333

مسکراہٹیں قسط3

کر کہا‘‘ نہیں ہومر، تم یہیں رہو گے، اور ہیوبرٹ تم بھی۔ اچھا،  اب ناک کو دفع کرو اور جو کچھ پڑھا ہے اس کے متعلق بتاؤ۔’’

    کلاس خاموش تھی۔‘‘ کچھ تو کہو۔’’

    مسخرے جوزف نے اٹھ کر ایک رباعی پڑھی۔

    ‘‘ ناکیں لال لال ہیں

    بنفشہ نیلا نیلا ہے

    جماعت نیم مردہ ہے

    آپ کا رنگ پیلا ہے۔’’

    ‘‘ کچھ اور۔۔۔ ؟’’ استانی نے پوچھا۔

    ‘‘جہاز راں اور سیاح لوگوں کی ناکیں پکوڑے جیسی ہوتی ہیں۔’’ ایک لڑکی بولی۔

    ‘‘جڑواں بچوں کی دو ناکیں ہوتی ہیں۔’’ جوزف بولا۔

    ‘‘ ناک ہمیشہ آگے ہوتی ہے، سر کے پیچھے کبھی نہیں ہوتی۔’’ جوزف کا ایک ساتھی بولا۔

    ‘‘ کچھ اور۔۔؟؟’’ استانی برابر یہی کہے جا رہی تھی۔‘‘ اچھا تم بتاؤ ہنری’’

    ‘‘ جی میں ناکوں کے بارے میں کچھ نہیں جانتا۔’’

    ‘‘ حضرت موسیٰ کے متعلق تو جانتے ہو؟’’ جوزف نے ہنری سے پوچھا۔

    ‘‘ ہاں! انجیل میں ان کا ذکر ہے۔’’

    ‘‘ ان کے ناک تھی یا نہیں؟’’

    ‘‘ تھی۔’’

    ‘‘تو کہہ دو کہ حضرتِ موسیٰ صاحبِ ناک تھے۔۔ تمہیں معلوم نہیں کہ ہم تاریخِ قدیم پڑھ رہے ہیں۔ تم لوگ علم حاصل کرنے کی کوشش ہی نہیں کرتے۔’’

    ‘‘کچھ اور۔۔’’ استانی نے پھر پوچھا۔

    ‘‘ خیالات اڑتے ہیں، قدم چلتے ہیں اور ناک بہتی ہے۔’’ جوزف بولا۔

    ‘‘ مس ہکس، دوڑ میں جانے کی اجازت دے دیجیے۔’’ ہومر نے عاجزی سے کہا۔

    ‘‘ مجھے کسی دوڑ ووڑ کی خبر نہیں۔ اچھا کوئی اور۔۔؟’’

    ‘‘ جی میں نے اتنا کچھ تو کہا ہے ناکوں کے متعلق۔’’ ہومر بولا۔

    ‘‘ وہ سب مہمل تھا۔’’

    اتنے میں گھنٹی بجی،  بچے منتشر ہو گئے۔ صرف ہومر اور ہیوبرٹ رہ گئے۔

تعویذ

    چار بجے شیطان چائے پینے آئے۔  جب ہم پی کر باہر نکلے تو دفعتاً انہیں محسوس ہوا کہ چائے ٹھنڈی تھی، ۔ چناچہ ہم ان کے ہوسٹل گئے وہاں کھولتی ہوئی چائے پی گئی،  لیکن وہ مطمئن نہ ہوئے۔  منہ بنا کر بولے کہ یہ چائے بھی نامکمل رہی،  کیونکہ اس کے ساتھ لوازمات نہیں تھے۔  طے ہوا کہ کسی کیفے میں جا کر باقاعدہ چائے پی جائے، ۔۔

    مصیبت یہ ہے کہ شیطان کو ہر وقت چہاس لگی رہتی ہے اور وہ ان لوگوں میں سے ہیں،  جنہیں دن میں دو مرتبہ قیامت کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔  ایک تو جب علی الصبح نو دس بجے اٹھتے ہیں،  تو ان کے سامنے دنیا اندھیر ہوتی ہے اور وہ سوچتے ہیں کہ، ۔۔ع۔  منحصر مرنے پہ ہو جس کی امید۔ ۔۔ لیکن چائے کی چند پیالیوں کے بعد انہیں یکایک پتا چلتا ہے کہ ع ابھی عشق کے امتحاں اور بھی ہیں۔ ۔۔۔  یہی تماشا چار بجے چائے کے وقت ہوتا ہے۔  ساڑھے تین بجے سے بیزار ہوتے ہیں اور ساڑھے چار بجے ان جیسا مسخرہ ملنا محال ہے۔  اگر وہ چائے کی دریافت سے پہلے اس دنیا میں ہوتے تو خدا جانے ان کا کیا حال ہوتا۔ ۔

    ہم سائکلوں پر ٹہلتے ٹہلتے کیفے میں پہنچے جہاں ہمیں اکثر بڈی (BUDDY) ملا کرتا تھا۔  اندر جا کر دیکھا تو سب کچھ سنسان پڑا تھا،  فقط ایک کونے میں ایک نحیف و نزار نوجوان بیٹھا چائے پی رہا تھا۔  ہم اس کے قریب جا بیٹھے۔  ہماری پشت اس کی پشت کی طرف تھی۔

    سسکیوں کی آواز نے ہمیں چونکا دیا وہ سُبڑ سُبڑ رو رہا تھا۔  چہرے سے پھسلتے ہوئے آنسو سینڈوچز،  کیک کے ٹکڑوں اور چائے کی پیالی میں ٹپ ٹپ گر رہے تھے۔  غور سے دیکھتے ہیں تو یہ امجد تھا۔  امجد ہمارا پرانا دوست تھا،  جو مدت سے لاپتہ تھا۔  ہم اس کی میز پر جا بیٹھے۔  بسُور بسُور کر اس نے علیک سلیک کی اور پھر رونے میں مصروف ہو گیا۔  شیطان بولے۔  دیکھئے مولانا،  اگر آپ سینڈوچز یا چائے کے سلسلے میں رو رہے ہیں تو بہتر یہی ہو گا کہ کم از کم یہاں سب کے سامنے نہ روئیں۔  کیونکہ جس شخص نے یہ چیزیں تیار کی ہیں وہ سامنے کھڑا دیکھ رہا ہے اور بیحد حساس اور جذباتی ہے۔  اسے شدید اذیت پہنچے گی۔  لیکن امجد بدستور مصروف رہا۔ ۔

    شیطان نے پوچھا۔  "خان بہادر صاحب کا کیا حال ہے ؟"

    "کون سے خان بہادر صاحب کا؟" امجد نے برا منہ بنایا۔

    "کوئی سے خان بہادر صاحب کاً

    "اوہ!"

    ہم نے بہتیری کوشش کی کہ اس نالائق سے باتیں کریں،  لیکن کچھ نہ بنا۔  اتنے میں بڈی آ گیا۔  ہم نے لگاتار روتے ہوئے امجد کا تعارف لگاتار ہنستے ہوئے بڈی سے کرایا۔ اب بڑی سنجیدگی سے وجہ پوچھی گئی اور امجد نے بتایا کہ اس کی صحت روز بروز گرتی جا رہی ہے بلکہ بالکل ہی گر گئی ہے۔  اس کی آنکھوں کے سامنے کبھی تارے ناچتے ہیں اور اندھیرا چھا جایا رہتا ہے۔  وہ اپنے آخری امتحان میں مدت سے فیل ہو رہا ہے۔  لگاتار فیل ہو رہا ہے۔  اگر محنت کرے اور پرچے اچھے ہو جائیں،  تب بھی وہ فیل ہو جاتا ہے۔  اور اگر پرچے خراب ہو جائیں،  تب بھی۔  اس کی قسمت ہمیشہ اسے دھوکہ دیتی ہے۔  وہ کسی پر عاشق بھی ہے۔  محبوب نے پہلے تو سب کچھ کہہ سن لیا اور بعد میں بڑے مزے سے اسے ڈبل کراس کر دیا۔  آج کل محبوب بالکل خاموش ہے۔  ان کے ہاں آنا جانا بھی مدت سے بند ہے۔  کیونکہ ان کے ہاں ایک بےحد بھاری بھرکم اور خونخوار کتا کہیں سے منگایا گیا ہے۔  جو امجد کو بالکل پسند نہیں کرتا۔  بلکہ اس سے خفا رہتا ہے۔  محبوب کے ہاں ایک اور صاحب کی آمد و رفت بھی شروع ہو گئی ہے جو شاید رقیب رو سیاہ بننے والے ہیں۔  محبوب کے ابا امجد کو یونہی سا بیکار لڑکا سمجھتے ہیں اور انھوں نے شادی سے انکار کر دیا ہے۔  کیونکہ امجد کچھ نہیں کماتا۔ ۔۔ شیطان اور مقصود گھوڑے کی شہزادہ ہے۔  لیکن سب سے بڑی مصیبت یہ ہے کہ اس کا کسی چیز کو دل ہی نہیں کرتا۔  بالکل جی نہیں چاہتا۔  یہاں تک کہ چائے سامنے رکھی ہے اور پینے کو جی نہیں چاہتا۔

    گفتگو کے موضوع بدلتے رہے اور ہم نے امجد سے لیکر امجد تک گفتگو کی۔  شیطان بولے، ۔ " بھئی تمھاری مصیبتیں تو اتنی ہیں کہ ایک   GUADIAN ANGEL    تمہارا کام نہیں کر سکتا۔  تمہارے لئے تو فرشتوں کا سنڈیکیٹ بیٹھے گا۔ "

    بڈی نے کہا، ۔"تم آج سے ورزش شروع کر دو۔  ہلکی پھلکی اور مقوی غذا کھاؤ۔ علی الصبح اٹھ کر لمبے لمبے سانس لیا کرو۔  قوت ارادی پیدا کرو۔  خوب محنت کر کے امتحان پاس کر لو۔  ملازمت ضرور مل جائے گی اور سب کچھ ٹھیک ہو جائے گا۔ " ادھر امجد نے اور زیادہ رونا شروع کر دیا۔  اب تو وہ باقاعدہ بھوں بھوں رو رہا تھا۔  آخر طے ہوا کہ امجد کی مدد کی جائے اور کل پھر یہیں ملاقات ہو۔

    اگلے روز ہم سب وہیں ملے۔  اتفاق سے کالج کی چند لڑکیاں بھی وہاں بیٹھی تھیں۔  ایسے موقعوں پر میں ہمیشہ ظاہر کیا کرتا ہوں جیسے شیطان کے ساتھ نہیں ہوں کیونکہ ہمارے کالج کی لڑکیاں شیطان کو پسند نہیں کرتیں۔  جتنی دیر وہ ہماری دیکھتی رہیں،  میں کسی اور طرف دیکھتا رہا۔ ان کے جانے پر گفتگو شروع ہوئی۔

    "امجد! تم موسیقی پر فدا ہو جاؤ۔ " شیطان بولے۔ " یہ پیازی ساڑھی والی لڑکی بڑا اچھا ستار بجاتی ہے۔  تمہیں کوئی ساز بجانا آتا ہے ؟ "

    "ہاں!"

    "کون سا؟ "

    "گراموفون۔"

    "تب تم موسیقی کو پسند نہیں کرو گے۔  اچھا یہ بتاؤ کہ تم آخری مرتبہ اس لڑکی سے ملے تو کیا باتیں ہوئی تھیں ؟"

    "میں نے اسے شادی کے لیے کہا تھا۔ ۔۔۔ ۔۔۔  اور یہ کہ میں کچھ بھی نہیں ہوں۔  نہ کچھ کما سکتا ہوں۔  نہ کسی قابل ہوں۔  نہ کچھ کر سکتا ہوں۔  اور نہ کچھ کر سکوں گا۔  "

    "پھر؟"

    "پھر اس نے کچھ نہیں کہا اور آج تک خاموش ہے۔ "

    "تمھارے ہونے والے خسر اچھے خاصے قبر رسیدہ بزرگ ہیں۔  میں انہیں بالکل پسند نہیں کرتا۔  لیکن لڑکی بہت اچھی ہے۔  جتنے تم شکل و صورت میں بخشے ہوئے ہو،  اتنی ہی وہ حسین ہے۔  تمہیں احساس کمتری ہو جائے گا بھلا کبھی تمھاری خط و کتابت بھی ہوئی تھی ؟"

    "ہوئی تھی !" کہہ کر امجد نے خطوط کا پلندہ میز پر رکھ دیا۔  شیطان نے جلدی سے خطوط کو سونگھا اور بولے " جلدی ہے اس لیے ساری باتیں تو کبھی فرصت میں پڑھیں گے، البتہ خطوط کو ترتیب وار رکھ کر صرف القاب پڑھ کر سناتا ہوں۔  "

    ترتیب وار القاب یہ تھے، ۔ "۔ ۔۔۔ ۔جناب امجد صاحب"۔ ۔۔۔ ۔"امجد صاحب"۔ ۔۔۔ ۔۔ "امجد"۔۔۔۔ ۔۔ "پیارے امجد"۔۔۔۔ ۔۔۔ "امجد"۔۔۔۔ ۔۔ "امجد صاحب"۔۔۔۔ ۔"جناب امجد صاحب"

    ادھر امجد نے پھر رونا شروع کر دیا۔  شیطان بولے " میں رات بھر سوچتا رہا ہوں کہ تمہارے لیے کیا کیا جائے۔  یہاں سے بہت دور جنگلوں میں ایک پہنچے ہوئے بزرگ رہتے ہیں۔  ان تک میری رسائی ہو سکتی ہے۔  اچھا تعویذ گنڈوں پر کس کس کا اعتقاد ہے ؟"

    سوائے بڈی کے ہم سب معتقد تھے۔  بڈی نے پوچھا،۔ "تعویذ گنڈے کیا ہوتے ہیں ؟"

    "کیا امریکہ میں تعویذ وغیرہ نہیں ہوتے ؟"

    "نہیں تو۔"

    جب بڈی کو سب بتایا گیا تو وہ بولا، ۔ " ہمارے ہاں  Good luck    کے لیے شگون ہوتے ہیں۔  مثلاً سیاہ بلی کا دیکھنا یا سڑک پر گھوڑے کی نعل مل جانا۔ ۔۔۔ ۔ یہ تعویذ وغیرہ نہیں ہوتے۔ ۔۔۔ ۔ لیکن مجھے شگونوں پر اعتقاد نہیں ہے۔  کیونکہ ایک مرتبہ میں ایک لڑکی سے شادی کرنا چاہتا تھا۔  نجومی نے مجھے بتایا کہ اگر مجھے اگلے اتوار کو غروب آفتاب سے پہلے سڑک پر گھوڑے کی نعل مل گئی،  تو بہت اچھا شگون ہو گا اور غالباً اس لڑکی سے میری شادی ہو جائے گی۔  اگلے اتوار کو میں نے منہ اندھیرے اٹھ کر سڑکیں ناپنا شروع کر دیں۔ دوپہر ہوئی،  سہ پہر آئی۔  گھوڑے کی نعل تو کیا گدھے کی نعل بھی نہ ملی۔  آخر میں نے دو اصطبلوں کا رک کیا۔  وہاں بھی ناکامی ہوئی۔  شام ہونے پر میں بہت گھبرایا۔  ہمارے پڑوس میں ایک گھوڑا رہتا تھا۔  میں نے چند اوزار اٹھائے،  اور اپنے بھائی کو ساتھ لیا۔  اور چپکے سے اس گھوڑے کو باندھ بوندھ کر رکھ دیا گھوڑا ہرگز رضامند نہیں تھا،  لیکن ہم نے زبردستی اس کی نعل اتار لی۔  باہر نکل کر جو دیکھا تو سورج غروب ہو رہا تھا اگلے روز میں نے اس لڑکی سے شادی کیلئے کہہ دیا اور اس نے کسی اور سے شادی کر لی۔  تب سے گھوڑے کی نعل سے میرا اعتقاد اٹھ گیا ہے۔  کیا لغویت ہے۔  اگر گھوڑے کی نعل اتنی ہی مبارک چیز ہے،  تو گھوڑوں کو بےحد خوش نصیب ہونا چاہئیے۔ "

    "لیکن تمہارا واسطہ مشرق کت عاملوں سے نہیں پڑا۔  یہاں تو ایسے ایسے عمل کیے جاتے ہیں کہ سن کر یقین نہیں آتا۔  شکلیں بدل جاتی ہیں۔  تقدیریں بدل جاتی ہیں۔  یہاں تک کہ دنیا بدل جاتی ہے۔ "

    "ہاں ! تم نے پیروں،  فقیروں اور سنیاسیوں کے متعلق نہیں پڑھا؟"

    "میں نے فلموں میں دیکھا ہے کہ ہندوستاں میں بڑی بڑی پراسرار باتیں ہوتی ہیں۔  یہاں کے فقیر کچھ پڑھ کر ایک رسے پر پھونک دیتے ہیں،  رسہ سیدھا کھڑا ہو جاتا ہے اور وہ رسے پر چڑھ جاتے ہیں۔  رات کو وہ میخوں کے بستر پر سوتے ہیں۔ "

    "یقیناً! تم خود دیکھ لو گے۔  میں کوشش کر رہا ہوں کہ امجد کیلئے ان بزرگ سے تعویذ حاصل کروں اگرچہ یہ بہت مشکل کام ہے۔  اول تو وہ بزرگ کسی کو تعویذ دیتے ہی نہیں۔  اگر کبھی خوش ہو کر دیتے ہیں تو صرف سال میں ایک آدھ مرتبہ۔  لیکن میں اپنی ساری کوشش صرف کر دوں گا۔  ان کا تعویذ جادو سے کم اثر نہیں رکھتا ناممکن سے ناممکن باتیں ممکن ہو جاتی ہیں۔  اگر مل گیا تو امجد کی تقدیر بدل جائے گی۔  اور امجد تمہیں میری ہدایات پر عمل کرنا ہو گا۔  اب تمہارے لئے صرف دو باتیں رہ گئی ہیں یا تو میری ہدایات پر عمل کرو اور یا۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔  پھر ان پر عمل کرو۔ "

شیطان نے ایک لمبی چوڑی فہرست بنائی۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔ امجد دو دن بھوکا رہے گا،  صرف اسے بکری کا دودھ اور چھوہارے ملیں گے۔  وہ کسی سے بات نہیں کرے گا۔ دوسرے روز شام کو حجامت کرائے گا،  پھر سفید لباس پہن کر عطر لگا کر رات بھر ایک وظیفہ پڑھے گا۔ اگلے روز تالاب میں کھڑا ہو کر دعا مانگے گا اور سورج کی پہلی شعاع کیساتھ اس کے بازو پر تعویذ باندھ دیا جائے گا۔ ۔۔ وغیرہ وغیرہ، ۔۔

امجد نے فقط ایک اعتراض کیا۔  وہ یہ کہ وہ سر پر استرا ہرگز نہیں پھروائے گا۔ البتہ قینچی سے حجامت کرا لے گا، ۔

شیطان ایک ہفتے تک غائب رہے۔  پھر یکایک تعویذ لے کر نازل ہوئے۔  پہلے تو ان بزرگ کے متعلق باتیں سنائیں کہ انہوں نے اپنی ساری عمر جنگلوں میں گزاری ہے۔  بہت کم کھاتے ہیں۔  بولتے تو بالکل بھی نہیں۔  کوئی شخص ان کے پاس تک نہیں پھٹک سکتا۔  ان کے کمالات معجزوں سے کم نہیں۔  ان سے تعویذ حاصل کرنا بالکل ناممکن ہے۔  لیکن شیطان اپنی خوش قسمتی اور محض اتفاق سے کامیاب ہوئے ہیں ہم ان کی باتوں سے بہت متاثر ہوئے۔

شیطان نے رومال کھول کر ہمیں تعویذ کی زیارت کرائی۔  تعویذ موم جامے میں لپٹا ہوا تھا اور اس سے عنبر کی ہلکی ہلکی مہک آ رہی تھی۔  میں نے اور امجد نے اسے بوسہ دیا اور آنکھوں سے لگایا۔  بڈی نے بھی ہماری تقلید کی۔، ۔

امجد دو روز شیطان کیساتھ رہا۔  تیسرے روز اس کے داہنے بازو پر تعویذ باندھا گیا۔  شیطان ایک فاتحانہ انداز میں بولے "لو بھیا! سمجھ لو کہ آج تمہاری قسمت جاگ اٹھی۔  اب اس مقدس طاقت کے کرشمے دیکھو۔ "

ہم نے چند روز بعد امجد کو دیکھا۔  بسورتے ہائے چہرے پر اب مسکراہٹ کھیل رہی تھی۔  لباس بھی پہلے سے بہتر تھا۔  آہستہ آہستہ تعویذ کی برکت سے تبدیلیاں آنی شروع ہو گئیں۔  اب ہر کام کیلئے امجد کا جی کرنے لگا۔  وہ چست ہو گیا ابیا تو وہ نہایت شوخ ٹائی لگاتا اور یا رنگین سکارف پہنتا۔  ہمیشہ اس کے کوٹ کے کاج میں ایک مسکراتا پھول اٹکا ہوتا۔

امجد کے امتحان میں ایک ہفتہ رہ گیا تھا۔  میں اور شیطان اس کے ہاں گئے اس کی دو تین من پختہ کتابوں کو دیکھا۔  شیطان کہنے لگے کہ کتابیں بہت زیادہ ہیں اور وقت بہت تھوڑا ہے۔  میرے خیال میں کچھ ہم پڑھتے ہیں،  کچھ تم پڑھو۔  باقی کتابیں بڈی پڑھے گا۔  امجد نے کہا مذاق مت کرو کوئی تدبیر بتاؤ۔

شیطان نے مشورہ دیا کہ کتابوں کے خلاصے،  نوٹ اور ایسی ویسی چیزیں امتحان میں ساتھ لے جاؤ اور دل کھول کر نکل کرو۔  امجد نہ مانا۔  شیطان بولے۔

ارے میاں !ایسا تعویذ بازو پر باندھا ہے کہ نقل تو نقل اگر کوئی سنگین جرم ترین جرم بھی کرآؤ تب بھی پتہ نہ چلے۔  اس کا سایہ ہمیشہ تمہارے سر پر رہے گا۔  غرضیکہ امجد کی خوب ہمت بندھائی گئی اور اس میں امتحان میں خوب نقل کی۔  لہذا پرچے نہایت اچھے ہوئے۔  نتیجہ نکلا تو امجد اول آیا۔  اب تعویذ پر ریشمی غلاف چڑھایا گیا۔  بڈی نے تعویذ کو کئی بار چوما۔  میرا جی بری طرح چاہ رہا تھا کہ ایک ایسا ہی تعویذ مجھے بھی مل جائے۔

اب سوال ملازمت کا تھا۔  ایک جگہ درخواست تو دے دی گئی،  لیکن امید کسی کو بھی نہ تھی کچھ دنوں بعد بورڈ کے سامنے انٹرویو تھا۔  بورڈ کے صدر نزدیک ہی رہتے تھے۔  شیطان نے امجد کو مشورہ دیا کہ اگر تم صدر صاحب کے سامنے کئی بار جاؤ تو تعویذ کی برکت سے وہ اس قدر متاثر ہوں گے کہ فوراً منتخب کر لیں گے۔  امجد نے اگلے روز سے ان کا تعاقب شروع کر دیا۔  ان کے گھر گیا۔ انہوں نے صاف کہہ دیا کہ وہ ملازمت کے سلسلے میں کوئی گفتگو نہیں کرنا چاہتے، جو کچھ گو گا انٹرویو کے وقت سنادیا جائے گا۔  امجد منہ لٹکائے واپس آیا۔  شیطان نے ڈانٹا کہ پھر یہ تعویذ کس واسطے باندھے پھر رہے ہو۔  پیچھا مت چھوڑو ان کا۔  اگلے روز امجد پھر ان کی کوٹھی پر جا کھڑا ہوا۔  دس بجے وہ دفتر گئے،  یہ ساتھ ساتھ گیا۔  چار بجے واپس آئے،  یہ ساتھ واپس آیا کلب گئے،  رات کو پکچر گئے،  امجد سائے کی طرح ساتھ رہا،  اگلے روز شاپنگ کیلئے گئے۔  امجد بھی شاپنگ کیلئے گیا۔  وہ سٹیشن پر کسی سے ملنے۔  امجد بھی گیا۔  غرضیکہ بازار، ڈاک خانہ،  کیفے،  سینما، باغ،  اور جہاں بھی وہ جاتے یہ ساتھ رہتا۔  یہاں تک کہ وہ پچاس ساٹھ دور ایک جگہ گئے۔  امجد بھی پچاس ساٹھ میل دور اسی جگہ گیا۔  انہوں نے بہتیرا کہا کہ میں وعدہ کرتا ہوں کہ انٹرویو میں تمھارا خیال رکھوں گا۔  لیکن شیطان کی ہدایت کے مطابق امجد بولا کہ وعدہ نہیں ابھی لے لیجئے۔ ۔ انہوں نے اسے دھمکایا چمکایا بھی،  لیکن اس پر کوئی اثر نہ ہوا۔  کہنے لگا میں ساری عمر اسی طرح آپ کیساتھ ساتھ رہوں گا۔  آخر وہ اس قدر تنگ آئے کہ انہوں نے امجد کو منتخب کر لیا۔  اس کامیابی پر ایک زبردست دعوت ہوئی۔  تعویذ پر اب پیتل کا خول چڑھایا گیا اور ہر وقت اسے معطر رکھا جاتا تھا۔  شیطان کی معرفت اس بزرگ کیلئے کچھ نذرانہ بھی بھیجا گیا۔

جسے انہوں نے بمشکل قبول کیا۔  میں نے مصمم ارادہ کر لیا کہ میں بھی ایک تعویذ اپنے لیے بنواؤں گا۔  مڈی نے بھی شیطان سے یہی خواہش ظاہر کی۔

اب اس لڑکی کی باری آئی۔  سب سے پہلے تو وہاں رسائی کا سوال تھا۔  ان کا نیا کتا نہایت ہی ہیبت ناک اور آدم خور قسم کا تھا۔  اسے دیکھ کر ہی امجد کی روح قفس عنصری سے پرواز کر جاتی تھی۔  بڈی نے مشورہ دیا کہ کچھ کھلا پلا دیا جائے،  جس سے وہ انا للہ ہو جائے۔  لیکن وہ کتا کچھ ایسا بورژوا ذہنیت کا واقع ہوا تھا کہ ایسی ویسی چیزوں کو سونگھتا تک نہیں تھا۔  شیطان نے تعویذ چھو کر کہا۔ ۔۔۔ ۔۔ جانتے بھی ہو یہ کیا چیز ہے،  تمہارے بازو پر ؟ یہ تعویذ ہے ہمیشہ تمھاری حفاظت کرے گا۔  خواہ تم شیروں سے دل لگی کرتے پھرو،  بال تک بیکا نہ ہو گا۔ کافی لمبی بحث کے بعد امجد مانا۔  اگلے روز علی الصبح امجد نے کتے کی ایسی مرمت کی کہ طبعیت صاف کر دی۔  اسی دن سے امجد اور کتا بڑے گہرے دوست بن گئے۔  امجد کو دیکھ کر وہ نہ صرف دم ہلاتا،  بلکہ باقاعدہ مزاج پرسی کر کے ساتھ ساتھ چلتا۔

وہ صاحب جو گھر آیا کرتے تھے ان کیلئے بھی یہی نسخہ پیش کیا گیا۔  لیکن بڈی نہ مانا،  بولا کہ کتے اور انسان میں کشھ تو فرق ہونا چاہئیے۔  بہتر ہو گا کہ پہلے انہیں دھمکایا چدمکایا جائے۔  وہ صاحب قد میں امجد سے دگنے تھے۔  امجد پہلے تو بہت ڈرا لیکن جب شیطان نے ڈانٹ کر کہا کہ اس طرح وہ اپنی نہیں بلکہ تعویذ کی توہین کر رہا ہے،  اور سے کوئی چھو تک نہیں سکتا،  تو امجد ان صاحب سے ملا اور انہیں صاف صاف بتا دیا کہ خبردار جو آئندہ سے اس گھر میں قدم رکھا۔  انھوں نے حیران ہو کر پوچھا کہ میاں تم ہو کون ؟ یہ بولا کہ میں کوئی بھی ہوں،  لیکن واضح رہے کہ میں نے آپ جیسے بہت سوں کو سیدھا کیا ہے۔ بس خیریت اسی میں ہے کہ آئندہ آپ اس گھر کا رخ نہ کریں۔  امجد نے کچھ اس طرح گفتگو کی کہ وہ صاحب واقعی سہم گئے۔  امجد نے چلتے وقت کہا کہ میرا ارادہ تو کچھ اور تھا۔  لیکن فی الحال صرف انتباہ کرنے پر اکتفا کرتا ہوں۔  آپ سمجھدار ہیں تو سمجھ جائیں گے۔  اس دن کے بعد وہ صاحب ایسے غائب ہوئے جیسے گدھے کے سر سے سینگھ۔

امجد لڑکی سے ملا۔  خدا جانے کیا باتیں ہوئیں،  لیکن سنیچر کو ان دونوں کو میٹنی پر دیکھا گیا۔  لڑکی واقعی نہایت پیاری تھی۔ امجد اس کے سامنے بالکل حکم کا غلام معلوم ہو رہا تھا۔  لیکن خوب اکڑ اکڑ کر چل رہا تھا۔

    بڈی تو اب تعویذ پر باقاعدہ ایمان لے آیا تھا۔  بولا کہ میں یہ سب کچھ لکھ کر امریکہ کے سب سے مشہور سائنس کے رسالے میں بھیجوں گا میں نے اس قدر زود اثر اور کارآمد عمل آج تک نہیں دیکھا۔  یہ کسی جادو سے کم نہیں۔  معجزے ابھی ختم نہیں ہوئے۔  مشرق واقعی نہایت پراسرار جگہ ہے۔

    تعویذ پر چاندی کا خول چڑھایا گیا۔  ہر دوسرے تیسرے ہم سب اسے چومتے اور آنکھوں سے لگاتے

    اب امجد کی تمام مشکلیں حل ہو چکی تھیں،  صرف اس کی شادی باقی تھی۔  لیکن یہ مشکل سب سے کڑی تھی،  کیونکہ اس کے ہونے والے خسر واقعی نہایت گرم خشک انسان تھے۔  امجد نے کئی مرتبہ پیغام بھجوایا،  لیکن ہر مرتبہ پیغام واپس لوٹا دیا گیا۔

    شیطان نے امجد کو یقین دلایا کہ اس تعویذ کے سامنے وہ بزرگ تو کیا ان کے فرشتے بھی سر جھکائیں گے۔  تم آج ہی ان سے ملو اور بغیر کسی تمہید کے ان سے سب کہہ ڈالو۔  امجد نے یہی کیا۔  بزرگ نے ملاقات کی وجہ پوچھی۔  امجد نے صاف صاف کہہ دیا کہ قبلہ میں آپ کا آنریری فرزند بننا چاہتا ہوں اور آُ کی دختر نیک اختر سے عقد کا خواہش مند ہوں۔  اس مرتبہ آپ ہرگز انکار نہیں کر سکتے۔  اگر آپ بحث کرنا چاہتے ہیں،  تو بسمہ اللہ۔ ۔ پہلے آپ کو میرے شہزادے پن پر اعتراض تھا،  سو اب یہ خاکسار باقاعدہ ملازم ہے۔  اگرچہ تنخواہ صرف ڈھائی سو روپے ماہوار ہے۔  لیکن اوپر کی آمدنی کافی ہے۔  مانا کہ یہ بہت زیادہ نہیں،  لیکن گستاخی معاف جب آپ کی شادی ہوئی تھی تب آپ کیا کماتے تھے اور تب آپ کے خیالات کیا تھے ؟ خصوصاً اپنے خسر صاحب کے متعلق۔  یقیناً آپ بالکل میری طرح ہوں گے۔  اور پھر شروع شروع میں ڈھائی سو روپے اتنی بری تنخواہ نہیں جبکہ اوپر کی آمدنی بھی شامل ہو۔  شاید آپ یہ فرمائیں گے کہ آپ اپنے رشتہ داروں سے اس سلسلے میں دریافت کرنا چاہتے ہیں۔  سو یہ بالکل غلط ہے۔  میں نے اپنے کسی رشتہ دار سے نہیں پوچھا اور پھر رشتہ دار بالکل الٹے سیدھے مشورے دیں گے۔  یہ ایک ذاتی معاملہ ہے اس میں کسی اور کا دخل نہیں ہونا چاہئیے۔  آج آپ کو ہاں کرنی ہی ہو گی۔  اس طرح امجد نے وہ داہنے اور بائیں ہاتھ دیے کہ ان بزرگ کو ہتھیار ڈالنے پڑے اور ہاں کرنی پڑی۔

    اسی شام کو ایک بھاری جشن منعقد ہوا۔  تعویذ پر سونے کا خول چڑھایا گیا۔  شیطان کی معرفت ان پہنچے ہوئے بزرگ کو نذرانہ بھیجا گیا۔  میں نے اور بڈی نے شیطان کی بہت منتیں کیں کہ کسی طرح ایک ایک تعویذ ہمارے لیے بھی لادو،  تاکہ ہمارے بھی دن پھر جائیں۔  شیطان نے وعدہ کیا کہ وہ کوشش کریں گے۔  ھم تقریباً ہر روز تعویذ کو آنکھوں سے اور دل سے لگاتے۔

    میں اور بڈی کیفے میں بیٹھے امجد اور مسز امجد کا انتظار کر رہے تھے۔  ہم بڑے مسرور تھے کیونکہ شام کو شیطان نے تعویذ لانے کا وعدہ کیا تھا۔  ہم دونوں دل ہی دل میں اپنے مستقبل کے متعلق پروگرام بنا رہے تھے کہ امجد اور مسز امجد پہنچے۔  آج امجد ایک ایسا دلیر اور بے پرواہ نوجوان نظر آ رہا تھا،  جس کی آنکھوں میں چمک تھی،  جس کے دل میں امنگیں تھیں اور جس نے ایک بہت اچھا سوٹ پہن رکھا تھا باتوں باتوں میں اس شام کا بھی ذکر ہوا جب امجد کو ہم نے اسی جگہ روتے پیٹتے دیکھا تھا۔  مسز امجد کے فراق مین۔  صرف چند مہینوں میں کیا سے کیا ہو گیا۔  صرف ایک مقدس عمل کی بدولت۔  اس تعویذ کی برکت سے جو امجد کے بازو پر بندھا ہوا تھا۔  شیطان نے بھی دوستی کا حق ادا کر دیا تھا۔  نہ جانے کن کن مصیبتوں کے بعد یہ تعویذ دستیاب ہوا ہو گا۔ اگر آج امجد کے پاس یہ تعویذ نہ ہوتا،  تو غالباً وہ پھر یہیں بیٹھا سینڈوچز اور کیک کے ٹکڑوں پر آنسو بکھیر رہا ہوتا۔  اور اب ہمیں بھی ایسے تعویذ ملیں گے،  ہمیں اپنے اوپر رشک آنے لگا۔  بار بار ہم دروازے کی طرف دیکھ رہے تھے،  شیطان کے انتظار میں۔

    بڈی نے تعویذ کی زیارت کرنا چاہی۔  امجد نے نہایت حفاظت سے تعویذ اتارا اور بڈی کی ہتھیلی پر رکھ دیا۔  بڈی نے اسے چوما،  آنکھوں سے لگایا اور پوچھا۔  "بھلا تعویذوں میں کیا لکھا ہوتا ہے ؟" ہم نے کہا کہ عبارت ہوتی ہے۔  بڈی سمجھ نہ سکا۔  اسے بتایا گیا کہ مقدس الفاظ ہوتے ہیں اور ایک خاص ترتیب سے لکھے جاتے ہیں۔  اس نے پوچھا کہ بھلا اس تعویذ میں کون سے الفاظ ہیں ؟ ہم نے لاعلمی ظاہر کی۔  بڈی کہنے لگا کیوں نہ اسے کھول کر دیکھیں۔

    امجد بولا۔  ہرگز نہیں،  اس طرح بے ادبی ہوتی ہے۔  میں نے بھی کہا کہ گناہ ہو گا۔  لیکن بڈی نہ مانا۔  بولا،  مجھے بڑا اشتیاق ہے سارا گناہ میرے ذمے رہا۔  میں نہایت ادب سے کھولوں گا اور الفاظ دیکھ کر بالکل اسی طرح بند کر دوں گا،  پھر تم اسے اپنے بازو پر باندھ لینا۔

    میں بھی سوچنے لگا کہ بھلا دیکھیں تو سہی وہ کون سے الفاظ ہیں،  جنہوں نے جادو کی طرح اثر دکھایا۔  میں نے بھی بڈی کا ساتھ دیا۔  امجد کہنے لگا کہ کھولنے سے تعویذ کی تاثیر جاتی رہے گی۔  بڈی بولا،  بھئی سچ پوچھو تو اب اس تعویذ نے اپنا کام کر دیا ہے،  اب تمہیں کسی مزید تاثیر کی ضرورت نہیں ہے۔  ہم نے مسز امجد سے پوچھا۔  انھوں نے اجازت دے دی۔  آخر امجد بھی مان گیا۔ اس شرط پر کہ اگر کوئی گناہ ہوا تو بڈی کے سر پر ہو گا۔

    بڈی نے بڑی حفاظت سے خول کھولا اور تعویذ نکالا۔  پھر آہستہ آہستی موم جامہ کھولنے لگا۔  میری آںکھوں کے سامنے پہنچے ہوئے بزرگوں کے نورانی چہرے،  فقیروں کے مزار،  سبز غلاف،  پھولوں کے ہار،  چلتے ہوئے چراغ،  مزاروں کے گنبد اور خانقاہیں پھرنے لگیں۔  جیسے عنبر اور لوبان کی خوشبو سے سب مہک اٹھا اور پاکیزہ روحیں ہمارے گرد منڈلانے لگیں۔  فرشتوں کے پروں کی پھرپھڑاہٹ سنائی دینے لگی۔  ماحول کچھ ایسا مقدس سا ہو گیا تھا کہ میرا دل دھڑکنے لگا۔  ہونٹ خشک ہو گئے۔

    بڈی نے تعویذ کھولا اور پڑھنے لگا۔  میں رہ نہ سکا۔  بڑی بےصبری سے کاغذ چھین لیا۔  کاغذ پر شیطان کی مخصوص طرزِ تحریر میں یہ مصرعہ لکھا تھا۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔

    " آیا کرو اِدھر بھی مری جاں کبھی کبھی "، ۔

تربیت اطفا

بچوں سے کبھی کبھی نرمی سے بھی پیش آئیے۔

بچے سوال پوچھیں تو جواب دیجیے مگر اس انداز میں کہ دوبارہ سوال نہ کر سکیں۔اگر زیادہ تنگ کریں تو کہہ دیجیے جب بڑے ہو گے سب پتا چل جائے گا۔

بچوں کو بھوتوں سے ڈراتے رہیے۔شاید وہ بزرگوں کا ادب کرنے لگیں۔ بچوں کو دلچسپ کتابیں مت پڑھنے دیجیے کیونکہ کورس کی کتابیں کافی ہیں۔

اگر بچے بیوقوف ہیں تو پروا نہ کیجیے۔بڑے ہو کر یا تو جینیئس بنیں گے یا اپنے آپ کو جینیئس سمجھنے لگیں گے۔ بچے کو سب کے سامنے مت ڈانٹئے۔اس کے تحت الشعور پر برا اثر پڑے گا۔ایک طرف لے جا کر تنہائی میں اس کی خوب تواضع کیجیے۔

بچوں کو پالتے وقت احتیاط کیجیے کہ ضرورت سے زیادہ نہ پل جائیں،ورنہ وہ بہت موٹے ہو جائیں گے اور والدین اور پبلک کے لیے خطرے کا باعث ہوں گے۔

اگر بچے ضد کرتے ہیں تو آپ بھی ضد کرنا شروع کر دیجیے۔ وہ شرمندہ ہو جائیں گے۔

ماہرین کا اصرار ہے کہ موزوں تربیت کے لیے بچوں کا تجزیۂ نفسی کرانا ضروری ہے۔لیکن اس سے پہلے والدین اور ماہرین کا تجزیۂ نفسی کرا لینا زیادہ مناسب ہو گا۔دیکھا گیا ہے کہ کنبے میں صرف دو تین بچے ہوں تو وہ لاڈلے بنا دئیے جاتے ہیں لہذا بچے صرف دس بارہ ہونے چاہئیں، تا کہ ایک بھی لاڈلا نہ بن سکے۔

اسی طرح آخری بچہ سب سے چھوٹا ہونے کی وجہ سے بگاڑ دیا جاتا ہے،چنانچہ آخری بچہ نہیں ہونا چاہئیے۔

    اِقتباس

    جو کچھ کہنے کا ارادہ ہو ضرور کہیے۔۔دورانِ گفتگو خاموش رہنے کی صرف ایک وجہ ہونی چاہیے۔۔وہ یہ کہ آپ کے پاس کہنے کے لیے کچھ نہیں ہے۔۔۔ ورنہ جتنی دیر چاہے،  باتیں کیجئے۔۔۔ اگر کسی اور نے بولنا شروع کر دیا تو موقع ہاتھ سے نکل جائے گا اور کوئی دوسرا آپ کو بور کرنے لگے گا۔۔۔ چنانچہ جب بولتے بولتے سانس لینے کے لیے رُکیں تو ہاتھ کے اشارے سے واضح کر دیں کہ ابھی بات ختم نہیں ہوئی یا قطع کلامی معاف کہہ کر پھر سے شروع کر دیجئے۔۔اگر کوئی دوسرا اپنی طویل گُفتگو ختم نہیں کر رہا تو بے شک جمائیاں لیجئے، کھانسیئے، بار بار گھڑی دیکھیئے۔۔۔ ابھی آیا۔ ۔۔ کہہ کر باہر چلے جائیں یا پھر وہیں سو جایئے۔

    یہ بالکل غلط ہے کہ آپ لگاتار بول کر بحث نہیں جیت سکتے۔۔اگر آپ ہار گئے تو مُخالف کو آپ کی ذہانت پر شبہ ہو جائے گا۔۔البتہ لڑیئے مت، کیونکہ اس سے بحث میں خلل آ سکتا ہے۔۔۔ کوئی غلطی سر زد ہو جائے تو اسے بھی مت مانیے۔۔لوگ ٹوکیں، تو اُلٹے سیدھے دلائل بلند آواز میں پیش کر کے اُنہیں خاموش کرا دیجئے،ورنہ خوامخواہ سر پر چڑھ جائیں گے۔۔۔ دورانِ گفتگو لفظ آپ کا استعمال دو یا تین مرتبہ سے زیادہ نہیں ہونا چاہیے۔۔اصل چیز میں ہے۔ ۔۔ اگر آپ نے اپنے متعلق کچھ نہ کہا تو دوسرے اپنے متعلق کہنے لگیں گے۔۔۔ تعریفی جملوں کے استعمال سے پرہیز کریں۔۔۔ کبھی کسی کی تعریف مت کریں۔۔ورنہ سننے والے کو شبہ ہو جائے گا کہ آپ کو اُس سے کوئی کام ہے۔۔۔ اگر کسی شخص سے کچھ پوچھنا ہو تو، جسے وہ چھُپا رہا ہو،تو بار بار اُس کی بات کاٹ کر اُسے چڑایئے۔۔۔ وکیل بھی اسی طرح مقدّمے جیتتے ہیں۔ ۔۔

٭٭٭

ماخذ: اردو محفل

تدوین اور ای بک کی تشکیل: اعجاز عبید