3052

گوری میم صاحب ( تیسری قسط)


        واؤ  ؤؤؤؤؤؤؤؤؤؤ ۔۔۔۔  اندر  کا  منظر بہت   گرم  اور  ہوش ربا  تھا    کیا   دیکھتا    ہوں کہ     مامی  اور نارائن   کے کپڑے  فرش  پر  پڑے  ہوئے   تھے  جبکہ   مامی  پلنگ  سے  ٹیک  لگا  کر  بیٹھی تھی   اور   نارائن  مامی  کی  چھاتیوں  کو  چوس  رہا  تھا   ویسے  تو  میں   ڈھکے    چھپے   انداز    میں     مامی   کی  چھاتیاں  کو  روز  ہی   دیکھا   کرتا    تھا   لیکن  آج   پہلی دفعہ ان کی    چھاتیوں   کو   پوری   طرح        ننگا          دیکھنے   کا   موقع   مل رہا  تھا ۔۔ اُف ف ف فف  ۔۔۔۔ کیا   بتاؤں  دوستو۔۔   مامی  کی  چھاتیاں  فٹ بال  کے  سائز سے  تھوڑی   ہی    چھوٹی   ہوں گی  لیکن تھیں  اسی    کی   طرح   گول   اور ۔۔۔۔ ان   گول   گول    چھاتیوں  کے  آگے  ان   کے   موٹے موٹے  نپلز اکڑے    ہوئے     کھڑے  تھے    نارائن  کے   ایک   ہاتھ   میں   مامی  کی چھاتی     کا   نپل  تھا  جبکہ   ۔۔۔۔مامی      کی    دوسری     چھاتی    اس  کے   منہ   میں   تھی   اور وہ   اسے    بڑے    جوش  خروش      کے   ساتھ  چوس رہا تھا۔۔      یہ   دل کش   اور      سیکس      بھرا       نظارہ    دیکھ  کر  میں   وقتی     طور    پر       اپنا    سارا   ڈر  اور    خوف      بھول   گیا۔۔۔اور     بڑے  دھیان     سے    اندر  کا     منظر   دیکھنے   لگا   ۔۔۔  ادھر   مامی  کی  چھاتی کو    چوستے  چوستے    جیسے   ہی   نارائن       ان  کے     نپل  پر   ہلکا   سا   کاٹتا   تو   مامی   کے  منہ  سے  ایک   جل ترنگ     سی        دل کش  اور    لذت  بھری   چیخ   نکلتی    جسے  سن  کر  ایک  دفعہ   تو  نارائن    نے   ان  سے  کہہ  بھی   دیا  تھا    کہ   ۔۔۔ آہستہ     چیخ  سالی   ۔۔۔کہیں  تمہارا      بھانجھا      نہ     اُٹھ  جائے۔۔   ۔تو   اس  کی   بات   سن   کر   مامی    بڑی     ادا          سے        کہنے  لگی۔ تم    بھا نجے      کی     بات   کر   رہے  ہو۔۔۔۔ میری  طرف    سے   چاہے     پوری   بلڈنگ   اُٹھ   جائے   ۔۔۔ مجھے   اس   کی    پرواہ    نہیں۔۔۔ تم   بس  میری  چھاتیاں     چوسو   ا ور۔۔۔۔ چوستے   جاؤ۔(اس  کا  مطلب  یہ تھا   کہ       مامی  کو  اپنی    چھاتیاں    چسوانا    بہت  اچھا   لگتا   تھا ) چنانچہ    نارائن    نے   ان کے   نپل پر   زبان   پھیرتے   ہوئے  کہا۔۔وہ    تو     میں چوس   ہی   رہا    ہوں ۔۔ لیکن   پھر بھی    ڈارلنگ  ۔۔۔۔۔۔۔ احتیاط   اچھی  ہوتی   ہے ۔   نارائن   کی    بات سن  کر    مامی   نے      اپنی    لیفٹ  چھاتی   کو    اس   کے   منہ    سے    نکا لا     اور  رائیٹ        والی   چھاتی    کو     اس  کے   منہ   میں  دیتے    ہوئے  بولی ۔  اس  بات  کی   تم   فکر   نہ  کرو   !  میرا       بھانجھا       بڑی     گہری  نیند    سوتا   ہے  اس کے  ساتھ    ہی   مامی    کی   آہوں اور سسکیوں   کا       وہی کھیل  دوبارہ     سے     شروع   ہو گیا۔۔۔۔   مامی  کی دل کش  اور  لذت  بھری    چیخیں  سن  سن   کر   میں   بڑا    بے چین  ہو گیا   تھا     ۔۔۔  اور اپنے    لن  کو  ہاتھ   میں  پکڑے   اسے     بری   طرح  سے    مسل   رہا  تھا۔۔۔  جبکہ   دوسری    طرف     نارائن    بھی     بڑی    بے دردی    کے  ساتھ     نہ صرف     یہ   کہ     مامی    کی    تنی     ہوئی   چھاتیوں    کو   ندیدنوں    کی    طرح     چوس    رہا   تھا  بلکہ وہ  ترنگ    میں  آ  کر     بار    بار     ان   پر  دانت   بھی   کاٹ   رہا  تھا     ۔۔۔۔  پھر     اچانک   ہی   مامی  نے   اپنی     چھاتیوں    کو      نارائن    کے   چنگل   سے  آذاد    کروایا۔۔۔۔۔۔اور     بیڈ  پر کھڑی   ہو    گئی    اور    بنا   کچھ   کہے   اپنی   دونوں  ٹانگوں    کو  آخری  حد تک         کھول  دیا۔۔ یہ   دیکھ  کر  نارائن  بھی   گھٹنوں  کے  بل  کھڑا   ہو گیا   ادھر       مامی     کی   یہ   پوزیشن      دیکھ  کر ۔۔۔   میں   سمجھ  گیا  کہ اب    وہ      نارائن        سے   اپنی    چوت   چٹوانے     والی   ہیں  ۔۔۔۔پھر   وہی   ہوا۔۔۔۔ مامی  نے   نارائن  کو  بالوں  سے  پکڑا   اور   بڑی      مست    آواز   میں    کہنے  لگی ۔ چل  میرے  کتے ۔۔۔  پھدی  چاٹ۔ مامی  کی    یہ      بات   سن کر   حیرت انگیز  طور  پر   نارئن   نے   اپنے     منہ   کو   مامی     کی   کھلی   ٹانگوں       کی   طرف    کیا   ۔۔۔ اور   پھر    کتے     کی    طرح    اپنی         زبان  کو   منہ    سے     باہر  نکالا ۔۔۔۔  اور   دھیرے   دھیرے      مامی       کی  طرف      بڑھنا   شروع     ہو گیا ۔۔  جیسے  ہی   اس   کا   منہ   مامی  کی   کھلی    ہوئی       ٹانگوں   کے   قریب   پہنچا     تو   نارائن نے     بلکل  کتے کے     سے     انداز ۔۔۔ میں   اپنی    تھوتنی   کو     مامی     کی     دونوں     ٹانگوں   کے     بیچ    میں    گھسا     دیا ۔وہ   اس   وقت    بلکل    کتے    کی   طرح    ایکٹ     کر   رہا   تھا    ۔  چنانچہ  جیسے     ہی    اس     کی     تھوتھنی      مامی   کی       ٹانگوں   کے  بیچ       میں     پہنچی۔۔۔۔  اس   کے ساتھ    ہی    اس     نے   کتے     کے    مخصوص      انداز     میں          مامی     کی    بنا  بالوں    والی ۔۔۔۔ پھدی   کو   سونگھنا      شروع      کر دیا۔۔     ۔۔۔۔۔  یہ   دیکھ  کر   مامی      نے  اس کے   سر پر  ہلکی   سے   چپت  ماری ۔۔۔۔ اور مست   آواز    میں    کہنے لگی۔۔۔۔ کتے!۔۔۔   پھدی  کو  سونگھنا     نہیں    ۔۔۔۔۔بلکہ     چاٹنا  ہے۔       مامی     کی  بات  سن   کر    نارائن      نے    سن کر      نارائن   نے    مامی    کی   طرف   دیکھا   اور   کہنے    لگا    بڑا   نشہ    ہے   تیری   چوت    میں  ۔۔ بس تھوڑی    سی  اور   سمیل    لینے  دے۔۔۔۔ لیکن      مامی     نہ    مانی    اور  اپنی   چوت     کو   اس    کے   منہ پر   دباتے     ہوئے    بولی   ۔۔۔ ۔۔۔         چاٹ   حرامی۔۔۔ مامی    کی   بات   سنتے     ہی     نارائن     نے   کسی    وفادار    کتے    کی     طرح     ۔۔۔۔   اپنی    زبان  کو    باہر     نکالا۔۔۔اور    شڑاپ شڑاپ   کر کے ۔۔۔   مامی     کی    پھدی  کو   چاٹنا    شروع   کر   دیا۔۔۔۔۔۔ ۔  گو  کہ  اس  وقت     مامی    کا   منہ  سامنے  کی  طرف  تھا   لیکن    اس   کے    باوجود         بھی   ۔۔۔۔۔میں   ان   کی   بنا    بالوں   والی   پھدی  کو  اچھی   طرح     سے      دیکھ  سکتا   تھا۔ ان    کی   پھدی  کی لکیر   کافی  لمبی ۔۔۔اور   ۔۔۔گیلی    ہونے   کی وجہ     سے۔ان   کا    چوت   رس      باہر         ٹپک   رہا   تھا  ۔۔۔   جس  کو   نارائن   کتا      اپنی   زبان    نکالے   ندیدوں   کی    طرح  چاٹ    رہا  تھا  ۔۔۔ کچھ     دیر    بعد     اس  نے   اپنی   دونوں   انگلیوں  کی   مدد  سے    پھدی   کی   لکیر  کو   کھولا۔۔اور    میں   نے   دیکھا   کہ   ۔۔۔۔۔۔۔۔ اندر  سے   مامی  کی  پھدی   پانی  سے لبا   لب    بھری  ہوئی  تھی  جسے   نارائن     نے    دو  منٹ     میں     ہی      چاٹ چاٹ  کر صاف کر  دیا۔۔۔۔مامی کی  پھدی   کا    اندرونی    پانی   چوسنے   کے  بعد     نارائن   اپنے  منہ    کو     مامی    کے     دانے   کی طرف    لے گیا۔۔۔  اور      پھر   اس    پھولے    ہوئے   دانے   کو    اپنے     منہ  میں   لے کر  مزے   سے     چوسنے   لگا۔ جس   وقت        نارائن   نے   مامی   کے پھولے     ہوئے     براؤن   دانے  کو   اپنے   منہ میں  لیا۔۔ اس    وقت    مامی       کی   آنکھیں    بند   تھیں ۔۔۔ اور   وہ   مزے  کی   آخری   منزل    پر   پہنچی   ہوئیں تھیں ۔۔۔۔ اور  وہ   ۔۔  آہ ہ ہ ہ ۔۔آہ۔۔اُف۔۔اُف۔۔ کی  دل کش گردان   کرتے  ہوئے    کہہ   رہیں تھیں۔۔۔ ۔۔۔ یس  ڈارلنگ ۔۔۔یسس ۔۔او  ۔۔ یسس۔۔ میری   چوت    چوس س سسس۔۔۔اور  چوس۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔چاٹ    میرے  کتے۔۔۔میری   پھدی       چاٹ۔۔۔۔ اور تیزی  سے   چاٹ۔۔  پھر   ایسے      ہی          سسکیاں   لیتے   لیتے ۔۔۔اچانک  مامی  نے   نارائن  کے   بالوں   کو   بڑی   مضبوطی کے   ساتھ   جکڑ لیا ۔۔۔اور    اس   کے سر کو  اپنی   پھدی   پر    دباتے    ہوئے   تیز تیز سانسیں      لینے   لگی۔۔۔اور  ساتھ   ساتھ    بے ربط    الفاظ    میں  کہتی   جاتی  ۔۔۔۔  چاٹ۔ٹ۔ٹ۔۔۔ میرے کُ ت ے ے ےے ے ے۔۔اور  اس  کے  ساتھ   ہی   مامی     کے جسم   کو   ایک    جھٹکا    سا  لگا  اور  انہوں نے  نے ایک   زور دار    چیخ   ماری۔۔۔  اور   کچھ  دیر   تک     نارائن کے سر کو   اپنی  پھدی  کے  ساتھ  چپکائے  رکھا۔۔۔ پھر  اسے  پرے     ہٹا کر      پلنگ  پر لیٹ    کر  ۔۔۔۔   لمبے لمبے سانس لینے  لگیں۔   ادھر     جیسے   ہی    مامی    پلنگ   پر   لیٹی    میں   نے   نارائن   کی طرف  دیکھا   تو  اس   کا   منہ،   ہونٹ    اور   اس   کے    آس    پاس     کا     سارا       ایریا۔۔۔۔۔  مامی کے  چوت  رس  سے  چمک  رہا  تھا  ۔۔۔ادھر  مامی  کو   پلنگ پر   لیٹتے   دیکھ کر  ۔۔۔۔  نارائن بھی   ان   کے   ساتھ  ہی   لیٹ گیا ۔۔۔اور   ۔۔۔۔  بڑے ہی    سیکسی     لہجے    میں  کہنے   لگا۔۔۔ آج   تو   بہت    مال  نکالا  تم    نے  ۔۔ نارائن    کی    بات  سن کر        مامی   نے اپنی      بند    آنکھیں   کھولیں اور        پیار    بھری     نظروں      سے   اس   کی    طرف   دیکھتے   ہوئے   بولیں۔۔ تم   نے   چاٹا    ہی   اتنا    زبردست   لگایا    تھا۔۔۔ اتنی    بات  کرنے  کے بعد    مامی   نے   لیٹے لیٹے    ہی    اپنے    منہ کو    نارائن    کے   منہ  کی   طرف   کیا     اور     اس    کے  ساتھ   ہی   فضا     میں  کسنگ    کی  مخصوص    پوچ پوچ    ۔۔۔ کی   آوازیں   گونجنے   لگیں۔۔

کسنگ  کرنے  کے  کچھ  دیر  بعد   نارائن   مامی  سے کہنے   لگا   چل ۔۔۔ ۔۔۔ اُٹھ  رانڈ !   ۔۔۔اور     میرا     لوڑا   چوس۔۔ نارائن  کی   بات سن کر   مامی  ایک   لفظ      کہے     بغیر     اپنی   جگہ   سے اُٹھی  اور   گھٹنوں  کے  بل  چلتی   ہوئی    نارائن  کی   ٹانگوں  کی    طرف  آ گئی ۔جہاں   پر     اس    کا    مست      لوڑا        اکڑا    کھڑا  تھا۔۔۔ جیسے  ہی   مامی   نارائن   کی   ٹانگوں  کے قریب  پہنچی   اسی   وقت    نارائن    نے    اپنی    دونوں  ٹانگوں کو  آخری  حد  تک  کھول   دیا ۔۔۔جس  کی   وجہ    سے     مامی   اس   کی    کھلی     ٹانگوں کے   بیچ   میں      آکر  بیٹھ گئی۔۔ ۔۔اور   نارائن   کے   لوڑا    کو  اپنے   ہاتھ   میں  پکڑ ا     اور   پھر  اس  پر تھوک    کا  ایک  گولہ   سا   پھینک    کر   بولی۔۔ تیرا    لوڑا     بہت     مست     ہے     رے۔۔۔ تو  آگے   سے    نارائن   کہنے   لگا۔۔ مست  وست   چھوڑ  ۔۔چوپا    لگا۔۔  تو    مامی    اپنے    تھوک   کو     نارائن   کے     لن     پر   ملتے    ہوئے    بولی ۔۔۔ اسے    چوسنے  کے  لیئے   ہی    تو ۔۔۔۔تیری    ٹانگوں    کے    بیچ   میں     بیٹھی   ہوں  سالے ۔۔۔ ۔۔   حقیقت    یہ ہے   کہ      نارائن   کا   لن   کوئی   اتنا      لمبا     چوڑا       ہر گز   نہ   تھا    بلکہ       میرے   خیال   میں  اس   کا  لنڈ    کوئی   چھ اینچ   کے قریب  ہو گا    ہاں     موٹائی    میں   تھوڑا    زیادہ   تھا ۔    ۔۔۔ ہاں    تو     میں  کہہ   رہا   تھا   کہ   اس    وقت    نارائن     کا      اَن کٹ     لوڑا      اپنے   فل   جوبن    میں    اکڑا      کھڑا   تھا    جبکہ    اس  کا   ٹوپا    ان کٹ   ہونے   کی وجہ   سے ایک   غلاف  ۔۔   جسے   اردو    میں    حشفہ    کہتے    ہیں     میں   چھپا   ہوا   تھا۔۔  ادھر    مامی  نے  بڑے   پیار   سے    ٹوپے   پر   لگی    ایکسٹرا      سکن    کو     پیچھے    کی   طرف  کیا   اور   پھر   ننگے  ٹوپے  پر  زبان   پھیرتے   ہوئے    بولیں ۔۔ تیرا   لن بھی    کافی    ِلیک    ہو     رہا ہے۔۔۔۔۔ تو  نارائن    جواب  دیتے   ہوئے   بولا۔۔۔۔  سالی    رانڈ ۔۔ اتنا     بھوسڑا         چٹوایا      ہے  ۔۔تو  اس   بے چارے   نے   تو    ِلیک    ہونا       ہی    تھا۔۔۔ اس  پر  مامی  کہنے  لگی ۔۔۔ تم  اس   لوڑا   کو  بے چارہ   کہہ   رہے  ہو   جو  کہ  میرے  جیسی   سیکسی  عورت   کی  بھی    چیخیں   نکالوا     دیتا   ہے   تو   اس   پر   نارائن   ترنت   ہی   کہنے  لگا۔۔۔بےچارہ   تو   ہے   نا  ۔۔جو  اتنی   دیر   بعد    اسے  اس      کی     باری    آئی     ہے۔۔۔ نارائن  کی  بات سن کر   مامی  نے سر  جھکایا  اور    پہلے     تو    اس   کے     ننگے    ٹوپے    کو   چاروں  طرف   سے   چاٹا ۔۔ پھر  آہستہ آہستہ     ۔۔۔۔۔ اس کو    اپنے         منہ  میں لے  کر   چوسنا    شروع    ہو      گئی   ۔۔۔۔ 

  ادھر  جیسے   ہی  مامی   نے    نارائن  کے  لوڑے  کو  چوسنا   شروع   کیا ۔۔۔۔۔ ۔۔اس        کے  تھوڑی    دیر  بعد     مامی  کی طرح   نارائن   نے بھی  اونچی   آواز    میں ۔۔۔۔  لذت    بھری    چیخیں    مارنا     شروع     کر  دیں ۔۔  نارائن  کی   چیخیں    سن کر     مامی   نے  اس  کے  لن    کو   اپنے   منہ  سے   باہر     نکالا     اور   پھر    اس  کی  طرف   دیکھتے   ہوئے   بڑی   شوخی کے   ساتھ     کہنے  لگی۔۔۔ سالے  آہستہ  چیخ  !!!!۔۔۔کہیں  میرا   بھانجھا   نہ اُٹھ جائے۔۔۔ مامی  کی  بات  سن  کر   نارائن   نے  بھی  انہی  کی  زبان  میں  جواب  دیتے   ہوئے  کہا ۔۔۔  میری  طرف  سے  چاہے   سارا    محلہ   اُٹھ  جائے   لیکن  میں  چُپ  نہیں  رہوں  گا ۔۔۔   اور     ایسے    ہی      شور مچا    کر     تیرے      چوپے   کو     انجوائے    کروں  گا۔۔۔ اس   کے ساتھ   ہی  اس  نے  مامی کے     سر کو   اپنے   لوڑا    پر  سختی     کے    ساتھ          دبا   دیا۔۔۔ مامی   نے   بھی     اپنا     سارا    منہ کھولا  ۔۔۔۔اور    پھر  نارائن    کے    لوڑا   کو  جی   بھر  کے   چوسا۔۔    انہیں  ابھی     لن       چوستے      ہوئے       تھوڑی       ہی    دیر گزری تھی   کہ   اچانک   نارائن     سسکیاں   لیتے   ہوئے   بولا۔۔۔۔ بس کر   رانڈ ۔۔۔بس کر۔۔۔ لوڑا  چوسنا  بند کر۔۔۔تو   مامی  نے  اس  کے   لوڑے  کو   اپنے   منہ سے  باہر    نکالا   اور   کہنے   لگیں ۔۔۔۔ کہ  اتنے    مزے کا    لوڑا   نہ   چوسوں   تو    پھر   کیا   چوسوں ؟ ؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟    تو    آگے   سے   نارائن   جواب   دیتے   کہنے  لگا۔۔۔۔۔۔   مجھ  سے   چُدوا ۔۔۔۔۔ نارائن   کی   بات   سنتے   ہی    مامی    نے   اس کی طرف   دیکھا  اور    مستی   بھرے    انداز      میں     کہنے  لگیں ۔۔آج  کس  سٹائل  میں  لے   گا؟  تو  نارائن  اپنی   جگہ   سے   اُٹھتے  ہوئے   بولا۔۔۔۔۔ اپنی       تو   ایک   ہی    پسند  ہے    ڈوگی ۔۔۔۔۔ اس  لیئے   تو   جلدی     سے     کتیا    بن   جا   ۔۔اس    پر    فوراً   ہی          مامی  اس  کے   سامنے       گھوڑی  بن  گئی۔۔اور   پھر     شرارت   سے   بولی۔۔ میری   گانڈ        مارے    گا      کیا؟     مامی   کو   گھوڑی   بنتے      دیکھ   کر    نارائن    بھی     سرکتا   ہوا   مامی    کے   پیچھے   آ  گیا    اور    ان      کی     شاندار     بُنڈ      پر     ہاتھ  پھیرتے    ہوئے    بولا۔۔۔۔۔۔۔ گانڈ  بھی   مار   لو ں گا   لیکن   اس    وقت   میرا    دل   تیری  لیس دار   پھدی   پر آ   رہا   ہے  یہ  سن  کر  مامی  نے  گردن   موڑ    کر     نارائن   کی    طرف    دیکھا    اور   کہنے  لگیں۔۔۔ پھدی     مارنی    ہے    تو    پھر ۔۔۔ دھکے      فُل  سپیڈ    مارنا ۔۔۔۔ ۔۔ اتنی   دیر   میں   نارائن   اپنے  ان کٹ       ٹوپے   پر تھوک   لگا   چکا   تھا ۔۔چنانچہ  اس   نے     اپنے   تھوک      لگے       لوڑے  کو          ہاتھ میں پکڑ   کر   مامی    کی     چوت  پر  رکھا ۔۔۔۔ اور     اسے      رگڑتے      ہوئے      بولا۔۔۔  اس  کی   تو    فکر   نہ کر۔۔۔پھر اس    نے   مامی    کی  موٹی   گانڈ    پر ایک    زور دار تھپڑ    مارا    اور     کہنے     لگا۔۔۔ ۔۔۔

میں نے   پہلے   کبھی    کمزور   دھکا   مارا   ہے ؟    تو   آگے   سے     مامی     جواب    دیتے      ہوئے    بولی ۔۔۔ اسی  لیئے    تو   میں   بڑے    شوق     سے  ۔۔۔ تیرے   نیچے  لیٹتی   ہوں۔۔۔کہ    سالے   تو   گھسے   بڑے   جاندار    مارتا ہے    مامی   کی   بات   سن  کر   نارائن   نے  کوئی   جواب   دینے    کی    بجائے۔۔۔۔۔ایک    زبددست     دھکا   لگایا    جس  کی   وجہ   سے   اس   کا   لن  پھسل  کر   مامی   کی   چوت   میں   غائب   ہو  گیا۔۔۔اور   اس  کے  ساتھ   ہی     نارائن    نے      نان سٹاپ   دھکوں    کی     بارش    شروع    کر   دی۔۔  مامی  ٹھیک   کہہ  رہی تھی     واقعہ     ہی   وہ   سالا      بہت    زبددست   قسم    کے   دھکے     مار     رہا   تھا۔۔۔۔  اور  ان گھسوں   کی    وجہ  سے      مامی   کی   لزت   بھری   چیخوں   کے  ساتھ ساتھ    کمرے   کی   فضا     دھپ دھپ   کی   زور دار   آوازوں    سے   گونج    رہی  تھی۔۔۔۔
میں  کافی  دیر  تک  وہاں کھڑا  ان  کی شہوت انگیز   فکنگ   کا    مزہ   لیتا    رہا ۔۔ لیکن   پھر     میرا   وہاں  پر کھڑا   رہنا   مشکل  ہو گیا     کیونکہ     میرے  اندر   کی  گرمی       بھی    اپنے   عروج   پر   پہنچ    چکی تھی  ۔۔اور  میرا   لن    تن    کر     آخری   حد   تک اکڑ   چکا    تھا  اور    اب    مجھے   ۔۔۔ مُٹھ  کی شدید حاجت  ہو  رہی تھی۔۔ اس  لیئے  میں    نے    فیصلہ    کیا   کہ    اب    یہاں   سے    چلا   جائے  ۔۔لیکن۔۔۔    کمرے  میں جانے  سے  پہلے ۔۔۔ ایک نظر  اندر  کی    طرف   جھانک کر   دیکھا   تو    مامی  کی   دل کش   چیخوں    کے   ساتھ    ان   کی    دھواں   دھار    چدائی   جاری  تھی  لیکن   نارائن   کے  سٹائل  سے  صاف  پتہ  چل رہا  تھا  کہ   وہ  کسی  بھی  لمحے  چھوٹنے   والا   ہے    یہ  دیکھ    کر  ۔۔۔۔ میں  نے   ان کو   ان  کے حال  پر   چھوڑا   اور   بڑے      محتاط      انداز  میں    تیز   تیز      چلتا        ہوا     اپنے   کمرے    میں  پہنچ    گیا   اور       اپنی   لانگ   نیکر    ( باکسر)     اتار        کر   سیدھا   واش  روم   میں    جا    گھسا۔۔۔ ۔   وہاں   پہنچ    کر    یاد   آیا  کہ    گزشتہ    روز       سے     میرا   تو    شیمپو    ہی ختم   تھا  ۔۔  اور  شاہ    تم   تو   جانتے   ہی   ہو  کہ    میں   شیمپو   کے   بغیر   مُٹھ  نہیں  مار  سکتا  ۔۔۔اور  اس      وقت     مجھے    مُٹھ     مارنے   کی   حاجت    شدید   سے  شدید تر  ہوتی   جا رہی تھی۔۔۔سو  میں  ننگا  ہی    مامی  کے  واش روم   کی    طرف   بھاگا   اور   وہاں    جھانک  کر دیکھا   تو   سامنے    ہی   مامی   کا      شیمپو    پڑا     تھا   میں  نے   جلدی   سے  اسے  اُٹھایا۔۔۔۔ اور    وہیں    کھڑے کھڑے ۔۔۔پہلے    تو     اپنا   لن  پر  بہت  سا    تھوک    لگا     کر  اسے  گیلا  کیا   ۔۔۔۔ اور   ۔۔  اسے گیلا   کرنے    کے  بعد ۔۔۔ بہت  سا      شیمپو    اپنے    لن پر  لگایا ۔۔۔۔  اور  کچھ    شیمپو     اپنی  ہتھیلی   پر   ڈال  کر  واپس   اپنے   کمرے     میں  آ گیا۔۔۔۔۔ اور   پھر     دروازہ   بند   کر  کے  باقی   کا  شیمپو   بھی   اپنے   لن   پر   لگا    کر۔۔۔ ۔۔۔۔۔      مُٹھ   مارنا    شروع  ہو  گیا۔۔ جیسے  جیسے   میرا     ہاتھ     چل   رہا       تھا ..

 ویسے  ویسے   لن  پر   شیمپو     کی    جھاگ   بن   رہی  تھی۔۔۔۔ اور  میں    مزے کے  سمندر   میں   غرق  ہو  رہا  تھا   ۔۔۔  ابھی  مجھے   مُٹھ    مارتے      ہوئے ۔۔۔۔  تھوڑی    ہی     دیر  گزری تھی ۔۔۔۔ کہ  اچانک   میرے   کمرے    کا   دروازہ     دھڑام      سے    کھلا۔۔۔۔  دروازہ  کھلنے    کی   آواز   سن  کر   میں   ایک   دم  سے   گھبرا   گیا۔۔۔۔اور       اسی       گھبراہٹ   کے  عالم   میں   ۔۔۔۔۔ بے اختیار    مُڑ   کر   دیکھا   تو    دروازے    پر         ماموں   کھڑے      تھے۔۔ اس     وقت    میری   حالت   یہ  تھی   کہ      میری    لانگ نیکر      فرش    پر    پڑی  تھی  اور    میں    نے    اپنے  ایک        ہاتھ   میں    لن   پکڑا     ہوا    تھا  ۔۔  ماموں   کو   یوں   دروازے   میں   کھڑے   دیکھ  کر    میرے      چہرے     کا     رنگ    اُڑ   گیا  ۔۔۔۔     میرے      اوپر    کا  سانس   اوپر     اور   ۔۔ نیچے   کا نیچے    رہ گیا۔۔۔۔۔  ۔۔۔۔۔میری       دونوں         ٹانگوں   میں  جان ختم   ہو گئی   ۔۔اور     ۔۔۔ ٹٹے  دل  کی  طرف   چڑھ   گئے۔۔۔ ادھر  جیسے    ہی        ماموں       نے     مجھے    اس   حال   میں  دیکھا ۔۔۔تو  پہلے    تو    حیرت  کے    مارے   ان    کا    منہ     کھلے   کا   کھلا   رہ  گیا    لیکن  پھر       اگلے      ہی     لمحے ۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔ ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاری ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔