4635

گوری میم صاحب ( دوسری قسط)

 بیس  پچیس   منٹ   کی  ڈرائیو    پر   واقع   تھا  ان   کی   رہائیش      کرونا    پارک   سے   کچھ    فاصلے   پر  واقعہ    تھی   یہاں  پر  میں   تم   سے   اپنے    ماموں   اور   ممانی    کا   تعارف    کرو ا   دوں    میرے  ماموں  کا   نام   حماد سلطان      اور   ممانی   کا   نام   ندرت   سلطان      تھا   جس    وقت      کی     میں    بات    کر   رہا     ہوں  اس  وقت   ممانی   کی  عمر  30،  32 جبکہ   میرے   ماموں     40۔42   کے   ہوں   گے  اور    وہ   ابھی    تک   بے اولاد   تھے۔۔۔


امریکہ      پہنچ   کر    ماموں   اور   ممانی      نے   میری    بڑی      آؤ  بھگت       کی ۔ اور   خاص   کر   ممانی   نے   مجھے    نیو یارک   سٹی   میں    کافی   گھمایا   پھرایا   اس     دوران     میں   نے  ان  سے  کہا بھی  کہ  مجھے  کہیں   کام   پر   لگوا    دیں   لیکن    وہ    جواب    دیتیں     کہ   تمہاری     ماں    کیا  کہے    گی     کہ   منڈے   کو  آتے  ساتھ   ہی     کام  پر  لگا  دیا۔۔۔ اس  لیئے  تھوڑا    گھوم     پھر لو تھوڑا  ریسٹ  کر لو   کہ  اس   کے  بعد  تم  نے   ساری  عمر  کام   ہی  کرنا  ہے ۔ ہاں   تو    میں   کہہ   رہا  تھا    کہ    ماموں    جہاں   رہتے   تھے    وہ    ایک  چھوٹا   سا   دو منزلہ     مکان  تھا۔۔  ان  کے  چھوٹے  سے  اپارٹمنٹ   میں  دو   ہی   کمرے  تھے   ایک   میں  ماموں    لوگ     سوتے    تھے ۔۔۔۔ جبکہ   دوسرا  کمرہ   انہوں   نے   مجھے   دے   دیا   تھا۔   ماموں   اور   ممانی   دونوں    ہی   الگ   الگ   سٹورز   میں   ملازمت   کرتے   تھے   لیکن    یہ سٹور   ایک   ہی     مالک  کا   تھا    جس    کا   نام   جے  پرکاش   نارائن    تھا   اور   وہ         انڈیا   (دہلی)  کا    رہنے   والا ایک پنجابی      ہندو   تھا    اور    مزے   کی  بات   یہ   ہے   کہ   میرے   ماموں  لوگ     جس     اپارٹمنٹ    میں   بطور     کرایہ دار      رہتے     تھے    وہ    بھی     اسی      ہندو   مالک     کی   مالکیت  تھا   نچلے    والے  پورشن    میں     وہ   خود   جبکہ  اوپر    والے   پورشن    میں   ماموں    لوگ   رہتے   تھے ۔ اور   اس   گھر  کی   بناوٹ   کچھ  ایسی تھی  کہ   اس    کا   مین   گیٹ  ایک  ہی  تھا    جبکہ    اس    کی   اوپر        والی    منزل   کی   سیڑھیاں  صحن  سے  ہو کر  گزرتی   تھیں۔۔  ۔۔ اتنی  بات  کرنے    کے   بعد     عدیل   ایک  لمحے کے  لیئے   جھجھکا  لیکن اگلے   ہی  لمحے   اسی   روانی    کے      ساتھ         کہنے   لگا   کہ    شاہ جی   جیسا   کہ   تمہیں   معلوم   ہے کہ  شروع   سے   ہی   ہمارے   گھر   کا   ماحول عام    گھروں     کی   نسبت    تھوڑا     کھلا   تھا    لیکن   جہاں  تک   ممانی لوگوں   کا   تعلق  ہے  تو   یقین  کرو   خود ممانی     اور   ان   کی    فیملی      کے       باقی    لوگ     اچھے     خاصے    مذہبی   واقعہ     ہوئے  تھے۔۔۔ مجھے    اچھی    طرح    سے    یاد    ہے  کہ      اس   زمانے   میں  ممانی   اور   ان    کی    باقی    بہنیں   وغیرہ       پردہ      کیا    کرتی    تھیں     اور     برقعہ        کے     بغیر       وہ      کہیں    بھی    آتی  جاتی   نہ تھیں۔۔۔ لیکن   جب    میں   امریکہ     پہنچا     تو ۔۔۔۔      خاص کر  ممانی     کے  چال چلن    دیکھ    کر   میں    تو     حیران     ہی     رہ گیا۔۔کہاں    کہ   وہ       پردے   کے   بغیر   گھر   سے   باہر   ایک    قدم      بھی  نہ  رکھتی   تھیں۔۔۔۔     اور  کہاں   یہ کہ۔۔۔پردہ     تو    درکنار ۔۔    جس   قسم    کے   لباس  میں ۔۔۔۔۔۔  میں    نے  ان    کو    دیکھا    تھا  ۔۔ یقین    کرو  میں حیران       بلکہ   کافی   حد  تک   پریشان     ہو  گیا  تھا۔۔۔کیونکہ    وہ      بہت   بولڈ ۔۔۔    بلکہ   ان   کی    فیملی    کے   حساب   سے   اچھا   خاصہ    قابلِ اعتراض   تھا ۔پھر  کہنے  لگا   کہ   امریکہ    کی   کھلی    ڈھلی    سوسائٹی   نے        ممانی      کو    پوری    طرح      اپنے    رنگ  میں رنگ   لیا  تھا  ۔۔۔ یہ   امریکہ   کی   آذاد   فضاؤں   کا       اثر   تھا   یا    کیا   تھا   کہ  وہ    گھر  میں ہمیشہ ہی    ایک   ڈھیلی   ڈھالی  (بٹنوں والی )  شرٹ   اور   نیچے   ٹائیٹس  ( تنگ پجامی)    پہنا    کرتی تھی   اور   یہ   ٹائیٹس اتنی  زیادہ     ٹائیٹ    ہوا     کرتی      تھی   کہ    جس   کی      وجہ       سے    ان     کے    نچلے  جسم   کے   ایک ایک عضو     کا    ماپ  کیا  جا  سکتا  تھا۔  اس  کے   علاوہ   عام   حالات   میں    بھی     وہ     کافی     بولڈ    قسم   کا    لباس  پہنتی   تھیں     جو   کہ   شروع   شروع     میں    تو   مجھے   بڑا   عجیب۔۔۔  بلکہ  شر  انگیز    لگا   لیکن   پھر   آہستہ  آہستہ   ماموں    کی   طرح     میں بھی   اس   کا   عادی   ہو  گیا  تھا۔
    اتنی  بات  کرنے  کے  بعد  عدیل  نے    اپنی   کرسی  کو  تھوڑا    مزید        آگے   کی  طرف      کھسکایا   اور    میری    طرف  دیکھتے    ہوئے   کہنے   لگا   کہ   ایک   رات   کی  بات   ہے  کہ   میں   اپنے   کمرے   میں   مست سو  رہا تھا  کہ  اچانک   کسی   وجہ   سے  میری   آنکھ   کھل    گئی۔۔   کچھ   دیر    تک       تو    میں  یونہی        پلنگ   پر لیٹا۔۔۔  کروٹیں   بدلتا   رہا    پھر   اچانک   میرے   کانوں   میں    سیکس    بھری   چیخ   سنائی  دی۔۔۔   بلیو مویز   دیکھ   دیکھ   کر    اتنا    تو  میں   جان  ہی   گیا   تھا   کہ     لڑکیوں   کے  منہ   سے   اس  قسم  کی چیخیں    سیکس  کے     دوران    ہی نکلتی  ہیں   اس     لیئے     جب    ویسی      ہی     چیخ     کی  آ واز     مجھے    دوبارہ       سنائی   دی   تو    میں   یہ سوچ   کر   لیٹا  رہا   کہ   ۔۔۔۔۔ماموں اور    ممانی    سیکس   انجوائے کر  رہے  ہوں  گے۔۔۔ لیکن  پھر   کچھ   دیر  بعد۔۔۔۔  پھر    ان    لزت   بھری     چیخوں  میں تھوڑی   شدت   آ  گئی    ۔ اور   ان  سیکسی    آوازوں     کو     سنتے      ہوئے      اچانک    ہی   مجھے   یاد  آ   گیا   کہ   ماموں   کی  تو   آج   نائیٹ   ہے    یہ خیال    آتے        ہی   میں   نے   اپنے       بیڈ         سے چھلانگ   لگائی    اور دبے  پاؤں  چلتا   ہوا    کمرے  سے  باہر نکل   گیا ۔۔۔اور   پھر        کان       لگا     کر      ندرت    مامی   کے   کمرے   کی  طرف   دیکھنے  لگا۔   عین   اسی   وقت   جب  میرے    کان    ان     کے   کمرے   کی طرف       لگے   ہوئے    تھے۔۔۔۔اچانک  مجھے  ندرت    مامی    کی    ایک  زوردار   مگر     لزت     بھری     چیخ      سنائی   دی۔۔۔۔  میں   نے   غور   کیا   تو   یہ  آواز    گیلری  کی  طرف    سے   آ  رہی تھی۔۔۔چنانچہ   میں    بھاگ  کر   گیلری    کی  طرف گیا ۔۔۔   اور      گیلری   سے  نیچے   کی   سمت     دیکھنے   لگا   کہ    جس  طرف   سے   ممانی   کی     مست   سسکیوں   کی آواز  یں      سنائی  دے   رہی  تھیں۔۔
               کیا  دیکھتا  ہوں  کہ  ندرت  مامی    نے  اپنے   دونوں   ہاتھ   سیڑھیوں   کی  ریلنگ   پر   رکھے   ہوئے   تھے  ان    کی  ٹائیٹس    پاؤں  میں  ۔۔جبکہ    ان   کی    بڑی     سی     گانڈ     پیچھے   کو   نکلی   ہوئی تھی۔۔ ۔۔ ممانی   کے  عین    پیچھے    نارائن      صاحب     کھڑے   تھے    ان   کی  بھی      نیکر    اتری    ہوئی  تھی    اور    وہ    بے خودی    کے    عالم   میں       دھکے    مار  رہے   تھے۔  چونکہ  اس   وقت     دونوں   کی   پیٹھ   میری   طرف تھی   اس  لیئے   مجھے    یہ     معلوم     نہ    ہو   سکا  کہ  آیا   نارائین  صاحب   مامی   کی  مست   گانڈ بجا   رہے   تھے۔۔۔۔ یا  کہ  ان  کا   لن    مامی   کی   چوت   میں  آ  جا   رہا     تھا۔دونوں   ہی    بڑے   زور   و   شور   کے   ساتھ   چدائی   میں   مصروف   تھے     نارائن      صاحب     کا       تو    مجھے   پتہ    نہیں ۔۔۔۔البتہ     ممانی      اس     فکنگ     کو     بڑا    انجوائے   کر   رہی تھی   اس    کا   واضع   ثبوت    وہ    لزت  بھری   چیخیں   تھیں۔۔ جو   کہ   ۔۔۔۔۔۔۔     ان   کے   منہ   سے مسلسل   نکل   رہیں  تھیں۔۔۔۔ مامی  کو   ایک   غیر  مرد   اور   وہ   بھی  ہندو   سے   چدواتے   دیکھ   کر     مجھے      غصہ   تو    بڑا    آیا۔  لیکن   میں  بوجہ    گیلری   میں   چُپ چاپ  کھڑا   ان   کا   تماشہ   دیکھتا   رہا ۔۔ ادھر    نارائن  صاحب  نے   گھسے   مارتے   ہوئے   اچانک   ہی   مامی     کی   گانڈ    کو    ایک  مخصوص   انداز   سے   تھپ  تھپانا   شروع  کر    دیا۔  اور پھر    یہ  دیکھ      میں   کر    حیران     رہ    گیا     کہ     جیسے   ہی   نارائن  صاحب  نے  ممانی   کی   موٹی      گانڈ   کو  تھپ  تھپایا  ۔۔۔۔تو   اسی   وقت   ممانی     نے  تیزی      کے     ساتھ       اپنی   چوت   یا   گانڈ   میں   لیا   لن  باہر   نکالا اور   پھر     اسی   رفتار          سے    گھوم    کر    ۔۔۔۔۔  نارائن  صاحب   کے   سامنے   اکڑوں    بیٹھ   گئی۔۔ اور ان   کے    لن  کو   اپنے    ہاتھ   میں       پکڑ   کر   بڑی     بے تابی       کے    ساتھ         چوسنا   شروع   کر  دیا۔۔ ابھی  ممانی   نے   تین   چار    چوپے         ہی      لگائے   ہوں  گے۔۔۔ کہ  اچانک  نارائن   صاحب   کے منہ    سے   "اوہ '   اوہ"   کی ایک پُر لطف   سی آواز  نکلی۔۔۔  اور اس کے ساتھ   ہی   ان  کا   جسم   کانپا۔۔۔۔اور  پھر وہ جھٹکے   مار   مار  کے۔۔۔۔۔۔ ممانی  کے   منہ   میں   ہی   چھوٹنا  شروع  ہو  گئے۔۔۔۔  اور اس  وقت    میری  حیرت  کی   کوئی   انتہا    نہ   رہی   کہ   جب   ممانی   نارائن  صاحب   کے   لن   کو    آخری     قطرہ     تک     چوستی    رہی  ۔۔۔۔  ۔۔۔۔ اور   ۔۔۔پھر       پتہ   نہیں    انہوں    نے   اپنے  منہ   میں  رکھی    نارائن    صاحب  کی   منی    کا    گھونٹ      بھرا      یا     نہیں ۔۔۔۔۔   البتہ        جیسے   ہی        ان    کے    لن   سے  منی    نکلنا   بند   ہوئی   ممانی     پھرتی   سے اوپر     اُٹھی۔۔۔۔اور   اس   کے   باوجود      بھی    کہ   اس   وقت   ممانی   کا   منہ اس     ہندو     نارائن      کی      منی   سے   بھرا   ہوا   تھا۔۔۔ انہوں       نے   نارائن      کے   منہ  میں  منہ   ڈال   دیا ۔۔۔۔۔۔۔اور   ایک   طویل   کسنگ   کی ۔  میں   دم   سادھے   یہ   سارا    منظر   دیکھتا     رہا ۔۔۔۔۔ ادھر  جیسے  ہی  ان  کی  طویل    کسنگ  ختم   ہوئی۔۔۔ نارائن  صاحب   نے   اپنی   نیکر  پہنی۔۔۔۔ اور  واپس      کمرے   میں     چلے  گئے ۔۔۔عین  اسی   وقت   ممانی   کی  نظر یں    اوپر     گیلری   میں   پڑ  گئی  کہ  جہاں  پر   میں  کھڑا   یہ   تماشہ   دیکھ  رہا  تھا   مجھے۔۔۔۔ یوں    کھڑا        دیکھ  کر  وہ    ایک   دم  سے    چونک   گئی۔۔۔     ۔۔۔لیکن ۔۔۔    کوئی   خاص   رسپانس    نہ   دیا ۔۔۔اسی  دوران     میں  بھی       ۔۔۔۔۔ واپس   اپنے   کمرے   میں آ   گیا   ممانی   کو  ایک   ہندو     کے   ساتھ   سیکس  کرتے    دیکھ   کر    میرے   تن   بدن     میں   آگ   لگی   ہوئی تھی۔۔۔اسی    لیئے       کمرے    میں   آ   کر    میں     اسی    غصے    کے    عالم     میں   ٹہلنا     شروع    ہو   گیا ۔۔۔ ۔۔

                   ابھی   مجھے کمرے  میں   ٹہلتے    ہوئے    تھوڑی   ہی   دیر   گزری  تھی   کہ     اچانک      ندرت      ممانی   کمرے   میں   داخل   ہوئی  ۔۔ان  کی  آنکھوں     سے   شعلے   برس    رہے   تھے ۔۔۔ کمرے   میں  داخل   ہوتے   ہی  انہوں  نے     میری   طرف   دیکھا   اور  پھر  بڑے    ہی    ترش   لہجے  میں   کہنے  لگی۔۔۔  تم  گیلری     میں   کھڑے    کیا   کر   رہے   تھے؟       پھر  غصے     میں    پھنکارتے     ہوئے   بولی۔۔۔ ایسی حرکت  کرتے   ہوئے ۔۔۔۔تمہیں   شرم   نہیں   آتی۔۔   میں   جو   کہ   پہلے   ہی   بھرا   بیٹھا   تھا   نے  ترنت  جواب   دیتے   ہوئے   کہا   کہ    شرم     مجھے      نہیں     بلکہ   آپ  کو    آنی   چایئے   ۔۔۔۔  کہ     جو      ماموں  کے   ہوتے   ہوئے  کسی   غیر مرد    ۔۔۔ اور   وہ   بھی   ایک    ہندو   کے   ساتھ   ایسا   گندہ  کام   کر  رہی   تھی۔۔۔ میری   بات  سن  کر   ممانی   غصے    میں     آگ   بگولہ  ہو  گئی      چنانچہ     وہ   تیزی    سے     آگے   بڑھیں  اور   مجھے  گریبان   سے   پکڑ   کر    پھنکارتے    ہوئے   بولی ۔۔۔ میں   کسی   ہندو   کے  ساتھ سیکس  کروں   یا    عیسائی   کے   ساتھ تمہیں   اس   سے  مطلب؟   تو   اس   پر   میں    نے  بھی  ترک  بہ  ترکی  جواب   دیتے   ہوئے   کہا  کہ    ماموں    کو   آنے   لینے   دو     میں  ان      کو     بتاؤں گا   کہ   ان   کے   پیچھے   آپ  کس  کس  کے   ساتھ    گل   چھرے    اُڑاتی     رہتی        ہو ۔۔۔ میری   بات   سنتے    ہی   ممانی   کے   چہرے   کا    رنگ    اُڑ  گیا ۔۔۔ اور    وہ    میری   طرف   دیکھتے   ہوئے    بظاہر  بولڈ  ۔۔۔۔ لیکن  نیم خوف   ذدہ ۔۔ لہجے   میں   کہنے  لگیں  ۔۔تت  تم   ایسا     نہیں  کر  سکتے۔۔۔۔۔پھر    وہ   بھپرے    ہوئے       لہجے  میں  بولیں۔۔۔۔ کان   کھول  کر   سن    لو   مسڑ عدیل     ۔۔۔میرے  بارے  میں   اگر  تم   نے  ایک لفظ   بھی   اپنے   ماموں   سے   کہا   تو    یاد   رکھو    میرے   ساتھ  تو       جو   ہو  گا ۔۔۔۔سو   ہوگا  ۔۔۔لیکن اس  کے  بعد  میں تم   کو   بھی   ادھر نہیں   رہنے   دوں  گی۔۔بلکہ تمہیں   اسی  ماموں  سے  دھکے   دے   دے کر  یہاں سے   نہ  نکلوایا   تو    میرا   نام بھی    ندرت   نہیں۔۔۔ اس  کے فوراً   بعد   وہ  مجھ   سے   مخاطب    ہو   کر   بڑے   ہی   سرد   لہجے   میں   کہنے   لگیں ۔۔۔ سنو    مسٹر!!۔۔  میں  تمہیں   آج   رات   کی   مہلت   دیتی    اگر   تم   نے   یہاں    رہنا   ہے    تو    جیسے   میں   چاہوں   گی   تمہیں  ویسے  ہی   رہنا   پڑے  گا ۔۔ ورنہ   یاد  رکھو !!!!!!!!۔۔۔۔۔  میری    یہاں     اتنی    واقفیت       ہے     کہ      میں  تم   پر    پولیس    کیس         بنوا   کر    تمہیں      ڈی پورٹ  کروا    دوں گی ۔۔۔۔۔۔ اتنی    بات  کر   کے   ممانی      تو     پاؤں  پٹختی       ہوئی     وہاں    سے   چلی   گئی۔۔ جبکہ     ادھر      میرا    غصے   کے    مارے   برا   حال    ہو   رہا تھا ۔۔  اگر  اس   وقت    میرے  پاس   ماموں  کا  سیل    نمبر  ہوتا   تو   میں   نے   اسی   وقت    ان کو  فون   کر  کے  مامی  کے   سارے  کرتوت   بتا   دینے    تھے۔۔لیکن  شکر  ہے کہ   میرے    پاس  ان    کا   فون  نمبر  نہ تھا۔۔۔۔  لیکن     دوسری   طرف     یہ بھی      حقیقت      تھی    کہ      پولیس  کا    نام  سن  کر   اندر    سے  میں  بھی    ڈر   گیا  تھا۔۔۔چنانچہ    میں      غصے     کے    عالم    میں   ۔۔۔۔ ٹہلتا   رہا۔۔۔۔اور  ممانی  اور    خاص  کر   اس   کی   دھمکیوں    کے   بارے   میں سوچتا  رہا۔۔۔  اسی   دوران      سوچتے سوچتے    ۔۔۔۔  جب   میرا   غصہ     کچھ   کم    ہوا ۔۔۔۔ تو   مجھے   ممانی   کی  پولیس   اور        ماموں  کے   ہاتھوں    دھکے   دے کر   نکلوانے     کی    دھمکی    یاد    آ   گئی۔۔  اور     میں    یہ    بات   بھی     اچھی    طرح    سے  جانتا   تھا   کہ    میرے    ماموں     پوری   طرح    سے۔۔۔اس  چڑیل   کے  قبضے   میں   تھے۔ پھر    میں     نے   سوچا     کہ       ماموں     تو    اس     قدر     مامی   کے    نیچے      لگے    ہوئے   ہیں  کہ  اگر   انہوں    نے    میری    بات    کا     یقین    نہ   کیا     تو  ؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟۔۔۔ اس    سے  آگے   میں   نہ  سوچ   سکا۔۔۔ اور    پھر    آہستہ   آہستہ     میں     اندیشہ    ہائے    دور   دراز   میں   گھرنے     لگا۔۔۔ کہ  اگر    ماموں    نے    میری    بات    نہ     مانی۔۔۔۔اور    ثبوت     لانے  کو کہا ۔۔۔ تو؟؟؟؟  

    یا      اگر   اس    حرافہ   نے    مجھے   پولیس۔۔۔۔۔۔پولیس    کا   خیال   آتے     ہی      مجھے    اپنا   گھر   بھی   یاد   آ   گیا    کہ  جن    کی  قسمت   سنوارنے   کے   لیئے    میں  پڑھائی    چھوڑ    کر        امریکہ    میں  آیا   تھا    اس کے  بعد  وہ    اپنی    بات   کو     جاری    رکھتے     ہوئے     بولا۔۔۔۔۔    جیسا   کہ   تم   جانتے   ہو  کہ   جب  میں  یہاں  سے گیا   تھا   تو  اس   وقت    میرے     ابو   ایک   سرکاری   دفتر      میں    ہیڈ کلرک    کی  پوسٹ    پر    تعینات   تھے  اور    مجھے   اچھی  طرح  سے  معلوم   ہے   کہ  ان   کی   تھوڑی   سی تنخواہ   میں   ہم  لوگ   بمشکل   گزارا   کیا    کرتے   تھے ۔ اور    خاص    کر۔۔۔   مہینے     کے   آخر     میں    تو   ہماری    حالت     بہت   ہی  زیادہ         پتلی    ہو    جایا    کرتی  تھی    جبکہ    اس    کے    برعکس   میری   امی   کے   باقی   رشتے دار    بڑے  امیر   اور    اچھے  کھاتے  پیتے    لوگ   تھے۔  اور  ان    رشتے   داروں          میں    صرف    امی     ہی  غریب     تھیں ۔۔ اور  تمہیں   تو    معلوم      ہی     ہو   گا    کہ   فیملی    فنگشنز    میں   امیر    لوگوں   کے  ہاں     ایک   غریب    رشتے    دار     کی   کیا    حالت    ہوتی    ہے   ایسے     موقعوں    پر    بے چارہ  غریب     نہ      گھر   کا     رہتا  ہے   نہ   گھاٹ   کا ۔۔ اور   چونکہ   ہم   نے   فیملی  تقریبات     میں   ایسی      ذلتیں      بہت جھیلی  تھی    اسی   لیئے   اس    غربت     کو  دور    کرنے    کے     لیئے   امی   نے  بڑے      ترلے   منتوں  کے بعد     مجھے   امریکہ    بجھوایا    تھا اور     آتے   وقت   بس     ایک       ہی     بات   کہی      تھی   کہ      امریکہ     جا   کر   میں   ڈھیر    سارے    پیسے   کماؤں  تا  کہ    وہ    بھی  اپنی       فیملی     میں    سر     اُٹھا    کر  چل سکیں۔۔۔۔۔ چنانچہ   امی   کی   اس    بات۔۔۔۔ اور   گھر    میں    پھیلی     ہوئی    غربت    کا   خیال  آتے  ہی   میں  بلکل      ٹھنڈا    پڑ   گیا ۔۔۔اور   سوچنے    لگا     کہ       فرض    کرو   اگر    میں    ماموں  کو      اس    بارے    میں     بتا   بھی   دوں   تو؟۔۔۔۔ اس     کا      مجھے    کیا     فائدہ   ہو گا؟    بلکہ      اُلٹا    نقصان   ہونے  کا  شدید    خدشہ   تھا۔۔۔۔  اور     اس    کی  وجہ      یہ   تھی     کہ    میں   اچھی  طرح  سے  جانتا     تھا  کہ   اس   کے   بعد   ممانی     نے    مجھے   نہیں   چھوڑنا  تھا۔۔۔اتنی    بات    کرنے   کے    بعد    عدیل  نے   میری   طرف    دیکھا      اور    پھر     کہنے    لگا     یقین  کرو  شاہ۔۔۔  وہ   رات    میرے   لیئے    بہت    کرب   والی    رات    تھا ۔۔۔ میں   ساری   رات   اپنے  کمرے میں   ٹہلتے   ہوئے   سوچتا   رہا۔۔۔ اور    پھر     سوچ   سوچ   کر   آخر     میں   اس   نتیجے     پر   پہنچا    کہ   ۔۔۔۔   دریا        میں   رہ   کر    مامی      تو    کیا۔۔۔۔      میں   کسی  بھی      مگر مچھ      سے    بیر    نہیں     لوں   گا     بلکہ   اپنے    کام    سے    کام    رکھتے    ہوئے      بس   ڈالر    کماؤں   گا ۔۔۔۔ ۔۔۔اس  لیئے   ۔۔۔  مامی  جائے   بھاڑ  میں۔۔۔۔ وہ  کسی   ہندو   سے    چدوائے   یا     کسی   کالے   حبشی   سے  گانڈ   مروائے۔۔۔۔۔۔۔   آئیندہ   سے     میں   نے   کسی   پنگے   میں   نہیں    پڑنا ۔۔۔اور    امی    کی  فرمائیش   پر   ڈھیر    سارے    ڈالر    کمانے   ہیں   تا    کہ   ہم     لوگ      بھی   خاندان    میں    سر    اُٹھا    کر  چل  سکیں ۔   یہ   فیصلہ   کرنے   کے   بعد   میں   بہت   پرسکون    ہو   گیا۔۔۔۔اور  پھر    پلنگ   پر   جا   کر  لیٹتے     ہی     سو گیا۔۔
     رات  گئے  سونے  کے  باوجود  بھی   صبع  سویرے     میری   آنکھ   کھل  گئی۔۔ چنانچہ  میں  جلدی  سے  اُٹھا ۔۔۔ اور   ہاتھ  منہ     دھوئے   بغیر     ہی     کمرے     سے     باہر    نکل      گیا  دیکھا   تو   ماموں    ابھی     تک    کام     سے    واپس    نہیں  آئے    تھے ۔۔۔ جبکہ     ندرت  مامی    ڈائینگ  ٹیبل   پر بیٹھی     ناشتہ   کر   رہی تھی ان     کی  حالت  کو  دیکھ  کر    صاف   پتہ   چل       رہا   تھا    کہ     میری    طرح   انہوں    نے     بھی  رات    بہت      ٹینشن    میں  گزاری   تھی ۔    ۔۔۔  میں    جھجک   کر     چلتا    ہوا    ان   کے   پاس   جا       کر  کھڑا      ہو  گیا۔۔۔   ظاہر   ہے   کہ   میرے   آنے  سے    وہ     پوری   طرح  باخبر تھیں  لیکن    بظاہر   بڑی    بے نیازی   کے   ساتھ   ڈبل روٹی   پر  جیم   لگا     رہی    تھیں۔لیکن     ان     کی     اس     بے نیازی     سے    بھی    ایک   گہرا    اضطراب  ۔۔ جھلک    رہا   تھا ۔۔۔۔ میں   کچھ  دیر    یونہی   کھڑا   رہا ۔۔  اس   دوران    انہوں    نے       ایک   نظر   میری    طرف   دیکھا  اور  پھر  اسی     بے نیازی  ۔۔۔۔۔ لیکن     اضطراری   حالت       میں      ڈبل روٹی   پر     جیم   لگاتی     رہیں ۔۔۔ یہ  دیکھ    کر     میں   نے  انہیں  اپنی    طرف   مخاطب  کیا  اور    پھنسی   پھنسی    آواز    میں     بولا۔۔۔ ممانی     جی  آئی  ایم  سوری !!۔۔  رات    جو   کچھ  بھی   ہوا   ۔۔۔میں   اس   کے  لیئے      آپ    سے    معافی    چاہتا    ہوں    ۔۔۔  میں  نے  محسوس  کیا  کہ   میرے   معافی   مانگنے     کی   بات    سن   کر    مامی  چونک   اٹھیں  تھیں  اور   میری  معافی  والی   بات   سے ۔۔۔  ان   کے  تنے   ہوئے   عضلات   کافی     ڈھیلے    پڑ   گئے   تھے۔۔۔ لیکن  بظاہر  انہوں  نے  مجھ  پر    کچھ بھی  ظاہر نہیں کیا   بلکہ  میری طرف  دیکھتے   ہوئے   بڑے   ہی    طنز یہ       لہجے      میں      کہنے   لگیں ۔۔  رات کو  تو  تم   کچھ  اور  کہہ   رہے  تھے  تو   اس   پر   میں    نے    بڑی    شرمندگی  سے   جواب    دیتے   ہوئے کہا۔۔۔۔۔  مامی جی    میں ۔۔۔۔رات  والی    بات   پر   ہی   آپ     سے   ایکسیوز  کرنے  آیا  ہوں۔۔  اس  لیئے      پلیز   مجھے   معاف  کر   دیں۔۔۔ میں    وعدہ    کرتا     ہوں     کہ   آئیندہ  سے آپ کے کسی بھی  معاملے   دخل   اندازی    نہیں   کروں گا ۔۔ میری   بات   سن   کر    مامی   کے   چہرے   پر   ایک مخصوص   قسم   کی   خبیث ۔۔۔۔لیکن      فاتحانہ     سی   مسکراہٹ   پھیل   گئی۔۔اور   انہوں   نے   کرسی   پر   بیٹھے   بیٹھے   میری   طرف   ہاتھ    بڑھایا    اور   کہنے   لگیں ۔تم  ٹھیک کہہ  رہے  ہو؟  تو   میں   نے   ان  کی  طرف  دیکھتے  ہوئے  بڑی  شرمندگی  سے  ہاتھ    بڑھاتے     ہوئے    جواب   دیا    کہ  مامی جی  میں  جو  کہہ  رہا  ہوں  خوب سوچ  سمجھ   کر کہہ  رہا  ہوں   میری    بات  مکمل    ہوتے    ہی  مامی   نے  ایک  گہری   سانس  لی ۔۔ اور  پھر  میرا  ہاتھ  پکڑتے     ہوئے       کرسی  سے  اُٹھیں    اور     مجھے   گلے  سے  لگاتے   ہوئے  بولی۔۔۔شاباش   عدیل!!!!۔۔۔ ۔۔۔ اگر تم   اپنی   اس  بات  پر قائم   رہے  تو  فائدے   میں  رہو  گے  ورنہ!!!!!!! ۔۔۔ اپنے   نقصان    کے تم  خود   ذمہ دار  ہو گئے۔۔   پھر   کچھ  دیر  بعد     میرے   ساتھ   ان  کا     رویہ   پہلے  جیسا  ہو  گیا  بلکہ  میں    نے   محسوس  کیا  کہ   اس  واقعہ     کے    بعد   وہ   میرے   ساتھ     پہلے  سے  کچھ  زیادہ    فری   ہو گئیں تھیں  ۔۔ لیکن  اس  کے   باوجود    انہوں  نے کبھی     بھولے   سے  بھی   نارائن    جی  کے ساتھ    ہونے   والے    اپنے   افئیر  کا   ذکر  تک    نہیں کیا تھا۔۔۔ ۔
   لیکن  پھر  ایک  دن   کمال ہو گیا   یہ اس  واقعہ    سے   دو   دن    بعد    کی   بات   ہے    اس    دن     ماموں   کی  نائیٹ تھی (وہ   ہفتے   میں ایک  آدھ  ہی  نائیٹ  کرتے  تھے)۔۔ڈنر کے   کافی  دیر      بعد   ۔۔۔۔ مامی   میرے  پاس آئی   اس  وقت  میں     پلنگ پر  لیٹا   سونے   کی   کوشش کر  رہا تھا۔۔۔۔۔ ۔۔۔انہوں   نے   دروازے   میں  جھانک  کر ایک نظر    میری  طرف   دیکھا  اور  پھر     بڑے     ہی     ذُو معنی      الفاظ     میں   بولی ۔۔۔  میں  ذرا   نیچے   جا  رہی  ہوں   ۔ مامی   کے  منہ  سے  یہ   بات   سنتے    ہی   میرے   سارے   بدن   میں  ایک  سنسنی   سی   دوڑ  گئی۔۔ اور   میں  یہ  سوچ   کر    ایک   دم    سے      گرم   ہو گیا ۔۔۔۔۔ کہ    میرے   بیڈ   کے    عین   نیچے   والے  کمرے    میں    مامی   اس     ہندو   نارائن   سے    چدوانے   جا    رہی     تھی۔  اور    یہ   خیال    آنے  کی  دیر تھی    کہ    اچانک    ہی     میرا    لن   تن    کر    کھڑا   ہو  گیا ۔۔۔اور  میں     نے   (بے اختیار  )         اسے    ہاتھ    میں   پکڑ   کر   سہلانا   شروع   کر   دیا۔۔۔۔ مامی    کے   جانے   کے    تھوڑی      ہی   دیر   بعد  مجھے   اپنی     کھڑکی   میں    سے  ( جو کہ  اس  وقت  کھلی   ہوئی  تھی )       ایک   تیز سسکی   سنائی   دی ۔۔۔۔اس سسکی   کا   سننا         تھا   کہ  اچانک  میرے  دل   میں    یہ    زبردست      خواہش   جاگی   کہ   کیوں   نہ     مامی    کا    لائیؤ    شو  دیکھا   جائے۔۔۔ اس  خواہش    کا     ذہن     میں   آنے   کی   دیر تھی   کہ  میں   بے حد     بے چین   ہو گیا  ۔۔۔۔۔۔ میں    نے   اس  خیال  کو  اپنے   ذہن  سے  جھٹکنے      کی   بڑی   کوشش    کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لیکن   جوں  جوں    میں   اسے   اپنے   ذہن   سے جھٹکنے کی کوشش کرتا   ۔۔۔۔تُوں تُوں   یہ   خیال    اتنی    ہی  شدت       سے  ابھر  کر ۔۔۔   میرے     سامنے آ جاتا  ۔۔ میں  سمجھتا   ہوں  کہ  اس  میں   زیادہ  قصور  مامی   کا  تھا   جو  کہ   عین  میری   کھڑکی   کے   نیچے   اونچی   آواز    میں  مست  اور   شہوانی   سسکیاں   بھر رہی تھیں   جنہیں سن سن کر  میں    پاگل   ہوا   جا رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ادھر   جب    میری          یہ  خواہش   حد  سے  زیادہ    بڑھ   گئی۔۔۔۔تو    آخرِ کار  مجبور  ہو  کر  میں  اپنے   پلنگ   سے  نیچے     اترا ۔۔۔اور   بڑے   محتاط  طریقے  سے  چلتا      ہوا  ۔۔۔گیلری   کی طرف  بڑھ گیا۔۔۔  اس  کے  ساتھ  ساتھ    مجھے  اس   بات   کا     دھڑکا   بھی    لگا    ہوا    تھا    کہ    اگر   مامی   نے    مجھے   ایسا  کرتے     ہوئے     دیکھ  لیا   تو       وہ   میرے    ساتھ  بڑا      برا  سلوک      کرے  گی۔۔ ۔لیکن اس   کے   باوجود   بھی    میں   ا دھر    ادھر   دیکھتے   ہوئے۔۔۔۔۔دھیرے   دھیرے     سیڑھیاں      اترنے   لگا۔۔۔۔ ۔۔۔۔جیسے جیسے   میں  سیڑھیاں  اترتا  گیا    ویسے ویسے  ۔۔۔  مامی     کی  مست  سسکیوں  کی  آواز  یں    اور  بھی   نمایاں   ہونا    شروع   ہو گئیں۔۔۔جنہیں   سن سن کر  میرا  لن    مزید    تن  گیا ۔۔ سیڑھیوں   کے قریب   ہی     نارائن  صاحب   کا  کمرہ  واقع  تھا   چنانچہ   جیسے  ہی   میں  آخری   سیڑھی    اترا   ۔۔۔۔اور  نارائن  کے  دروازے  کی  طرف    دیکھا   تو   اس  کے  دونوں    پٹ     پوری   طرح   سے    کھلے   ہوئے  تھے    ان    لوگوں    نے   دروازہ     بند  کرنے  کی   زحمت   ہی   نہیں  گوارا   کی تھی۔ یہ  دیکھ   کر   میں خاصہ   مایوس  ہوا ۔ ابھی    میں سوچ     ہی  رہا  تھا   کہ     اب    میں     کیا   کروں  ؟    کہ۔۔۔ اسی  اثنا   میں  مامی کی شہوت    سے   بھر پور  سسکی   سنائی   دی آؤؤؤچ چ چ چ۔۔    جسے سنتے    ہی    میرے  لن  کو  ایک شدید  جھٹکا  لگا۔ عین  اسی  وقت  میرے  ذہن   میں  اس    کھڑکی   کا   خیال   آ گیا   جو  کہ   میری کھڑکی  کے   بلکل   نیچے  واقع  تھی   یہ  خیال  آتے   ہی   میں   بڑے     ہی    محتاط    قدم   اُٹھاتا    ہوا         کمرے   کے  پچھلی    طرف     چل   پڑا   کہ   جہاں   پر  یہ  کھڑکی   واقع   تھی    توقع        کے  عین   مطابق          نارائن   کے  کمرے   کی  کھڑکی  کھلی  ہوئی      تھی ۔۔۔   میں سر   جھکا  کر   چلتا    ہوا    جا     کر     کھڑکی    کے   نیچے   بیٹھ  گیا  کمرے   سے   روشنی   چھن  چھن  کر  باہر آ  رہی تھی     چونکہ   ان   کی    کھڑکی  پر جالی  لگی   ہوئی تھی    ۔۔۔ اور   ویسے  بھی    کمرے   میں   فل لائٹس   آن  تھیں اس  لیئے  اندر  سے  باہر  کا    منظر   دیکھے   جانے   کا    کوئی   احتمال   نہ   تھا   البتہ    باہر  سے   اندر  کا   سارا   منظر    صاف    نظر  آ  رہا  تھا ۔۔۔۔تمام   سچوئیشن    کا    جائزہ       لے   کر     میں  نے    ۔۔۔۔۔۔     دھیرے   دھیرے   ۔۔۔ لیکن     بڑے    محتاط   طریقے سے  اپنا سر اُٹھایا  ۔۔۔اور  دھڑکتے     دل   کے  ساتھ     کھڑکی  کے  ایک  طرف  کھڑا   ہو  گیا۔۔۔۔اس  وقت     میرا   جسم     پسینے   میں شرابور ۔۔۔۔ اور  دل دھک دھک    ۔۔۔۔ کر رہا تھا۔۔۔۔  اس  کے ساتھ ساتھ   مامی  کے  خوف  سے  میری     ٹانگیں   بھی      کانپ  رہیں تھیں ۔۔۔۔۔ ۔۔۔ لیکن    مجھ   پر       ان    کا     سیکس      سین   دیکھنے    کا   اس   قدر شوق   چڑھا   ہوا   تھا  کہ     اتنے   بڑے         رسک  کے   باوجود  میں  نے   کانپتی     ہوئی   ٹانگوں    کے  ساتھ۔۔۔۔ دھیرے دھیرے  سر  اُٹھا  کر   اندر   کی    جانب    دیکھا