھے   لن   کا  خیال   آیا۔۔۔    یہ  خیال  آتے   ہی       میں   نے       درازے    کو    لاک کیا۔۔۔اور سیدھا    واش  روم میں    چلا     گیا   ۔۔۔نیکر  اتار کر   دیکھا   تو  بے چارہ          سکڑ   کر  چھوہارہ    بن    چکا    تھا    اور  اس   چھوہارے    پر    بہت  سارا     شیمپو    لگا    ہوا   تھا۔۔۔۔جو  کہ    اس     وقت    تک      تقریباً    خشک     ہو   چکا   تھا۔۔ میں   نے ویسے   ہی  ۔۔۔ اس    پر   ایک    دو    ہاتھ     مار    کر      اسے    جگانے    کی    کوشش   کی   ۔۔۔۔۔     لیکن     وہ     بے چارہ       اس   قدر    ڈرا     ہوا    تھا  کہ      کوشش    کے  باوجود    بھی۔۔۔۔اس    میں     زرا   بھی       جنبش  نہ           ہوئی   ۔۔ لن صاحب      کی       یہ    حالت       دیکھ کر      میں   نے   بڑی  شرافت   کے  ساتھ  اسے    دھویا   اور     پھر    پیشاب     کر نے            کے     بعد     واپس      کمرے     میں   آ  کر    لیٹ    گیا     اور        آج     کے       حادثے  کے  بارے  میں  سوچنے   لگا   اور   پھر   اس   نتیجے   پر   پہنچا   کہ   مجھے   اگلے     کچھ     دن   ماموں   کا   سامنا   نہیں کرنا   چاہیئے۔۔۔اسی     دوران       اچانک    مجھے   پلوی جی   کا    خیال      آ  گیا     اور    میں     ماموں    کو          چھوڑ        ان      کے  بارے   میں  سوچنے   لگا۔  کہ    آخر    یہ  محترمہ   ہیں   کون ؟  پھر      انہیں    سوچوں     میں  گمُ  ۔۔۔۔۔مجھے  نہیں   معلو م کہ     میں    کس   وقت    نیند   کی   آغوش     میں   چلا    گیا ۔

 اگلے  دن     سویرے     ہی    میری  آنکھ  کھل   گئی۔۔۔ لیکن  جاگنے    کے    باوجود     بھی ۔۔۔  ماموں  کے  خوف  سے  میں      بستر   میں    ہی  دبکا  رہا   ۔۔  کافی     دیر  بعد  مامی  کمرے   میں   داخل   ہوئی   اور   مجھے        جاگتا   دیکھ  کر  ہنسیں   ۔۔۔اور پھر    کہنے     لگی  ۔۔اُٹھ   جاؤ   دوست      کہ   ۔۔۔۔ خطرہ  ٹل  گیا    ہے ۔۔ مامی     کی   بات  سن کر   میں   نے لٹیے لیٹے      ہی    ان   سے  پوچھا ۔۔۔ ماموں  کب   گئے؟    تو   وہ   مسکراتے   ہوئے    بولیں۔۔۔۔ ابھی ابھی       نیچے   اترے   ہیں  پھر   ایک   دم    سیریس     ہوتے     ہوئے    بولیں  ۔۔اوئے     گھامڑ  انسان !۔۔۔ تم  دروازے     کو    لاک      نہیں کر        سکتے   تھے  کیا  ؟      تو   آگے   سے   میں  کھسیانی   ہنسی    ہنس کر  بولا۔۔۔ اپنی  طرف   سے   تو  میں  نے     کنڈی     لگائی     ہوئی  تھی۔۔۔  میری  بات  سن   کر    وہ   ایک   بار   پھر    سے    مسکرائیں   اور    پھر     کہنے  لگیں۔۔ شکر کرو    کہ     میں     عین    وقت    پر      پہنچ     گئی ۔۔۔۔     ورنہ  رات   تمہاری   خیر نہیں تھی۔۔ اس   پر   میں   ان   کا    شکریہ   ادا    کرتے    ہوئے    بولا۔۔ ایک    سمجھ  نہیں   آئی  ۔۔۔۔ا۔ور     وہ   یہ کہ   ماموں      کی   تو  نائیٹ تھی۔۔   پھر    وہ     کیسے   آ  گئے ؟    میری   بات  سن   کر   مامی   کہنے  لگیں  تم   ٹھیک  کہہ   رہے   ہو  عام  طور  پر   وہ   ایسا   ہی  کرتے   ہیں   لیکن   گزشتہ     رات   ان    کی    طبیعت    بہت   خراب تھی    اس   لیئے   وہ   چھٹی   لے   کر   گھر آ   گئے  تھے۔۔۔۔   اس   پر   میں    چونک  کر بولا ۔۔۔ لیکن     میرے   حساب سے   تو     وہ   بھلے  چنگے  تھے؟   تو  اس    پر      وہ  کہنے  لگیں    اصل   میں   تمہارے   ماموں ہائی  بلڈ پریشر   کے   مریض   ہیں   اور رات  جو   وہ    اتنا    چیخ   چلا    رہے   تھے   اس   کی   بھی   یہی   وجہ تھی   کہ   اس   وقت  ان   کا   بلڈپریشر  بہت   ہائی  تھا  اتنی   بات   کرنے    کے      بعد     وہ   میری     طرف       دیکھتے     ہوئے       کہنے  لگیں  ۔  ۔۔۔ میں  تمہارا     ناشتہ   ریڈی   کرتی     ہوں  ۔۔۔۔ اتنی   دیر   میں  ۔۔۔ تم  جلدی    سے    تیار   ہو  جاؤ ۔ ۔  ۔۔  پھر کہنے  لگیں ۔۔۔۔آج    تمہارا       کام   پر     پہلا   دن  ہو گا   لیکن  اس  سے  پہلے   ہم   نے   پلوی میم  کو  بھی   ائیر پورٹ   سے   لانا    ہو گا۔ تو  میں  نے  ان   سے   کہا  کہ    مامی جی   یہ   پلوی  میم   کون   ہیں؟  میری     بات   سن    کر   وہ     دروازے    کی    طرف    جاتے     ہوئے     واپس     پلٹیں        اور    میرے  پاس  آ کر   بیٹھ  گئیں۔۔  اور   شرارت آمیز       لہجے     میں     کہنے  لگیں۔۔۔ یہ     محترمہ  نارائن  صاحب   کی    بیوی   ہیں   جو  کہ   اپنے    والد ین  سے  ملنے    واشنگٹن   گئی    ہوئیں  تھیں۔۔  اتنی  بات  کرتے  ہی  وہ  پلنگ   سے      اُٹھ   گئیں۔۔  اور جاتے   ہوئے    کہنے  لگیں ۔۔۔ ہری اپ  یار ۔۔۔ پلوی  جی  کے  آنے   میں   کچھ   ہی   دیر   باقی   ہے ۔    مامی  کے جانے   کے  بعد  ۔۔۔۔   میں  نے   بستر    سے   چھلانگ   لگائی    اور    واش  روم   میں   گھس   گیا۔

                   پوچھا کہ  اک   بات   تو    بتائیں   تو    وہ   گاڑی کو  گئیر میں    لگاتے  ہوئے   کہنے  لگیں   ہاں  بولو۔۔تو  اس   پر         میں  ان   کی  طرف   دیکھتے    ہوئے   بولا۔۔۔   پلوی جی  کو  لینے   کے  لیئے  آپ  کیوں   جا    رہیں  ہیں؟   نارائن صاحب     خود  کیوں نہیں   گئے؟        میری  بات سن کر   گاڑی  چلاتے  ہوئے  مامی  نے ایک  نظر  میری  طرف  دیکھا اور  کہنے لگیں  وہ  اس لیئے  چندا  کہ  آج   نارائن صاحب   کی  ۔۔۔۔۔   پہلے   سے  طے  شدہ    ایک بہت ارجنٹ  میٹنگ  تھی۔  تو  میں  نے  ان  سے  کہا  کہ  انہیں  پتہ   نہیں   تھا   کہ   آج   ان   کی وائف  آنے  والی  ہے ؟ تو  مامی     جواب  دیتے    ہوئے   بولیں۔۔۔   پروگرام  کے  مطابق  تو   پلوی جی  نے   پرسوں  آنا  تھا  لیکن   چونکہ   ان  کے   فادر  کی   طبیعت    ٹھیک   ہو  گئی تھی   اس   لیئے  وہ  پرسوں  کی   بجائے   آج   ہی    واپس   آ رہی   ہیں۔۔    پھر  میری      طرف  دیکھتے     ہوئے      کہنے لگیں  کہ  اگر   وہ اپنے  پروگرام  کے  مطابق  آتیں   تو   یقیناً انہیں   نارائن   نے   ہی   لینا   تھا۔ اس  طرح   آپس   میں     چِٹ چیٹ    کرتے  ہوئے  ہم  جے  ایف   کے   ائیرپورٹ[/color] پہنچ   گئے۔    ہمارے      پہنچنے      کے     کچھ   ہی   دیر   بعد    پلوی جی  کی    فلائیٹ     بھی       آ  گئی  تھی   اور  پھر    اگلے     آدھے    گھنٹے    میں       جیسے  ہی   سوٹ کیس کو کھینچتی   ہوئی  ایک   ساڑھی    والی        عورت   ارئیول         سے      باہر  نکلی   تو   اسے  دیکھتے   ہی    مامی  نے  مجھے   ٹہوکا      دیا  ۔۔۔۔۔۔اور    پھر      ہاتھ   ہلاتے  ہوئے  اونچی   آواز   میں   بولیں   ہائے   پلوی۔۔۔ ادھر   مامی   کی   آواز   سن   کر   اس  ساڑھی   والی    عورت       نے  بھی        ہاتھ   ہلا   دیا   ۔۔۔مامی   کے   اشارے   کے   بعد  میں  بھی   اس  عورت    کی  طرف  دیکھنے    لگا       کہ جس نے     پنک   کلر  کی  سلیو لیس   ساڑھی پہنی   ہوئی   تھی  وہ    ایک   مناسب   قد و قامت   والی     گریس فل    خاتون تھیں   جن کے   شولڈر کٹ  سلکی   بال  تھے  اور   وہ  قدرے  موٹی  تھیں   لیکن  یہ موٹاپہ   ان    پر  بہت        سوٹ کر   رہا تھا   ان  کے  جسم   پر  سب  سے  نمایاں   چیز   ان  کی     بہت       بڑی            چھاتیاں  تھیں  اور   ان  کا   deep neck blouse  اتنا   زیادہ   ڈیپ  تھا  کہ   جس  کی    وجہ  سے  ان   کی  آدھی   چھاتیاں   باہر  کو نکلی  ہوئیں تھیں۔۔۔ ایک  دیسی    عورت    کی   اتنی   بھاری   اور    آدھ  ننگی   چھاتیاں   دیکھ  کر میں تو  دنگ  رہ گیا۔۔۔۔اس   کے  ساتھ  ساتھ    میں   نے     ایک اور    بات   نوٹ  کی تھی     اور    وہ    یہ  کہ انہوں  نے کچھ   اس   ڈھنگ  سے ساڑھی  باندھی  ہوئی  تھی  کہ   جس    کی   وجہ       سے     ان  کی  ناف  والا     حصہ بلکل    ننگا     تھا ۔۔۔   ان    کی   ناف   کا   گڑھا    خاصہ    بڑا      اور گہرا   تھا       اور    اس    گڑھے      میں     انہوں   نے   ایک چمک دار   سا   موتی    پھنسا یا    ہوا   تھا   جو دور    سے  کافی     چمک      رہا   تھا      میرے   اندازے   کے  مطابق    پلوی جی   کی   اس   وقت   عمر   کوئی    35/  34   سال     ہو گی   لیکن     دیکھنے   میں وہ  سالی  بہت   ہی   قیامت   لگ    رہیں  تھیں۔
     ہاں  تو  میں  کہہ  رہا   تھا  کہ  مامی  کے   ہاتھ  ہلانے  کے   بعد   پلوی جی   سیدھی   مامی        کی طرف بڑھیں ۔۔۔۔اور    ان   کے  ساتھ     راویتی   طریقے   سے   گلے   ملیں ۔۔۔  مامی  سے  ملنے  کے  بعد۔۔۔۔ انہوں  نے  بڑی   دل چسپ   نظروں  سے      میری  طرف  دیکھا   اور   بڑی   ہی   ذو  معنی  الفاظ  میں  مامی  سے   بولیں  کہ اچھا  تو  یہ  ہے  وہ    چکنا ۔۔۔  جس  کا    تم  اکثر      ذکر  کرتی   رہتی  ہو۔۔۔۔ ۔۔۔ تو   اس  پر   مامی    سر ہلا    دیا۔۔۔اور    پھر      اس   سے کہنے  لگیں۔۔۔ اچھا  یہ   بتا  کہ  تیرے  ڈیڈ  کیسے  ہیں ؟  تو  وہ   کہنے  لگیں    شکر  ہے  یار ۔۔۔ وہ   ایک   دم فسٹ   کلاس    اور بھلے    چنگے      ہیں ۔۔ پھر   اپنی   بات کو   جاری   رکھتے   ہوئے    بولیں۔۔۔۔ اسی  لیئے  تو  میں  تیرے  پاس  وقت  سے پہلے آ گئی۔۔۔ اتنا  کہنے  کے  بعد۔۔۔۔۔   پلوی جی  نے      اپنا   سندر   سا   ہاتھ  میری طرف  بڑھایا۔۔۔اور      کہنے  لگیں۔۔ ہائے ڈئیر!   کیسے   ہو   آپ   ؟   ان     کے   ہاتھ   کو     اپنی   طرف   بڑھا    دیکھ  کر   پہلے      تو     میں    تھوڑا         گھبرا یا۔۔۔۔   لیکن   پھر   میں   نے  بھی     ہچکچاتے   ہوئے   اپنا   ہاتھ   ان  کی طرف   بڑھا  دیا انہوں  نے   میرے  ہاتھ کو  اپنے   ہاتھ  میں پکڑ ا   ۔۔۔۔اور  بڑی گرم   جوشی   کے ساتھ  اسے   دباتے ہوئے  بولیں۔۔۔     بھگوان     کا شکر  ہے کہ اپنے   علاقے   کی  بھی   کوئی  دیسی  بوائے    نظر   آیا۔۔۔ اور  پھر    مامی   کی   طرف   دیکھتے    ہوئے کہنے    لگیں    ورنہ     تو       یہاں  کے      ککے۔۔۔بھورے      باندر   ٹائپ   کے   لڑکے    دیکھ  دیکھ   کر   میں   تو    بور   ہو  گئی تھی ۔۔مامی  کے  ساتھ   باتیں   کرتے ہوئے     وہ      میرے   ہاتھ  کو   کافی   دیر   تک   ہلاتی   رہیں   اور   پھر  مجھ    سے   مخاطب   ہو   کر بولیں۔۔۔ ویلکم    ٹو   امریکہ۔۔  مجھ     سے       ہاتھ      ملانے    کے  بعد۔۔۔۔  مامی    اور    وہ      آپس      میں     باتیں کرتی ہوئیں    پاکنگ  تک   آگئیں۔۔۔   یہاں     آ     کر     مامی  نے  جلدی   سے   کار   کی   ڈگی   کھولی  اور  پھر ان  کے   سوٹ کیس  کو   ڈگی  میں  رکھ   کر  چل   پڑیں۔۔۔۔ راستے   بھر    میں ۔۔۔۔۔ حرام  ہے    جو   ایک  منٹ    کے  لیئے   بھی   ان   دونوں کی   زبان   رکی     ہو۔ وہ    بڑی    محو    ہو      کر      باتیں   کر   رہیں تھیں  جبکہ   میری نظریں پلوی    جی   کی   بڑی  بڑی   چھاتیوں    پر گڑی   ہوئیں تھیں   جو کہ    سلیو   لیس     ساڑھی  ہونے کی وجہ سے۔۔۔۔  سائیڈ پوز    سے    بہت  زیادہ      شہوت  انگیز      لگ   رہیں  تھیں۔ ۔۔۔   گھر کے سامنے  والی   سڑک    پر   پہنچ  کر مامی  نے   گاڑی   روک   لی۔گاڑی    سے   اترتے      ہوئے     پلوی جی      
     
     مامی  سے  کہنے  لگیں۔۔۔۔۔ تم      لوگ   سٹور   پہنچو    میں   تھوڑا   ریسٹ  کرنے  کے  بعد  تم   کو  جوائن   کرتی   ہوں۔۔۔

                       اتنی   بات  کرنے   کے  بعد    پلوی جی   نے ۔۔۔۔  ڈگی سے اپنا    ویلر          نکالا   اور    گھر  کے  اندر   چلی گئیں۔۔۔۔ ان کے  جانے کے بعد   مامی نے  گاڑی اسٹارٹ  کی  اور   میری طرف  دیکھتے   ہوئے   کہنے   لگیں ۔ بری بات۔۔۔  پھر    اپنے   لہجے   پر   تھوڑا    زور     دے  کر بولیں۔۔۔۔۔اوئے  مجنوں  کی  اولاد!   اپنی نظروں   پر کنٹرول   کرنا   سیکھو  تو    اس    پر     میں  نے   معصوم   بنتے     ہوئے   کہا  ۔۔   کہ     میں   نے ایسا      کیا کر    دیا      ہے؟      تو   وہ مسکراتے   ہوئے   بولیں۔۔میں   نے  نوٹ  کیا   ہے  کہ   تم نے  ایک  منٹ  کے  لیئے  بھی  اپنی  بھوکی  نظروں    کو     ان   کے جسم   سے نہیں   ہٹایا۔۔۔۔ان    کی     بات    سن  کر میں شرمندگی  سے      بولا۔۔۔  آئی ایم سوری  مامی جی !   لیکن  میں کیا کروں  مجھ   سے  ایسا  ہو  جاتا  ہے    میری  بات  سن کر   مامی  کھلکھلا کر   ہنس   پڑیں۔۔   اور    پھر   میری   طرف    دیکھ  کر   بڑے  ہی  پر اسرار     لہجے   میں   کہنے  لگیں۔۔ ویسے   ایک  بات  کہوں؟   اور    وہ      یہ    کہ     تمہاری     بھوکی  نظروں کو   پلوی جی  بھی      انجوائے  کر   رہیں تھیں ۔۔۔   اس   کے  ساتھ   ہی    انہوں    نے     ایک    خاص    نظر     سے    میری     طرف  دیکھا    اور    پھر کہنے  لگیں ۔۔۔میرے   خیال    میں  ۔۔۔۔ تم   انہیں    کافی   پسند   آئے   ہو۔۔۔ لیکن    اس   کے   ساتھ  ساتھ   میں تمہیں   خبردار   کر   رہی  ہوں  کہ  کسی    خوش  فہمی    میں   ہر گز      نہ   رہنا ۔۔۔ ورنہ   تم   نوکری  سے   بھی  جا    سکتے   ہو۔۔۔۔۔ اس  کے   بعد   وہ   میری   طرف    دیکھتے    ہوئے  مزید   کہنے  لگیں۔۔۔۔۔ ہاں   ایک  اور   بات    اور   وہ   یہ  کہ۔۔۔۔۔۔  اپنی   نظروں    پر  کنٹرول  کرنا    سیکھو۔۔۔۔ پھر   مجھے   چھیڑے     ہوئے  بولیں۔۔۔ توبہ توبہ۔۔۔ تم    پلوی   کی  طرف   ایسی    نظروں     سے    دیکھ  رہے  تھے  کہ  جیسے تم     نے     زندگی    میں   پہلی   دفعہ   کوئی   عورت   دیکھی    ہو۔۔۔     ان   کی   بات    سن  کر   میں   دل  ہی  دل    میں    بولا۔۔کہ     آپ    کو   تو   معلوم   ہی  ہے کہ     پاکستان    میں  تو   ہم    لوگ     برقعے    والی     خاتون   کو  بھی    تاڑنے    سے   باز   نہیں   آتے  ۔۔۔۔  جبکہ     پلوی جی    تو    پھر   بھی   آدھ ننگی تھیں۔۔۔ لیکن    اس   کے   بر عکس  میں   ان    کی   طرف   دیکھتے   ہوئے    بولا ۔۔ جی    میں   پوری کوشش کروں گا ۔

  اس  کے   بعد   گاڑی    میں  ایک   دم   سے     خاموشی     چھا   گئی۔ لیکن  یہ  خاموشی   زیادہ    دیر   تک       برقرار   نہ  رہی۔ اور  گاڑی  چلاتے  ہوئے  مامی  کہنے  لگیں  دیکھو   عدیل۔ اب  جبکہ تم      یہاں    پر   جاب  شروع   کرنے  لگے  ہو ۔۔ تو   میں تم      سے   ایک   نہایت     ضروری    بات    کرنا     چاہتی    ہوں۔   مامی    کی  بات  سن  کر  میں چونک  گیا   اور  ان  سے  کہنے  لگا۔۔۔   جی  آپ حکم کریں   ؟     تو   وہ     سڑک   کی   طرف    دیکھتے   ہوئے   بولیں ۔۔ دیکھو  تم   نئے نئے    امریکہ  میں   آئے  ۔ ۔  اور    اوپر    سے   تم        جاب  بھی    ایسی کرنے  والے   ہو  کہ     جس  میں  مردوں  کے    ساتھ ساتھ      خواتین   کے   ساتھ   بھی     تمہارا     واسطہ   پڑے  گا   ۔اس  سلسلہ   میں    میری  ایک  نصیحت     اپنے پلے    سے   باندھ  لو ۔۔۔اور    وہ    یہ کہ   جیسا   کہ   تم  جانتے  ہو کہ  پاکستان   کی  نسبت  یہاں  کا   ماحول    کافی  کھلا   ڈھلا  ہے  تو  اسی  حساب   سے  یہاں کی خواتین بھی   کافی  بولڈ   ہیں  اور جیسا   دل  کرتا   ہے    لباس پہنتی   ہیں   پاکستان    کے  برعکس    یہاں    کوئی  بھی   شخص      کسی  کے    پرسنل   معاملہ   میں   دخل  اندازی   نہیں    کر  سکتا  ۔۔اسی     لیئے   یہاں   کی     بعض   خواتین  بہت زیادہ     بولڈ    لباس   پہنتی ۔۔۔۔اور    مردوں  کے  ساتھ    آزادانہ  اور   فری     ہو کر    بات  چیت   کرتیں  ہیں  چنانچہ     اگر   کوئی    خاتون   تمہارے   ساتھ     اس   طرح    بات   کرے    تو     اس    کا    ہرگز         یہ    مطلب    نہ   لینا   کہ  وہ  کرپٹ      یا        پاکستانی    لڑکوں  کے   مطابق    تمہارے   ساتھ   سیٹ       ہو     گئی ہے۔۔۔۔ ایسی     بات     نہیں ۔۔۔۔۔بلکہ   یہاں  کا  ماحول  ہی   ایسا  ہے  اس  لیئے  میرے  پیارے  بھانجھے   اس   سلسلہ میں  محتاط   رہنا   اور   جب  بھی  اس قسم   کی   خاتون   کے ساتھ  تمہارا   واسطہ   پڑے   تو  میری  نصیحت    کو  ضرور   مدنظر  رکھنا۔ ورنہ   ہو  سکتا   ہے  کہ   تمہاری    پیش قدمی     کو   دیکھتے    ہوئے   وہ   پولیس   کو     کال کر   دے  ۔۔ اتنی          بات       کر   کے  انہوں    نے    میری  طرف   دیکھا اور  کہنے   گلیں۔۔۔  میری   بات کو    سمجھ   گئے   ہو    نا  ؟    (پولیس       کا   ذکر   سن   کر   ویسے    ہی   میری   گانڈ    پھٹ  گئی تھی)۔۔۔ اس  لیئے   میں    بڑی  سعادت مندی   سے   جواب   دیتے    ہوئے   بولا۔۔۔۔  ۔ جی مامی   جی    نہ صرف    یہ     کہ   میں  آپ   کی   بات  کو   پوری    طرح    سے    سمجھ   گیا    ہوں    بلکہ     میں    آپ     سے   وعدہ کرتا   ہوں     کہ   ہمیشہ اس  پر    عمل  بھی   کروں   گا  ۔۔۔۔ اس   کے  بعد       ہم     ادھر   ادھر   کی  باتیں  کرنے  لگے۔۔۔۔۔اور   پھر    باتوں   باتوں    میں   ۔۔۔ میں  نے  ان  سے  پوچھ   لیا۔۔۔۔      کہ   پلوی جی  انڈیا  میں  کہاں   رہتین ہیں ؟     تو   مامی  جواب       دیتے   ہوئے     کہنے  لگیں     ویسے    تو        ان    کے آبا  و   اجداد    انڈین  کشمیر ی    ہیں ۔۔۔ لیکن   پھر  تلاش ِ   روزگار  کی میں  یہ لوگ     دہلی   چلے    آئے  اور  پھر   وہیں   کے  ہو   رہے۔ ۔۔۔اور    گزشتہ    کچھ   عرصہ    سے       یہ  

لوگ   امریکہ  میں   شفٹ   ہو   گئے   ہیں  ۔۔
     گھر  سے   پندرہ  بیس  منٹ  کی  مسافت  پر  سٹور    واقع   تھا ۔  یہ          ڈیپارٹ مینٹل    سٹور   دوسروں        کے   مقابلے    میں   یہ  سٹور  اتنا   بڑا    تو      نہ   تھا ۔۔۔۔لیکن  پھر  بھی    اس   میں  ضرورت   کی   ہر  شے  دستیاب تھی  ۔ اس  سٹور  کی  خاص  بات  یہ تھی  کہ  اس  میں  انڈین مصالحہ جات   ا ور  خاص   کر   چاول   باقی    سٹوروں  کی  نسبت     بہت   ارزاں     ملتے  تھے۔۔اسی  لیئے    اس سٹور       پر     دیسی     لوگوں  کی آمد و رفت   زیادہ   رہتی  تھی۔۔۔   وہاں  پہنچ  کر   مامی  نے  سٹور   کھولا ۔۔۔اور    پھر     مجھے  اپنے  ساتھ کیش  والے     کاؤنٹر  پر   یہ   کہتے    ہوئے  کھڑا        کر    دیا    کہ ۔۔۔  مجھے  واچ  کرو۔۔۔ اور    جو بات  سمجھ  میں   نہ آئے   پوچھ  لینا۔۔اور     میں    مامی    کے  ساتھ  کاؤنٹر      پر    کھڑ  ا     ہو  گیا      یوں        وہاں   پر    میری   ٹرینگ     کا   آغاز   ہو  گیا ۔    سب سے  پہلے  مامی   نے   مجھے  سارے     سٹور    کا  وزٹ  کرایا ۔۔۔۔ اورسمجھایا    کہ   کون سی چیز   کس   شیلف میں رکھنی    ہوتی ہے ۔۔۔۔ اس  بعد انہوں  نے    کاؤنٹر     پر    پڑے  ہوئے ۔۔۔  بار  کوڈ    ریڈر    کے    حوالے  سے بھی  ایک  چھوٹا   سا  لیکچر     دیا ۔۔۔اسی   دوران   سٹور   پر   کچھ    گاہک  بھی  آئے      ۔جن    کے  ساتھ   مامی   نے   ڈیلنگ   کی  اور   میں  یہ  سب   بڑے  غور  سے   دیکھتا   رہا۔۔۔      تین   چار  گھنٹوں     کے  بعد    پلوی جی  بھی   سٹور  پر آ گئیں  اس  وقت  انہوں  نے    ٹائیٹس  کے  اوپر  ایک  چھوٹی  سی  شرٹ   پہنی  ہوئی  تھی۔ اور   یہ شرٹ  بھی  ان  کی    ناف  کے  اوپر  تک تھی  ۔۔  اس  لباس  میں   بھی    وہ  بہت سیکسی  لگ  رہیں تھیں  خاص  کر   ان  کی باہر    کو    نکلی  ہوئی۔۔۔۔  موٹی   گانڈ  دیکھ  کر  میرے  لن  میں  کچھ  کچھ   ہونے  لگا  تھا۔۔  لیکن   میں  بے چارہ  قسمت  کا   مارا  ۔۔۔ کر بھی    تو       کچھ نہ   سکتا  تھا   ہاں  ایک  بات تھی   جو   کہ  میرے   بس  میں تھی اور  وہ   یہ  کہ   آج  کی   مُٹھ  مسز پلوی     کے   نام  پکی تھی۔  چھٹی  سے  کچھ  دیر   پہلے  کی  بات  ہے  کہ       اس  وقت   مامی   واش    روم   گئی   ہوئی   تھی    میں   حسب ِ معمول     کاؤنٹر  کے  پاس    کھڑا    تھا  کہ    اچانک    پلوی جی       بڑی    تیزی   کے   ساتھ   کاؤنٹر    کی  طرف    بڑھیں۔۔ انہیں  آتا     دیکھ   کر   میں  نے   اپنی  جگہ  سے   ہٹنے   کی کوشش  کی   تو  وہ  کہنے  لگیں   تم  وہیں    کھڑے   رہو۔ پھر     میرے    پاس   کھڑے    ہو  کر   انہوں  نے  جھک   کر  کاؤنٹر    کی  دراز   کھولی  ۔اُف۔ف۔ف  ۔۔۔۔۔ان کی      بنیان    نما  شرٹ    کافی   اوپر   تک    ہونے   کی    وجہ     سے        ان    کی    گانڈ    کا   کریک     بڑا    ہی     صاف    اور   واضع     نظر  آ   رہا   تھا۔۔  جسے   دیکھ    کر        میرا    سانس    رکنے   لگا    تھا ۔۔۔۔۔۔دوسری   طرف   ان   کی        موٹی     گانڈ       کو       دیکھ   کر    میرا    لن    بھی     کھڑا     ہو نے  کے  لیئے  بے قرار   تھا   کیونکہ    ان  کے اس  طرح      جھک    کر  دراز   کھولنے    کی  وجہ   سے۔۔ ان   کی  موٹی     گانڈ   کچھ اور    بھی     نمایاں   ہو گئی۔۔۔جسے   نا  چاہتے   ہوئے  بھی   میں   بار بار   دیکھتا  جا  رہا  تھا  ۔۔۔۔ ۔ ۔۔۔ اس  بڑی   سی     دراز      کے  اندر         ہاتھ    مارتے     ہوئے     اچانک    ہی    پلوی  میڈم      کچھ    اس    زاویہ   سے       پیچھے  ہٹیں۔ کہ  جس  کی  وجہ   سے   ایک لحظے      کے     لیئے۔۔۔۔ان  کی  موٹی    گانڈ  میری   لیفٹ  والی   ران     کے    ساتھ     ٹچ   ہو  گئی۔۔ جیسے   ہی   مسز نارائن   کی   نرم  گانڈ     نے     میری   لیفٹ   تھائی   کو   چھوا۔ تو        ایک   دم   سے میں       چونک   اُٹھا۔۔۔
ان   کی  گانڈ   کے    شاندار     لمس     نے     میرے     تن   بدن    میں   ایک    کرنٹ    سا      دوڑ     گیا۔۔اس   وقت    میرا     دل    تو   یہی     کر     رہا    تھا   کہ    ان   کی   موٹی  گانڈ    کے  ساتھ   اپنا   لن    ٹچ   کروں۔۔۔۔ لیکن  پھر   مامی  کی  نصیحت   یاد  آ گئی ۔  مامی  کی   نصیحت    یاد  آنے   کی    دیر تھی    کہ    میرے    ٹٹے    ہوائی   ہو  گئے ۔۔۔اور ۔۔ میں      ڈر  کے   مارے    تھوڑا   پیچھے   ہٹ کر  کھڑا   ہو  گیا  ۔۔۔  جانے  کیوں   پلوی    جی      میری  اس   حرکت  کا    کوئی   نوٹس نہیں  لیا   اور  اسی  انداز     میں     جھک    کر   ۔۔۔۔۔  دراز    میں   کوئی   چیز       تلاش  کرتی    رہیں۔۔۔ ۔۔ جبکہ   دوسری  طرف   میرا  یہ   حال  تھا  کہ   ۔۔۔ ہٹ کر کھڑا   ہونے  کے  باوجود   بھی۔۔۔۔میری  گستاخ    نظریں    بار   بار  ان  کی   بڑی    سی   گانڈ    کا   طواف   کر   رہیں  تھیں۔۔۔۔۔۔اس      کے  ساتھ  ساتھ ۔۔۔۔مسز نارائن   کی     گانڈ   کے نرم  لمس   نے     مجھے    بے قرار    سا  کر   دیا   تھا۔ لیکن   میں  بتا    نہیں   سکتا۔۔۔۔   کہ        اس     وقت    میں   کس   قدر      مجبور تھا   ۔۔۔۔۔ چنانچہ   بحالتِ  مجبوری ۔۔۔۔۔ میں   ان  کی    گانڈ   کو   حسرت   بھری   نظروں   سے   دیکھتے    ہوئے۔۔۔ بڑی       خاموشی   کے  ساتھ    کھڑا   رہا ۔۔  جبکہ   مسز   نارائن     نے     اسی   حالت  میں ۔۔۔ کاؤنٹر    کی   ساری    درازیں       چیک کیں۔۔۔ اور    پھر  یہ کہتے    ہوئے   سیدھی      کھڑی  ہوگئیں  کہ  بھگوان جانے     وہ    لیٹرز   کدھر  گئے؟ ۔۔۔ اتنی  دیر   میں   مامی    بھی   واش روم   سے   واپس    آ گئی تھی۔۔۔    اور     مسز     نارائن ( پلوی جی)   کو     دیکھ  کر کہنے  لگیں   کیا   ڈھونڈ   رہی    ہو  ؟    تو   پلوی    جی    کہنے  لگیں۔۔۔  یار    جاتے  سمے   ۔۔۔ میں   نے  یہاں  پر   کچھ    لیٹرز     رکھے   تھے      لیکن اب  نہیں   مل رہے۔۔۔تو  مامی  نے کہا  ۔۔وہ  جو   پنک    لفافے    میں  تھے؟     تو    پلوی جی   بولیں    ہاں    ہاں   وہی   ۔۔۔  تو    مامی   مسکراتے    ہوئے     کہنے  لگیں    او   بھلکڑ    بی بی    تم    نے   خود    ہی   تو   مجھے     فون   پر    کہا   تھا  کہ     وہ     انویلپ   (لفافہ)  میں    نارائن  جی    کو   دے   دوں۔۔۔۔ مامی   کی   بات  سن کر   پلوی جی   نے    اپنے     سر   پر    ہاتھ  مارا  ۔۔۔اور    پھر  کہنے  لگیں ۔۔۔ آئی  ایم  سوری  ڈئیر ۔۔۔ پتہ  نہیں    آج   کل   میری     میموری    کو  کیا   ہو گیا  ہے۔۔ ۔ اس کے  ساتھ    ہی    وہ     کاؤنٹر     سے   واپس    مڑیں۔۔۔۔ اور      واپس    مڑتے   ہوئے   انہوں  نے  بڑی  ہی  گہری  نظروں  سے  میری  طرف  دیکھا   لیکن   منہ  سے   کچھ  نہیں  بولیں۔  کچھ  دن  ایسے  ہی  گزر  گئے ۔۔۔۔

اس دوران  مجھے  کام  کی  کچھ کچھ  سمجھ آنا  شروع  ہو  گئی تھی۔   مامی  کے  ساتھ  ساتھ   پلوی جی بھی  مجھے  بڑے  پیار  سے ہر بات سمجھاتی تھیں ۔ لیکن  اس دوران  میں   نے   محسوس کیا کہ   مامی   کے   پیار   اور  مسز نارائن کے  پیار  بھرے  انداز   میں بہت   فرق  تھا۔۔یا  شاید   یہ   میرا   وہم  ہو ۔۔لیکن   ایک  بات  تو طے تھی کہ   پلوی میم    مجھ  سے  بڑی  لگاوٹ    سے  باتیں  کرتیں  تھیں  ۔   البتہ      یہ    بات      ابھی  تک     کنفرم  نہیں تھی   کہ   گاہے   بگاہے   وہ   جو   مجھے   اپنا جسم    دکھاتی۔۔۔   یا    جو  " اتفاقاً   "       میرے     ساتھ    اپنے جسم    کو   ٹچ   کرتی  تھیں ۔۔وہ   محض    اتفاق    ہوتا    تھا ۔۔۔۔۔یا۔۔۔۔  ؟؟؟  ۔۔ ہاں    تو     میں کہہ  رہا  تھا  کہ      دونوں  خواتین  کے   سمجھانے   کا   نتیجہ  یہ  نکلا  کہ  میں  اپنے   کام  میں   کافی  ہوشیار  ہو  گیا  تھا۔۔ 
  پھر ایک  دن  کی  بات  ہے کہ   اس  دن  مامی  کی  طبیعت  کچھ  زیادہ   ہی  خراب تھی  سو   انہوں  نے پلوی جی  سے ایک دن    کی   چھٹی  لے  لی ۔۔ مامی   کی  حالت    کے  پیشِ   نظر      میں    بھی   ان    کے   ساتھ    گھر  میں    رہنا  چاہتا  تھا  لیکن  وہ  نہ  مانی  اور  زبردستی  مجھے    پلوی جی  کے  ساتھ  بھیج   دیا۔    چنانچہ    مامی   کا  حکم  سن  کر    مجبوراً   میں     پلوی جی  کے ساتھ  سٹور   چلا  گیا۔۔۔  ویسے     تو      پلوی جی   دل  کی  بہت  اچھی    تھیں   لیکن   پتہ  نہیں  کیوں    اکثر    مجھے   ایسا   محسوس   ہوتا    تھا     کہ   ۔۔۔جیسے    وہ   مجھ    کوئی    خصوصی   دل چسپی    لے  رہیں   ہیں ۔ اس  سلسلہ   میں ۔۔۔ میں  نے  ایک  اور    بات   نوٹ  کی تھی   اور       وہ    یہ  کہ  وہ    میرے   ساتھ  اس   قسم  کے  التفات   مامی  کی  عدم  موجودگی  میں کیا  کرتی   تھیں۔۔  جبکہ      مامی    کی  موجودگی    میں   وہ      میرے  ساتھ     ایک    خاص     قسم     کا      فاصلہ    رکھا    کرتی  تھیں ۔۔لیکن  جونہی    مامی ادھر ادھر  ہوتیں۔۔۔۔ تو   وہ   میرے   ساتھ     بہت میٹھی میٹھی  باتیں کرتیں تھیں ۔ آج  کے  دن    چونکہ    مامی   جی    چھٹی   پر   تھیں   اس   لیئے   وہ   تھوڑا   کھل  کھلا   کے۔۔۔۔  مجھے   اپنا    سیکسی   بدن    دکھا   رہیں تھیں ۔۔ جسے  دیکھ  دیکھ   کر میں   گرم    ہوتا  جا  رہا  تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاری ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔